ہماری کوششوں پر اعتماد ، قربانیوں کا اعتراف کیا جائے، امریکہ سے مالی ، عسکری امداد کی ضرورت نہیں ، جنرل باجوہ

ہماری کوششوں پر اعتماد ، قربانیوں کا اعتراف کیا جائے، امریکہ سے مالی ، عسکری ...

 راولپنڈی ( مانیٹرنگ ڈیسک،نیوز ایجنسیاں) پاک فوج کے سربراہ جنرل قمر جاوید باجوہ نے پاکستان میں تعینات امریکی سفیر پر واضح کیا ہے کہ پاکستان کو امریکہ سے کسی مالی اور عسکری امداد کی کوئی ضرورت نہیں ہے،امریکہ سے کسی قسم کی مالی یا مادی امداد نہیں چاہیئے ہم امریکہ سے اپنی کوششوں پراعتماد اور اپنی قربانیوں کا اعتراف چاہتے ہیں۔ آئی ایس پی آر کے مطابق، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ سے امریکی سفیر نے ملاقات کی۔ اس موقع پر جنرل قمر جاوید باجوہ نے دو ٹوک اعلان کیا کہ کسی کو خوش کرنے کیلئے نہیں بلکہ اپنے قومی مفاد میں کام کریں گے، پاکستان نے افغانستان میں امن کے قیام کیلئے بہت کچھ کیا، امن کیلئے تمام سٹیک ہولڈرز کو مشترکہ کوششیں کرنا ہوں گی، مشترکہ کوششوں کے بغیر یہ جنگ منطقی انجام تک نہیں پہنچ سکتی۔ جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ افغانستان میں امن کا قیام پاکستان کیلئے انتہائی اہم ہے۔امریکی سفیر ڈیوڈ ہیل نے کہا کہ امریکہ دہشت گردی کے خلاف جنگ میں پاکستان کے کردار کا معترف ہے وہ افغان مسئلے کے حل میں پاکستان کی مدد اور تعاون چاہتا ہے۔ ڈیوڈ ہیل نے سربراہ پاک فوج سے ملاقات کی اور انہیں امریکہ کی نئی افغان پالیسی کے بارے میں آگاہ کیا۔سربراہ پاک فوج نے کہا کہ افغانستان میں امن جتنا پاکستان کے لئے اہم ہے اتنا ہی دوسرے ممالک کے لئے اہم ہے، پاکستان نے بھرپور کردار ادا کیا اور کسی کو خوش کرنے کے بجائے اپنے قومی مفاد اور قومی پالیسی کے تحت کرداد ادا کرتا رہے گا۔آرمی چیف نے کہا کہ افغانستان میں جاری طویل جنگ کو منطقی نتیجے پر پہنچانے کے لئے تمام سٹیک ہولڈرز کا تعاون کامیابی کی کنجی ہے۔ امریکی سفیر ڈیوڈ ہیل نے نئی امریکی پالیسی سے متعلق آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ کو آگاہ کیا۔امریکی سفیر کا کہنا تھا کہ امریکہ دہشت گردی کے خلاف پاکستان کے کردار کی قدر کرتا ہے اور افغان مسئلے کے حل کے لیے پاکستان سے تعاون کا خواہاں ہے۔ یا د رہے کہ امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے 22 اگست کو پاکستان، افغانستان اور جنوبی ایشیا سے متعلق اپنی نئی پالیسی کا اعلان کیا تھا جس میں پاکستان پر سنگین الزامات عائد کرتے ہوئے کہنا تھا کہ پاکستان کو اربوں ڈالر دیتے ہیں مگر وہ دہشت گردوں کو پناہ دیتا ہے، پاکستان میں دہشت گردوں کی پناہ گاہوں پر خاموش نہیں رہیں گے۔پاکستان کے خلاف سخت رویہ اپناتے ہوئے امریکی صدر نے کہا کہ افغانستان میں ہمارا ساتھ دینے سے پاکستان کو فائدہ اور دوسری صورت میں نقصان ہوگا۔جنرل قمر جاوید باجوہ نے کہا کہ ہم امریکہ سے کسی قسم کی امداد نہیں چاہتے ہماری کوششوں پر اعتماد کرتے ہوئے انکا ادراک اور اعتراف کیا جائے ، پاکستان کیلئے افغانستان میں امن اتنا ہی اہم ہے جتنا کسی اور ملک کیلئے اہم ہے۔ ہم نے افغان مسئلے کے حل کیلئے بہت کچھ کیا ہے افغانستان میں طویل عرصے سے جاری جنگ کو منطقی انجام تک پہنچانے کیلئے سٹیک ہولڈرز کے درمیان اشتراک کار اور مربوط کوششیں ضروری ہیں ۔

جنرل باجوہ

مزید : صفحہ اول