ٹرمپ کی دھمکی پر وزیر دفاع کے بیان سے مایوسی ہوئی ، امریکی سفیر دفتر خارجہ میں پیش ہونے کی بجائے آرمی چیف کے پاس کیوں پہنچا:سینیٹر اعتزاز احسن

ٹرمپ کی دھمکی پر وزیر دفاع کے بیان سے مایوسی ہوئی ، امریکی سفیر دفتر خارجہ ...
ٹرمپ کی دھمکی پر وزیر دفاع کے بیان سے مایوسی ہوئی ، امریکی سفیر دفتر خارجہ میں پیش ہونے کی بجائے آرمی چیف کے پاس کیوں پہنچا:سینیٹر اعتزاز احسن

  

اسلام آباد (ڈیلی پاکستان آن لائن) پیپلز پارٹی کے مرکزی  رہنما سینیٹر چوہدری اعتزاز احسن نے کہا ہے کہ جنوبی ایشیا ء اور افغانستان سے متعلق امریکی صدر کی نئی حکمت عملی سے متعلق وزیر دفاع کے بیان سے بہت مایوسی ہوئی ہے، امریکن سفیر دفتر خارجہ میں پیش ہونے کی بجائے آرمی چیف کے پاس کیوں پہنچا؟ دشمن سے مقابلے کے لئے قوم بننا ضروری ہے، ڈونلڈ ٹرمپ کے بیان پر مجھے  کوئی حیرت نہیں ہوئی، ان کے بیان سے قبل بھارت افغانستان میں پوری طرح سے ملوث ہو کر کارروائیاں کر رہا ہے۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق سینیٹر اعتزاز احسن کا کہنا تھا کہ پارلیمنٹ کی بالادستی اگر کسی نے بحال کرنی ہے تو وہ حکومت  ہے، ٹرمپ کے دھمکی آمیز بیان پر حکومت کا بیان انتہائی کمزور آیا ہے، ہمارے دفترخارجہ نے امریکی سفیر کو کیوں طلب نہیں کیا؟  امریکن سفیر دفتر خارجہ میں پیش ہونے کی بجائے آرمی چیف کے پاس کیوں پہنچا، مشترکہ اجلاس بلایا جانا چاہیئے تھا۔اعتزاز احسن کا کہنا تھا کہ سابق وزیر اعظم نے تو آج تک کلبھوشن کا نام نہیں لیا، میں انعام دینے کے اعلان کر کر تھک گیا،  وفاقی حکومت اور امریکہ کو جی لاک، اے لاک کا نوٹس دینا چاہیئے تھا، وفاقی حکومت نے امریکی صدر کے بیان کے بعد ایک بھی مثبت اقدام نہیں اٹھایا۔انہوں نے کہا کہ  میں یہ نہیں کہتا کہ فوری جنگ چھیڑ دیں، ملک کو قبرستان بنا دیں لیکن کچھ تو اپنی بھی عزت کا خیال ہونا چاہیئے،  وفاقی حکومت کو وزیر خار جہ کا امریکہ کا دورہ منسوخ کرنا چاہیئے تھا ،  اگر حکومت یہ سب نہیں کر سکتی تو پارلیمنٹ کی بالادستی کے بلند و بانگ دعوؤں میں کوئی وزن نہیں۔

مزید : قومی