شبقدر ،پولیس کی مٹھی گرم نہ کرنے پر دلہا چچا اور بھائی سمیت حوالات میں بند

شبقدر ،پولیس کی مٹھی گرم نہ کرنے پر دلہا چچا اور بھائی سمیت حوالات میں بند

شبقدر(نامہ نگار )پولیس تھانہ خواجہ وس نے پیسے نہ دینے پر دلہا کو سہاگ رات حوالات میں چچا اور بھائی سمیت بندکردیا۔ ضمانت کرنے والے چچااور بھائی کو مارپیٹ کرکے بے عزتی کرکے دھمکیاں دی۔ اس سلسلے میں خواجہ وس کے رہائشی ڈاکٹر نوراللہ شاہ نے پریس کانفرنس کرتے ہوئے کہاکہ 19اگست اتوار کو انکے بھتیجے تسبیح اللہ کی شادی تھی اور شادی کی رات پولیس نے بلاجواز دولہاکو گرفتار کرکے تھانے لے گیاجن کے رہائی کے لئے وہ جب تھانہ پہنچ گیا اور معلومات حاصل کرنا چاہا تو ایس ایچ او غافراللہ کی موجودگی میں پولیس نے انکے گریبان پکڑکر تشدد کیا اور انکوسخت دھمکیاں دی ۔ڈاکٹر نوراللہ شاہ نے الزام لگایاکہ شادی سے پہلے ایس ایچ او غافراللہ نے پیسوں کا مطالبہ کیااور نہ دینے پر دلہا کو سہاگ رات تھانہ میں بند کردیاتھاجبکہ انکو بھی دولہاکے بھائی سمیت گرفتار کرلیاگیاتھا۔ انہوں نے کہاکہ تھانہ خواجہ وس کے ایس ایچ او منشیات فروشوں سے ماہواری وصول کرتاہیں۔ جبکہ شریف لوگوں کو مختلف حربوں سے تنگ کرتے ہیں۔ شادی بیاہ کے موقع پر پولیس نے بھی باقاعدہ بھتہ مقررکردیاہے۔ ڈاکٹر نوراللہ شاہ نے آئی جی خیبر پختونخواہ ،ڈی آئی جی اور ڈی پی او سے انکے بھتیجے کی سہاگ رات بلاجواز گرفتاری اور ڈاکٹر پر تشدد کرنے پر ایس ایچ او غافراللہ اور دیگر اہلکاروں کے خلاف سخت ایکشن لینے کا مطالبہ کیاہے۔

مزید : پشاورصفحہ آخر