ٹیسٹ چیمپین شپ پر آئی سی سی ممبرز ’تقسیم‘ ہو گئے، کس کا کیا کہنا ہے ؟سب کچھ سامنے آ گیا

ٹیسٹ چیمپین شپ پر آئی سی سی ممبرز ’تقسیم‘ ہو گئے، کس کا کیا کہنا ہے ؟سب کچھ ...
ٹیسٹ چیمپین شپ پر آئی سی سی ممبرز ’تقسیم‘ ہو گئے، کس کا کیا کہنا ہے ؟سب کچھ سامنے آ گیا

  

لاہور (ڈیلی پاکستان آن لائن) انٹرنیشنل کرکٹ کونسل (آئی سی سی) ٹیسٹ چیمپین شپ پر ممبرز کی رائے تقسیم ہو گئی، بعض ارکان التواءکے خواہشمند ہیں تو چند کا ماننا ہے کہ آئندہ برس شیڈول کے مطابق ہی فائنل منعقد کرایا جائے، آسٹریلیا ٹی 20 ورلڈکپ کے انعقاد کیلئے پرعزم ہے جبکہ انگلینڈ اینڈ ویلز کرکٹ بورڈ (ای سی بی) پاکستان کیخلاف سیریز پر بھی صورتحال کا جائزہ لے کر ہی حتمی کوئی فیصلہ کرے گا۔

تفصیلات کے مطابق پاکستان کرکٹ بورڈ (پی سی بی) کے چیف ایگزیکٹو آفیسر (سی ای او) وسیم خان نے آئی سی سی چیف ایگزیکٹوز کی ویڈیو کانفرنس میں شرکت کے بعد نجی خبر رساں ادارے سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ میٹنگ میں کوئی فیصلہ نہیں اور اس میٹنگ کا مقصد بھی مختلف معاملات پر صرف تبادلہ خیال کرنا ہی تھا۔ 12 ٹیسٹ اور3 ایسوسی ایٹ اقوام کے اعلیٰ حکام کو 5، 5 منٹ دئیے گئے جس میں انہوں نے اپنے ملک میں کورونا وائرس کے سبب پیدا ہونے والی صورتحال اور حکومتی ہدایات سے آگاہ کرنے کے علاوہ یہ بھی بتایا کہ کرکٹ کب شروع ہو سکتی ہے، کرکٹ آسٹریلیا نے رواں سال شیڈول ورلڈکپ کے انعقاد کا عزم ظاہر کرتے ہوئے حکومتی ہدایات کے انتظار کا بتایا، جس سے ان کو سفری پابندیوں اور سماجی دوریوں کے حوالے سے آگاہی حاصل ہوگی۔

ان کا کہنا تھا کہ آئی سی سی نے یہ فیصلہ کیا ہے کہ تمام اراکین ہر مہینے اپنے ملک کی صورتحال پر بریفنگ دیتے رہے ہیں جبکہ ایک سوال پر ان کا کہنا تھا کہ خالی گراﺅنڈز میں میچز کا آپشن ضرور موجود ہے مگر آسٹریلوی حکومت اپنے بورڈ کو اقدامات کا بتائے گی، ابھی پوری دنیا پر مشکل وقت ہے اور کوئی بھی یہ نہیں جانتا کہ آئندہ ماہ تک صورتحال بہتر ہو گی یا مزید خراب، اس لئے صرف اچھے وقت کا انتظار ہی کیا جا سکتا ہے۔

ٹیسٹ چیمپین شپ سے متعلق سوال کے جواب میں وسیم خان نے کہا کہ اس حوالے سے آئی سی سی ممبرز کی رائے منقسم ہے، بعض ممالک ٹیسٹ چیمپین شپ ملتوی کرنے کا کہہ رہے ہیں جبکہ چند کا خیال ہے کہ اس کا فائنل 2021ءمیں شیڈول کے مطابق ہی کرایا جائے تاہم اس بابت ابھی کوئی حتمی فیصلہ نہیں کیا گیا اور بات چیت کا سلسلہ جاری رہے گا۔

پاکستان اور انگلینڈ کے درمیان سیریز کے مستقبل پر ان کا کہنا تھا کہ فی الحال انتظار کی پالیسی اپنائی ہوئی ہے کیونکہ اگست میں ابھی وقت ہے اور انگلش بورڈ بھی صورتحال کا جائزہ لے کر ہی کوئی قدم اٹھائے گا، انہیں بھی حکومتی ہدایات کا انتظار ہے جبکہ ہم بھی اپنے کھلاڑیوں کی حفاظت کو اولین ترجیح دیتے ہوئے ہی فیصلہ کریں گے، اسی طرح کی صورتحال آئرلینڈ سے سیریز کے حوالے سے بھی ہے۔

مزید :

کھیل -