پیمرا قانون کا سیکشن5 بظاہر آرٹیکل 19 سے متصادم ہے،سپریم کورٹ

پیمرا قانون کا سیکشن5 بظاہر آرٹیکل 19 سے متصادم ہے،سپریم کورٹ

  

اسلام آباد(آن لائن)سپریم کورٹ نے کہا ہے کہ بظاہر پیمرا قانون کا سیکشن پانچ آرٹیکل 19 سے متصادم ہے، بنیادی حقوق کو مد نظر رکھ کر قوانین بنانا ریاست کی ذمہ داری ہے ،یہ ریمارکس چیف جسٹس نے سپریم کورٹ میں میڈیا کمیشن کیس کی سماعت کے دوران دئیے ۔ چیف جسٹس کی سربراہی میں تین رکنی بنچ نے گزشتہ روز کیس کی سماعت کی ۔حامد میر نے کہا وزیر مملکت نے پیمرا قانون کے سیکشن پانچ پر نرمی نہیں دکھائی، وزیر مملکت نے سیکشن چھ پر نرمی دکھائی۔ایڈیشنل اٹارنی جنرل نے کہا ہماری تجویز ہے کہ پیمرا اتھارٹی کا ایک چیئرمین اور دس ممبران ہوں۔چیف جسٹس نے کہا بظاہر پیمرا قانون کے سیکشن آرٹیکل 19سے متصادم ہیں، اگر ہم نے پیمرا قانون کے سیکشن ختم کر دئیے تو خلا پر ہو جائے گا، خلا کو پر کرنے کیلیے چیئرمین کا تقرر بھی کر دیں گے، یہ باتیں اپنے ذہن میں رکھ لیں۔جسٹس اعجاز الااحسن نے کہا پیمرا قانون کا سیکشن 5کالا قانون لگتا ہے۔

سپریم کورٹ

مزید :

راولپنڈی صفحہ آخر -