’میں نے اپنے باس سے شادی کرلی، لیکن اب جہاں جاتی ہوں لوگ دیکھتے ہی۔۔۔‘ 18 سالہ لڑکی کی اپنے سے 37سال بڑے مرد سے شادی، پھر کیا ہوا؟ جان کر آپ کا بھی منہ کھلا کا کھلا رہ جائے گا

’میں نے اپنے باس سے شادی کرلی، لیکن اب جہاں جاتی ہوں لوگ دیکھتے ہی۔۔۔‘ 18 ...
’میں نے اپنے باس سے شادی کرلی، لیکن اب جہاں جاتی ہوں لوگ دیکھتے ہی۔۔۔‘ 18 سالہ لڑکی کی اپنے سے 37سال بڑے مرد سے شادی، پھر کیا ہوا؟ جان کر آپ کا بھی منہ کھلا کا کھلا رہ جائے گا

  

لندن(نیوز ڈیسک) تین سال قبل جب نتاشا لوئس نامی نوعمر لڑکی کو اس کی والدہ مقامی ’فش اینڈ چپس ریسٹورنٹ‘ میں پارٹ ٹائم ملازمت دلوانے کے لئے لے کر گئیں تو ان کے وہم و گمان میں بھی نہ تھا کہ ان کی بیٹی خود سے 37 سال بڑے ریسٹورنٹ کے مالک کے عشق میں مبتلاءہو جائے گی۔ نتاشا اپنے باس رچرڈ کے عشق میں ایسی دیوانی ہوئی کہ جونہی وہ 18 سال کی ہوئی تو اس سے شادی کرلی۔ ان کی شادی کے وقت رچرڈ کی عمر 55سال تھی۔

اس انوکھے جوڑے کی شادی کو تین سال ہوچکے ہیں اور اگرچہ وہ بہت ہی خوش ہیں لیکن لوگوں کی سوالیہ نگاہیں ضرور ہر جگہ ان کا تعاقب کرتی ہیں۔ نتاشا نے اپنی محبت اور شادی کے بارے میں بات کرتے ہوئے بتایا ”رچرڈ میری زندگی کا پیار ہے۔ مجھے اس سے زیادہ اس دنیا میں کوئی پیارا نہیں ہے۔ ہم دونوں بے حد خوش ہیں۔ رچرڈ سے پہلے جتنے بھی لڑکوں کے ساتھ میری دوستی رہی وہ اس کے سامنے کچھ بھی نہیں ہیں۔

کس قد کے مرد خواتین کو سب سے زیادہ پسند آتے ہیں؟ سائنسدانوں نے پہلی مرتبہ معمہ حل کردیا، مردوں کو راز بتادیا

میں ہائی سکول کی تعلیم مکمل کرنے کے بعد ان کے ریسٹورنٹ میں پارٹ ٹائم جاب کرنے گئی تھی۔ شروع میں تو مجھے ان میں کوئی دلچسپی نہیں تھی کیونکہ ان کی عمر میرے والد سے بھی 10 سال زیادہ ہے، لیکن پھر نجانے کب مجھے ان سے محبت ہو گئی۔ میرے والد اس بات سے بہت ناراض تھے۔ وہ اس شادی کے لئے راضی نہیں تھے لیکن جب ایک دن میری والدہ نے رچرڈ کو ڈنر پر مدعو کیا تو میرے والد کی ان سے کھل کر بات چیت ہوئی۔ اس ملاقات کے بعد وہ شادی کی اجازت دینے پر تیار ہوگئے۔

ہم دونوں بہت خوش اور مطمئن ہیں لیکن لوگ جب یہ جانتے ہیں کہ ہم میاں بیوی ہیں تو ان کا منہ حیرت سے کھلا کا کھلا رہ جاتا ہے۔ وہ اکثر ایسے سوالات بھی کرتے ہیں جن کا مقصد ہمیں شرمندہ کرنا ہوتا ہے، لیکن ہم لوگوں کی باتوں کو دل پر لینے کی بجائے ہنسی میں اڑا دیتے ہیں۔ ہم اپنی زندگی سے خوش ہیں تو لوگوں کی باتوں سے ہمیں کوئی فرق نہیں پڑتا۔“

مزید : ڈیلی بائیٹس