مردان ،مشال قتل کیس میں مزید4ملزمان عدالت میں پیش،1نے اعتراف جرم کر لیا

مردان ،مشال قتل کیس میں مزید4ملزمان عدالت میں پیش،1نے اعتراف جرم کر لیا

مردان (بیورورپورٹ) مشال قتل کیس میں مزید 4ملزمان عدالت میں پیش ،ایک نے اعتراف جرم کرلیا ،پولیس نے مزید 2طلباء کو گرفتار کرکے تفتیش کو آگے بڑھادیاہے گرفتارملزمان کی تعداد 34ہوگئی مشال قتل کیس میں پانچ ملزمان کو انسداد دہشت گردی کی عدالت میں پیش کیاگیا جن میں ایک کو عدالت نے جیل بجھوادیاجبکہ چار کی بیانات ریکارڈ کروانے کی اجازت دے دی جو پولیس کی سخت سیکورٹی میں مقامی مجسٹریٹ کے سامنے پیش ہوئے جہاں ایک ملزم اشرف علی نے اعتراف جرم کرلیا جبکہ باقی تین ملزمان نے صحت جرم سے انکار کردیا جنہیں جوڈیشل ریمانڈ پر جیل بجھوادیاگیا اب تک اس کیس میں 34ملزمان گرفتار کرلئے گئے ہیں جن میں 19کو عدالت میں پیش کردیاگیاہے جن میں 3نے اعتراف جرم کرلیاہے جبکہ ایک لیکچرر ضیا ء اللہ ہمدرد بطور گواہ پیش ہوئے ہیں جس نے گذشتہ روز بعض انکشافات کئے ادھر پولیس نے دوطلباء کو گرفتارکرلیا ہے جن سے پوچھ گچھ شروع کردی گئی ہے پولیس ذرائع کے مطابق ان کی شناخت ویڈیو فوٹیج کی مدد سے کی گئی ہے ادھر دوسری جانب متحدہ دینی محاذ کے زیر اہتمام آل پارٹیز کانفرنس منعقد ہوئی جس میں مشال خان کے فیس بک اور ٹویٹر کی پوسٹوں کی کاپیاں لے کر تراجم کے ساتھ کانفرنس کے شرکاء کو فراہم کردی گئیں اس واقعے کے 9دن بعد منعقدہ اجلا س میں سپریم کورٹ کی طرف سے اس کی از خود نوٹس کا خیر مقدم کیاگیا اورمطالبہ کیاگیا کہ تحقیقات مکمل ہونے تک کسی کوشہید یا مجرم قرارنہ دیاجائے اعلامیہ کے مطابق کانفرنس میں انسانی لاش کی بے حرمتی کو غیر انسانی اور غیر شرعی عمل قراردیا اعلامیہ میں مزید کہاگیاہے اے پی سی میں مشال قتل کیس کے تحقیقات کے لئے کمیٹی بھی تشکیل دے دی گئی جو سات دن کے اندر اندر تحقیقات کرے گی۔اے پی سی میں جے یو آئی،اے این پی،تحریک انصاف،مسلم لیگ،جے یو پی، پیپلز پارٹی اورجماعت اسلامی کے رہنمآں نے شرکت کی ۔

مزید : کراچی صفحہ اول