سرائے نورنگ میں لاک ڈاؤن میں مزید سختی

سرائے نورنگ میں لاک ڈاؤن میں مزید سختی

  

سرائے نورنگ(نمائندہ پاکستان)لکی مروت کی ضلعی انتظامیہ نے لاک ڈاون کومزیدسخت کرتے ہوئے شام چاربجے کے بعد تمام کاروباری مراکزاوردکانیں بندکرنے کااعلان کردیا۔ کورونا وائر س سے بچا ؤ کے لئے احتیا طی تدا بیر پر زور دیتے ہو ئے کہا کہ شہر یو ں کی ذرا سی لا پرواہی بڑی مشکل میں ڈال سکتی ہے رمضا ن المبار ک میں تما م کا رو بار ی مرا کز اور دکا نیں سہ پہر چار بجے بند ہو ں گی جب کہ بازارو ں میں کسی بھی قسم کا ہجوم قا بل قبو ل نہیں کور و نا وا ئر س کو شکست دینے میں شہر ی انتظا میہ کیسا تھ تعا ؤ ن کا مظا ہرہ کر تے ہو ئے حکو مت کے بتا ئے ہو ئے طر یقو ں پر من و عن عمل کر یں بصورت دیگر انتظامیہ سختی سے پیش آئے گی۔ ان خیا لا ت کا اظہار انہو ں نے گذ شتہ روز اپنے دفتر میں میڈ یا کو خصوصی بر یفنگ دیتے ہو ئے کیا اُن کا کہنا تھا کہ ملک میں کورونا وا ئرس نے وبائی شکل اختیار کر لی ہے اس سلسلے میں حکومت کی طرف سے عوام کواس مہلک وبا سے محفوظ رہنے کے لئے احتیاطی تدابیر اختیار بتائی گئی ہے اور اس پر عمل در آمد کو یقینی بنا نے کے لئے ضلعی انتظامیہ نے تحصیل نورنگ اورتحصیل لکی کے تمام 35بڑے بڑے دیہاتوں میں آگاہی مہم چلائی ہے تاکہ اس بیما ری سے متعلق شہر یو ں میں شعور پیدا کیا جا ئے اُنہوں نے کہاکہ رمضان المبارک میں سہ پہر چاربجے کے بعدتمام دکانیں اورتجا رتی مر اکز بندرہیں گی اور کسی کوکاروبارکرنے کی اجازت نہیں ہوگی خلاف ورزی کرنے والوں کے خلاف انتظامیہ سختی سے نمٹے گی اُنہوں نے کہاکہ انتظامیہ کی جانب سے حکومت اورعلماء کرام کے مابین بیس نکاتی ایجنڈے کے معاہدے کے تحت سماجی فاصلے بڑھانے کے لئے بازاروں اوردیہاتوں کی مساجدوں میں گول دائرے کھینچیں گئے ہیں جس میں نما زی کھڑ ے ہو ں گے تا کہ اُن کے ما بین مخصوص فا صلے کو بر قرار رکھا جا ئے اُنہوں نے علماء کرام اورمختلف مکاتب فکرسے تعلق رکھنے والے افرادسے مطا لبہ کیا کہ بیس نکاتی ایجنڈے پرعملددرآمدکویقینی بنانے میں اپناکرداراداکریں،ڈپٹی کمشنرلکی مروت نے عوام پرزوردیاکہ بازاروں میں غیرضروری رش نہ بنا ئیں اور اپنے گھر و ں سے غیر ضروری نہ نکلیں بصورت دیگر غفلت اور لا پرواہی کے مر تکب شہر یو ں کے خلاف سخت کاروائی عمل میں لا ئی جا ئے گی۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -