وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نجکاری کے رکے ہوئے عمل کو حرکت میں لائیں

وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نجکاری کے رکے ہوئے عمل کو حرکت میں لائیں

اسلام آباد(کامرس ڈیسک) پاکستان اکانومی واچ کے صدر ڈاکٹر مرتضیٰ مغل نے کہا ہے کہ وزیر اعظم شاہد خاقان عباسی نجکاری کے رکے ہوئے عمل کو حرکت میں لائیں۔سابق وزیر اعظم نواز شریف کے دور میں آئی ایم ایف سے وعدے کے باوجود سرکاری اداروں میں اصلاحات اور نجکاری کا عمل سست روی کا شکار رہا جس سے سرمایہ کاروں کی مایوسی بڑہی۔منافع بخش اداروں کو فروخت کرنے کی پالیسی قابل اعتراض ہے اس لئے ان کی فروخت سے قبل مفلوج اداروں سے جان چھڑائی جائے جنھیں زندہ رکھنے کاخرچہ دفاعی اخراجات سے زیادہ ہے۔ ڈاکٹر مرتضیٰ مغل نے یہاں جاری ہونے والے ایک بیان میں کہا کہ سابقہ حکومت نے وعدوں کے باوجود غیر فعال اداروں میں اصلاحات کیں نہ انکے سربراہ بدلے ۔احتساب نہ ہونے کے سبب یہ ادارے کرپشن کا گڑھ اور سیاسی بھرتیوں کے مراکز بنے ہوئے ہیں۔انھوں نے کہا کہ نجکاری میں ملکی و غیر ملکی سرمایہ کاروں کی عدم دلچسپی کا سبب بننے والے عوامل دور کئے بغیر نجکاری کی کوششیں کبھی کامیاب نہیں ہو ں گی۔سرکاری اداروں کو زندہ رکھنے پر ضائع ہونے والے اربوں روپے کی رقم فلاحی منصوبوں پر خرچ ہونی چاہیے۔نجکاری کا عمل ذمہ دارانہ اور شفاف ہو تاکہ بجٹ خسارہ کم ہو اورکسی کو اعتراض کا موقع نہ ملے۔

؂ اور نہ ہی اسٹیل ملز کی تاریخ دہرائی جا سکے جسکی فروخت منسوخ ہونے سے نجکاری کا عمل کئی سال تک رکا رہا۔انھوں نے کہا کہ نجکاری میں اچھی شہرت رکھنے والے سرمایہ کاروں پر اعتماد کیا جائے اور غیر ذمہ داری و اقرباء پروری سے بچا جائے۔ڈیفالٹروں، ڈویلپرز اور پراپرٹی ڈیلروں کو اس عمل سے دور رکھنے اوران اداروں کے ملازمین کے مفادات کا خیال رکھنے کی ضرورت ہے ۔انھوں نے کہاکہ قومی وسائل کا ضیاں جاری رہاتونجکاری کی کامیابی کے باوجود نتیجہ کشکول ہی ہو گا۔

مزید : کامرس