مغربی ممالک میں نقاب پر پابندی، پولیس نے ماسک پہنے ایک شخص کو روک لیا، لیکن یہ دراصل کون تھا؟ حقیقت سامنے آئی تو خود ہی شرم سے پانی پانی ہوگئے

مغربی ممالک میں نقاب پر پابندی، پولیس نے ماسک پہنے ایک شخص کو روک لیا، لیکن ...
مغربی ممالک میں نقاب پر پابندی، پولیس نے ماسک پہنے ایک شخص کو روک لیا، لیکن یہ دراصل کون تھا؟ حقیقت سامنے آئی تو خود ہی شرم سے پانی پانی ہوگئے

  

ویانا(مانیٹرنگ ڈیسک) کئی مغربی و یورپی ممالک نے نقاب پر پابندی عائد کر رکھی ہے جن میں آسٹریا بھی شامل ہے۔ گزشتہ روز آسٹریا میں ایک نوجوان چہرے پر ماسک پہنے جا رہا تھا کہ اسے پولیس نے روک لیا، لیکن جب اس شخص نے حقیقت بتائی تو پولیس آفیسر خود ہی شرم سے پانی پانی ہو گئے۔ میل آن لائن کے مطابق 26سالہ ویلنٹائن کو پولیس نے جب نقاب پر پابندی کی خلاف ورزی کرنے پر روکا تو اس نے انہیں بتایا کہ وہ بون میرو کے کینسر لیوکیمیا (Leukaemia)کا مریض ہے اور ڈاکٹروں نے اسے ماسک پہننے کی ہدایت کر رکھی ہے۔

یوٹیوب چینل سبسکرائب کرنے کیلئے یہاں کلک کریں

رپورٹ کے مطابق اس مرض کے باعث ویلنٹائن کے جسم کا مدافعتی نظام بالکل کمزور ہو چکا تھا اور ڈاکٹروں کا کہنا تھا کہ اگر وہ ماسک پہنے رکھے گا تو اس کی قوت مدافعت کے مزید کمزور ہونے کی رفتار کم ہو جائے گی۔ ویلنٹائن کا کہنا تھا کہ ”پولیس والوں نے روکتے ہی مجھے پوچھا کہ میں جرمن بولتا ہوں یا کوئی غیرملکی زبان؟ شاید وہ شک کر رہے تھے کہ میں کوئی مسلمان پناہ گزین ہوں۔تاہم میں نے انہیں بتایا کہ میں ویانا سے ہوں اور اپنے مرض کی وجہ سے ماسک پہن رکھا ہے۔ اس پر بھی انہوں نے مجھے کہا کہ تم قانون کی خلاف ورزی کر رہے ہو، جس پر تمہیں 80یورو(تقریباً 11ہزار روپے) جرمانہ ہو سکتا ہے۔ اس پر میں نے انہیں اپنی میڈیکل رپورٹس دکھائیں جس پر وہ مطمئن ہو گئے اور مجھے جانے کی اجازت دے دی۔“

مزید :

بین الاقوامی -