کورونا وائرس سے متاثرہ عورت صحت یاب ہوگئی لیکن پھر بھی وائرس کتنے دن آنکھوں میں موجود رہا؟ معائنہ کر کے ڈاکٹر بھی دنگ رہ گئے

کورونا وائرس سے متاثرہ عورت صحت یاب ہوگئی لیکن پھر بھی وائرس کتنے دن آنکھوں ...
کورونا وائرس سے متاثرہ عورت صحت یاب ہوگئی لیکن پھر بھی وائرس کتنے دن آنکھوں میں موجود رہا؟ معائنہ کر کے ڈاکٹر بھی دنگ رہ گئے

  

نیویارک(مانیٹرنگ ڈیسک) آئے روز سائنسی تحقیقات میں کورونا وائرس کے پھیلاﺅ کا کوئی نیا طریقہ سامنے آ رہا ہے۔ اب اس حوالے سے سائنسدانوں نے ایک اور انکشاف کر دیا ہے۔ میل آن لائن کے مطابق سائنسدانوں نے بتایا ہے کہ کورونا وائرس آنکھوں کے ذریعے بھی پھیل سکتا ہے اور مریض کے صحت مند ہونے کے کئی دن بعد تک بھی اس کی آنکھیں وباءپھیلانے کا سبب بن سکتی ہیں۔ سائنسدانوں کے مطابق آنکھوں سے وائرس آنسوﺅں وغیرہ کے ذریعے دیگر لوگوں میں منتقل ہوتا ہے۔ نیویارک میں ایک ایسا کیس سامنے آیا ہے جس میں ایک 65سالہ خاتون مریض کی آنکھوں میں اس کے متاثر ہونے کے 21دن بعد تک کورونا وائرس موجود رہا۔وہ صحت مند ہو گئی، پھر بھی اس کی آنکھوں میں کورونا وائرس موجود رہا۔

رپورٹ کے مطابق آنکھوں میں کورونا وائرس کے موجود ہونے کی علامت سائنسدانوں نے یہ بتائی ہے کہ ایسے مریضوں کی آنکھوں کا رنگ سرخ یا گلابی ہو جاتا ہے۔ مارچ کے مہینے میں پہلی بار یہ انکشاف ہوا تھا کہ آنکھوں کا رنگ سرخ یا گلابی ہونا بھی کورونا وائرس کی علامت ہے۔ تاہم یہ بہت کم لوگوں میں ظاہر ہوتی ہے۔ کئی تحقیقات میں بتایا گیا ہے کہ کورونا وائرس کے ایک فیصد سے بھی کم مریضوں میں آنکھوں کی یہ رنگت دیکھنے میں آ رہی ہے۔ یہ لوگوں میں یہ علامت ظاہر ہو، ابتداءمیں ہی ہو جاتی ہے چنانچہ اسے کورونا وائرس کی ابتدائی علامات میں شامل کیا گیا ہے۔ واضح رہے کہ امریکہ میں کورونا وائرس کے کیسز کی تعداد8لاکھ 91ہزار 622سے تجاوز کرچکی ہے جبکہ ہلاکتوں کی تعداد 50ہزار 422سے اوپر جا چکی ہے۔

مزید :

کورونا وائرس -