مظفرآباد، ویٹرنری آفیسران کیلئے بھیجی گئی سمری ردی کی ٹوکری کی نظر

مظفرآباد، ویٹرنری آفیسران کیلئے بھیجی گئی سمری ردی کی ٹوکری کی نظر

مظفرآباد(بیورورپورٹ)آزادکشمیر کے پانچ اضلاع مظفرآباد،میرپور،کوٹلی ،راولاکوٹ اور باغ میں ویٹرنری آفیسران ،میٹ انسپکٹرز کی آسامیاں نہ مل سکیں ۔محکمہ مالیات آزادکشمیر نے محکمہ امور حیوانات کی طرف سے ویٹرنری آفیسران کیلئے بھیجی گئی سمری ردی کی ٹوکری میں ڈال دی۔آزادکشمیر کے عوام ویٹرنری ڈاکٹرز کی عدم تعیناتی کے باعث باسی مضر صحت گوشت کھانے پر مجبور ہیں ۔مگر ذمہ داران نے جان بوجھ کر آنکھیں بند کر لیں ہیں ۔محکمہ امور حیوانات کے ڈی جی ڈاکٹر مطلوب حسین راجہ نے 2014میں لوکل گورنمنٹ کو تحاریک کی کہ وہ اپنے بجٹ سے میٹ انسپکٹر بلدیہ میں تعینات کرائیں تاکہ لوگوں کو معیاری گوشت ،دودھ اور دیگر غذائی اجناس مل سکیں ۔اس تحریک کو سمری کی شکل بنتے بناتے ایک سال لگااور بالآخر فائل سیکرٹری مالیات کے پاس جا پہنچی اور اس پر عملدرآمد کے بجائے ردی کی ٹوکری کی نذر ہو گئی اور فائل زیر نمبر 22198مورخہ 16-02-15تاحال توجہ طلب ہے ۔اس فائل پر عملدرآمد نہ ہونے سے آزادکشمیر کے اضلاع میں شہری باسی مضر صحت گوشت دودھ استعمال کرنے پر مجبور ہیں اور طرح طرح کی موذی بیماریاں جنم لے رہی ہیں مگر انسانی جانوں کو بچانے کیلئے محکمہ مالیات کی طرف سے کوئی نوٹس نہ لینا سمجھ سے بالاتر ہے ،۔عوامی و سماجی حلقوں نے میٹ نسپکٹر کی اسامیاں تخلیق کروانے کیلئے نوٹس لینے کا مطالبہ کیا تاکہ شہریوں کو معیاری گوشت دودھ میسر آسکے ۔مظفرآباد بڑا شہر ہونے کے باوجود جانوروں کیلئے ذبح خانہ موجود نہیں جو ذمہ داران کیلئے لمحہ فکریہ ہے۔

مزید : راولپنڈی صفحہ آخر