بیت المقدس سے 15 صدیاں پرانی نوادرات دریافت

بیت المقدس سے 15 صدیاں پرانی نوادرات دریافت
بیت المقدس سے 15 صدیاں پرانی نوادرات دریافت

روزنامہ پاکستان کی اینڈرائیڈ موبائل ایپ ڈاؤن لوڈ کرنے کے لیے یہاں کلک کریں۔

تل ابیب(این این آئی)اسرائیل کے ماہرین آثارقدیمہ نے دعوی کیا ہے کہ مقبوضہ بیت المقدس میں کھدائیوں کے دوران انہیں ڈیڑھ ہزار سال پرانی نوادرات ملی ہیں۔ ان میں پچی کاری کی گئی ایک تختی بھی ملی ہے جس پر بازنطینی بادشاہ یوسٹینیانو اول اور آرتھوڈوکس عیسائی پادری کا نام موجود ہے۔

غیرملکی خبررساں ادارے کے مطابق اسرائیلی محکمہ آثار قدیمہ کے عہدیدار ڈیوڈ گیلمن کاکہنا تھا کہ ماضی میں اس طرح کی پینٹنگ بہت کم ملی ہیں۔

انہوں نے کہا کہ کسی تختی پر پرانے دور کی لکھی عبارت کا پایا جانا بہت نایاب ہے۔ان کا کہنا تھا کہ بیت المقدس میں کھدائیوں کے دوران ملنے والی پچی کاری کی گئی پلیٹ سے یونانی زبان میں 550 یا 551 میں لکھے الفاظ موجود ہیں۔

یہ نوادرات آرتھوڈوکس قسطنطین کی تاسیسی عمارت کی یاد گار ہے جس کے بارے میں خیال کیا جاتا ہے کہہ وہ باب دمشق [موجودہ باب العامود] میں زائرین کا مرکز تھی۔قسطنطین تھیوٹوکٹوس نامی چرچ کے کاہن تھے اور یہ چرچ 543 میں قائم کیا گیا تھا۔ڈیوڈ گیلمن کا کہنا تھا کہ سفید رنگ کی پچی کاری تختی پر سیاہ رنگ کی عبارت درج ہے اور یہ زمین کی کھدائی کے دوران گہرائی سے ملی ہے۔

مزید : عرب دنیا