انسانیت کی خدمت، کشمیری صحافی کو دنیا بھر میں خراج تحسین

انسانیت کی خدمت، کشمیری صحافی کو دنیا بھر میں خراج تحسین
انسانیت کی خدمت، کشمیری صحافی کو دنیا بھر میں خراج تحسین

  


سری نگر(ڈیلی پاکستان آن لائن) پیشہ وارانہ صحافتی ذمہ داریاں ادا کرتے ہوئے بعض اوقات ایسے واقعات بھی رونما ہو جاتے ہیں جو لوگوں کے لیے ایک گہرا تاثر چھوڑ جاتے ہیں۔ ایسا ہی ایک واقعہ مقبوضہ کشمیر میں پیش آیا جہاں طالبات کی طرف سے سکیورٹی فورسز کے خلاف ہونے والے ایک مظاہرے کے دوران کوریج کرنے والے فوٹو گرافر نے اپنا کام چھوڑ کر زخمی طالبہ کو مدد فراہم کی اور ان کے ایک ساتھی نے یہ منظر اپنے کیمرے میں محفوظ کر لیا۔مقبوضہ کشمیر میں طالبات کے مظاہرے پر بھارتی فوج کی سے فائرنگ سے زخمی ہونے والی ایک طالبہ کو ہسپتال منتقل کرنے والے فوٹو گرافرکی تصویروائرل ہوگئی اور انہیں داد تحسین پیش کی جارہی ہے۔ تصویر میں امریکی خبررساں ادارے سے وابستہ صحافی ڈار یاسین کو اپنے ہاتھوں میں زخمی طالبہ کو اٹھائے ہوئے دیکھا جا سکتا ہے ، جبکہ یہ یادگار منظر ترک نیوز ایجنسی انادولو کے لیے کام کرنے والے فیصل خان نے اپنے کیمرے میں محفوظ کی۔

تفصیلات کے مطابق ایسوسی ایٹیڈ پریس سے وابستہ فوٹو گرافر ڈار یاسین نے جب دیکھا کہ ایک طالبہ کے سر پر چوٹ لگی ہے تو انھوں نے اپنا کیمرہ ایک طرف رکھا اور اس لڑکی کو بازؤ ں پر اٹھا کر دوڑتے ہوئے مظاہرے کی جگہ سے دور ایک گاڑی تک گئے اور طالبہ کی پریشان سہیلوںسے کہا کہ وہ گھبرائیں نہیں۔ میری بھی دو بیٹیاں ہیں۔اس ساری صورتحال کو وہیں موجود ایک اور فوٹوگرافر نے اپنے کیمرے میں محفوظ کر لیا اور پھر زخمی طالبہ کی مدد میں یاسین کا ہاتھ بٹایا۔

دنیا بھر میں دفاعی بجٹ میں خطرناک حد تک اضافہ ہوگیا ہے:تحقیقاتی ادارے کی رپورٹ

میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ ایک فوری فیصلہ تھا، میں اس بارے میں مزید نہیں سوچا، میں نے اپنا کیمرہ اپنے ساتھی کو تھمایا۔۔۔اور زخمی لڑکی کو اپنے بازوں میں اٹھایا۔

امریکہ نے شام پر 271 نئی پابندیاں عائد کردیں

اس سارے منظر کو ترک نیوز ایجنسی انادولو کے لیے کام کرنے والے فیصل خان نے اپنے کیمرے میں محفوظ کیا۔فیصل خان کا کہنا تھا کہ جب میں نے یاسین کو لڑکی کی مدد کرتے دیکھا تو میں نے سوچا میں اس منظر کو محفوظ کر لوں لہذا میں نے کچھ تصویریں بنا ڈالی۔

مزید : قومی