جتوئی‘ جعلی عاملہ نے دم کیلئے آیا شیر خوار بچہ بیہوش کرکے بیچ ڈالا

جتوئی‘ جعلی عاملہ نے دم کیلئے آیا شیر خوار بچہ بیہوش کرکے بیچ ڈالا

  



جتوئی،چوک مکول (نامہ نگار)جعلی عاملہ نے دم کرانے کے لیے آنے والے 4 ماہ کے بچے کو بیہوشی کا انجکشن لگاکر فروخت (بقیہ نمبر22صفحہ12پر )

کردیا، پولیس نے بروقت کاروائی کرتے ہوئے بچہ برآمد کرلیا.تفصیل کے مطابق امام بخش نامی شخص اپنے 4 ماہ کے بیمار بچے عمرفاروق کو دم کرانے کے لیے تحصیل جتوئی کے علاقے جھگی والا میں جعلی عاملہ مسرت کے پاس لایا، جعلی عاملہ نے بچے کے ورثاء4 کو اپنے حجرے سے باہر انتظار کرنے کے لیے بھیج دیا اور بچے کو بیہوشی کا انجکشن لگاکر غائب کردیا، 2 گھنٹوں تک بچہ باہر نہ آیا تو ورثاء4 تشویش میں مبتلا ہوگئے اور حجرے میں گئے تو بچہ غائب تھا، ورثاء4 نے عاملہ سے بچے کے بارے میں دریافت کیا تو عاملہ نے ورثاء4 کو یہ کہہ دیا کہ ان کا بچہ غائب ہوگیا ہے اور اسکے تجویز کیے گئے عمل کیبعد ہی واپس آئیگا، ورثاء4 نے پولیس تھانہ جتوئی کو اطلاع دی، ایس ایچ او تھانہ جتوئی رمضان شاہد کیمطابق جعلی عاملہ مسرت اور اسکے شوہر وزیرکو گرفتار کیاگیا اور ان کی نشاندہی پر ایک ایم بی بی ایس ڈاکٹر محمدعلی کے گھر سے بچے کو برآمدکرلیاگیا، ایس ایچ او کیمطابق پولیس کو شبہ ہے کہ عاملہ نے بے اولاد ڈاکٹر کے ہاتھوں بچے کو فروخت کیا ہے، پولیس نے ڈاکٹر کو بھی حراست میں لے لیا ہے جس سے تفتیش کی جارہی ہے تفشیش کے بعد پولیس نے صحافیوں کو بتایا کہ اس جعلی عاملہ نے اپنا ایک گروہ بنا یا ہوا تھا جس میں مسرت شاہین ،مسرت سعدیہ ،ایم بی بی ایس ڈاکٹر محمد علی ،ڈاکٹر ارشد حسین اعوان،وزیر احمد، بدر منیر لوہار وغیرہ کام کرتے تھے جس پر تھانہ جتوئی میں مقدمہ نمبر209بجرم دفعہ 148,149,363,420ت پ درج کرکے 5ملزمان کو گرفتار کرکے تفتیش جاری کر دی ۔

مزید : ملتان صفحہ آخر