پیمرا نے وزارتِ دفاع کی درخواست پر جیو نیوز کو شوکاز نوٹس بھیج دیا

پیمرا نے وزارتِ دفاع کی درخواست پر جیو نیوز کو شوکاز نوٹس بھیج دیا

  

اسلام آباد (خصوصی رپورٹ) پاکستان میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی کی جانب سے نجی ٹی وی چینل جیو نیوز کو پیمر اآرڈیننس کی شق نمبر 29 کے تحت شوکاز نوٹس جاری کردیا گیا ہے۔جس میں کہا گیا ہے کہ کیوں نہ چینل کا لائیسنس منسوخ کردیاجائے۔ اس سے قبل پیمرا نے نجی ٹی وی چینل جیو نیوز کے خلاف دائر درخواست لیگل ڈیپارٹمنٹ کو بھجوا دی تھی جس نے قانونی رائے دی پاکستان میڈیا ریگولیٹری اتھارٹی نے وزارت دفاع کی جانب سے جیو نیوز کے خلاف درخواست کا جائزہ لینے کیلئے تین رکنی کمیٹی قائم کی جوپیمرا بورڈ کے ارکان پرویز راٹھور، اسرار عباسی اور اسماعیل شاہ پر مشتمل ہے۔ وزارت دفاع نے پیمرا کو اپنی تحریری درخواست کے ساتھ جیو نیوز کے خلاف ثبوت بھی فراہم کئے ہیں۔ درخواست میں مؤقف اختیار کیا گیا ہے کہ جیو نیوز نے ملکی دفاع کے ادارے آئی ایس آئی کے خلاف بے بنیاد الزامات لگائے۔ آئی ایس آئی اور اس کے ڈی جی کے خلاف منفی پروپیگنڈا کیا۔ جھوٹ کی بنیاد پر ریاستی ادارے اور اس کے افسروں کا دہشت گرد تنظیموں کے ساتھ تعلق جوڑنے کی کوشش کی گئی اور گھناؤنے الزامات کے ذریعے ریاستی ادارے کے تشخص کو مسخ کرنے کی کوشش کی گئی۔ جیو نیوز کی انتظامیہ اور ایڈیٹوریل ٹیم نے پیمرا قوانین کی سنگین خلاف ورزی کی۔ درخواست میں کہا گیا ہے کہ غیر ذمہ دارانہ رپورٹنگ اور ملک دشمن ایجنڈا پر کام کرنا جیو نیوز کی تاریخ ہے۔ جیو نیوز نے ڈینیئل پرل کیس، ولی خان بابر، سپریم کورٹ کے جج کے والدین کے قتل اور سپریم کورٹ ہی کے افسر حماد کے قتل کی غلط رپورٹنگ کی۔ درخواست میں پیمرا آرڈیننس کی شق 33 اور 36 کا حوالہ دیتے ہوئے استدعا کی گئی ہے کہ جیو نیوز کی ادارتی ٹیم اور انتظامیہ کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے۔جیونیوز سے نوٹس کا جواب چودہ روز میں مانگاگیا ہے

مزید :

صفحہ اول -