امریکہ کا عالمی ادارہ صحت کی کارکردگی کا جائزہ لینے کا فیصلہ

امریکہ کا عالمی ادارہ صحت کی کارکردگی کا جائزہ لینے کا فیصلہ

  

واشنگٹن(اظہر زمان، بیورو چیف) امریکہ عالمی ادارہ صحت کی کارکردگی کا جائزہ لے گا تاکہ یہ دیکھا جا سکے کہ آیا جن مقاصد کے تحت یہ ادارہ قائم کیا گیا ہے وہ ان کے حصول کے لئے مناسب کام بھی کر رہا ہے یا نہیں، یو ایس ایڈ کے قائم مقام سربراہ جان برسا نے یہاں ایک نیوز بریفنگ میں امریکی حکومت کے اس فیصلے سے آگاہ کیا۔ قبل ازیں صدر ٹرمپ نے اس ادارے پر یہ الزام لگایا تھا کہ اس نے کرونا وائرس کے آغاز کے بارے میں چین کی ”ڈس انفارمیشن“ کی حمایت کی تھی اور اس کے لئے امریکی امداد بند کر دی تھی، اگرچہ امریکہ نے عالمی ادارہ صحت کو دی جانے والی سالانہ امداد روک دی ہے تاہم امریکی کانگریس نے مختلف متاثرہ ممالک کو اس وباء سے بچاؤ کے لئے 27کروڑڈالر سے زائد کی اضافی امداد جاری کرنے کی منظوری دے رکھی ہے۔ یو ایس ایڈ کے سربراہ نے بتایا کہ عالمی ادارہ صحت کا جائزہ ہمہ گیر ہو گا جن میں ان انتظامی سوالات کا جواب بھی حاصل کیا جائے گا کہ اس ادارے نے کس طرح رکن ممالک کو اپنی کارروائیوں پر ذمہ دار ٹھہرایا ہے۔ اہم ترین سوال یہ ہے کہ عالمی ادارہ صحت اس طرح کام کر رہا ہے جس طرح اسے کرنا چاہئے۔ صدر ٹرمپ نے عالمی ادارہ صحت کی امداد بند کرنے کا اعلان کرتے ہوئے بتایا تھا کہ اس ادارے نے کرونا وائرس کے آغاز اور پھیلاؤ کے بارے میں جس طرح چین کے موقف کا ساتھ دیا تھا اس سے وائرس کے پھیلاؤ کا اضافہ ہوا ہے۔ تاہم اس ادارے نے امریکی الزام کی نفی کرتے ہوئے کہا تھا کہ انہوں نے جنوری کے آغاز میں رکن ممالک کو اس وباء کی سنگینی سے بروقت آگاہ کر دیا تھا۔

امریکہ فیصلہ

مزید :

صفحہ اول -