کرونا وائرس کے مسئلے کو غیر سنجیدگی سے ڈیل کیا جا رہا ہے: سر اج الحق

    کرونا وائرس کے مسئلے کو غیر سنجیدگی سے ڈیل کیا جا رہا ہے: سر اج الحق

  

ملتان (سٹی رپورٹر)امیر جماعت اسلامی پاکستان سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ موجودہ اور سابقہ حکمران ہیلتھ سیکٹر کی تباہی کے ذمہ دار ہیں۔ حکومتیں اپنے حصے کا کام کرتیں تو ہم طبی آلات کے لئے امریکہ کی طرف نہ دیکھتے۔ حکومتیں جب بھی فنڈز قائم کرتی ہیں، ان کی تقسیم کاکوئی پتہ نہیں چلتا۔کورونا وائرس کی وجہ سے پوری انسانیت مشکل میں ہے۔ حکومت کی جانب سے جاری کردہ امداد ابھی تک 25 فیصد متاثرین تک بھی (بقیہ نمبر5صفحہ6پر)

نہیں پہنچ سکی۔ وزیراعظم کورونا وائرس پر قابو پانے کے لیے نیشنل ایکشن پلان بناتے تو آج حکومت اور اپوزیشن ایک پیج پر ہوتی۔ کشمیر میں بھارتی فوج کورونا وائرس کو ایک ہتھیار کے طور پر استعمال کررہی ہے۔ کشمیر میں مسلسل لاک ڈان اور بھارت میں ہونے والے مظالم پر او آئی سی کا اجلاس بلایا جائے۔ان خیالات کا اظہار انہوں نے دار ارقم سکول میں جماعت اسلا می والخدمت فاؤنڈیشن کی طرف سے معذور افراد میں راشن کی تقسیم کے موقع پر میڈیا کے نمائندوں سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔اس موقع پر امیرجنوبی پنجاب راؤ محمدظفر، امیر ضلع ملتان ڈاکٹر صفدر ہاشمی، الخدمت فاؤنڈیشن جنوبی پنجاب کے صدر ڈاکٹر اشرف علی عتیق، جنرل سیکرٹری صہیب عمار صدیقی، چودھری اطہر عزیز ایڈووکیٹ، کنور محمد صدیق، حسان اخوانی بھی موجودتھے۔سینیٹر سراج الحق نے ریسکیو 1122اور نشتر ہسپتال کا بھی دورہ کیا۔سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ ڈاکٹرز اور میڈیا کے لوگ فرنٹ لائنرز ہمارے ہیروز اور ٹائیگرز ہیں۔ نشتر ہسپتال میں 26 سے زائد ڈاکٹرز کورونا وائرس میں مبتلا ہوئے۔ ڈاکٹرز اور ریسکیوورکرز کو خراج تحسین پیش کرنے کے لئے میں ملتان آیا ہوں۔ کورونا وائرس کے مسئلے پر فنڈز نہ ہونے سے ثابت ہوا ہے کہ حکومت کے پاس ہیلتھ ایمرجنسی کے لئے کچھ بھی نہیں ہے،ہمارا مطالبہ ہے کہ آئندہ بجٹ میں قدرتی آفات کا مقابلہ کرنے کیلئے صحت کے لئے خصوصی فنڈز مختص کئے جائیں۔ سائنس اور ٹیکنالوجی کے وزیر نے اعلان کیا ہے کہ ہم این 95 ماسک بنانے کے قریب ہیں، مگر ایسا ہوتا نہیں دکھائی دے رہا۔ ہم دعا کرتے ہیں کہ ایسا ہو جائے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت نے چین کے طریقہ کار کو اپنانے کی بجائے اٹلی کے طرز عمل کو اپنایا۔ غیر سنجیدگی پر اٹلی کو نقصان اٹھانا پڑا۔ کہا جارہا ہے کہ کورونا 6 ماہ مزید رہے گامگر حکومت کی کوئی تیاری نہیں۔ حکومت کورونا وائرس کے مسئلے کو غیر سنجیدگی سے ڈیل کر رہی ہے۔ ڈاکٹرز کہہ رہے ہیں حکومت سنجیدہ نہ ہوئی تو اسپتال بھر جائیں گے۔سینیٹر سراج الحق نے کہا کہ کورونا جیسے معاملے پر متفقہ قومی بیانیے کی ضرورت ہے، حکومت اپوزیشن کو اکٹھا کرے اور سب کو ساتھ لے کر چلے۔ ڈاکٹرز کے پاس ابھی تک سیفٹی کٹس نہیں ہیں اور وہ احتجاج کر رہے ہیں۔ اگر ڈاکٹر خودمحفوظ نہیں ہونگے تو مریضوں کی کیا خدمت کریں گے۔ حکومت انا اورغرور سے باہر نکلے اور اپنے رویے میں تبدیلی لائے۔ علاج اور تعلیم حکومت کی ذمہ داری ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت تکبر سے باہر نکلے اور توبہ استغفار کرے۔ حکومت اسلامی نظام کا نفاذکرے اور ملک سے سود کو اکھاڑ کر پھینک دے۔ ملک میں ٹائیگر فورس کی کوئی ضرورت نہیں ہے۔ اس سے صرف حکومتی نمائندوں کے حلقے مضبوط ہونگے جس کا اعلان وزیراعظم عمران خان خود بھی کر چکے ہیں۔ یہ وقت لوگوں کی خدمت کا ہے سیاست کا نہیں۔ جماعت اسلامی کے کارکنان گلی، محلوں کا دورہ کر کے ضرورت مندوں کا جائزہ لیتے اور راشن تقسیم کرتے ہیں۔ہمارا مطالبہ ہے کہ سب کا بلا امتیاز احتساب ہو۔ نیب کوئی کام نہیں کر رہا، پانامہ لیکس کے کرداروں کاابھی تک احتساب نہیں ہوا۔ نیب کو غیر جانبدار اور غیر سیاسی ہونا چاہئے۔ انہوں نے کہا کہ اس وقت کراچی سے چترال تک ہمارے ایک لاکھ سے زائد کارکن خدمت پر مامور ہیں۔ جماعت اسلامی اور الخدمت فانڈیشن رمضان اور عید کے موقع پر ریلیف کے کام مزید منظم اور مربوط کرے گی، ہم نے ہر طبقہ کی خدمت کو اپنا معمول بنایا ہے۔ جماعت اسلامی مستحق افراد کے گھر وں میں سحر و افطار کا سامان پہنچائے گی۔ جماعت اسلامی رمضان کے دوران ملک بھر میں مساجد کی صفائی کرے گی۔ انہوں نے قوم سے اپیل کی کہ جمعہ کو یوم صفائی اور رات کو شب توبہ و استغفار کے طور پر منایا جائے۔

سراج الحق

مزید :

ملتان صفحہ آخر -