اراضی ریکارڈ سنٹرز میں تاخیری حربوں سے شہری تنگ آ گئے

اراضی ریکارڈ سنٹرز میں تاخیری حربوں سے شہری تنگ آ گئے

  

 لاہور (عامر بٹ سے)30منٹ میں فرد، 10منٹ میں انتقال اور 7روز وراثت کی تصدیق کا دعویٰ کرنے والا پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی کے اراضی ریکارڈ سنٹر ز عوام الناس کیلئے عذاب بن گئے، سروسز میں تاخیری حربوں کے بے پناہ استعمال کے باعث شہری ایکسپریس کاؤنٹر سے 1500 روپے کی ادائیگی کے بعد فرد لینے اور 500روپے ادا کرنے کے بعد انتقال کی تصدیق کروانے پر مجبور ہوگئے۔ مفاد عامہ اور سائلین کو فوری سستا ریلیف دینے کے بلند و بانگ دعوے بھی دھرے کے دھرے رہ گئے، سائلین کے چکر لگوانا معمول بن گیا۔ لینڈ ریکارڈ اتھارٹی میں انٹیلی جنس کو موجودگی اور مانیٹرنگ سسٹم پر تعینات افسران کی تعیناتی کے باوجود کرپشن، رشوت وصولی، اختیارات کا ناجائز استعمال اور فیسوں کے غبن سمیت سنگین الزامات پر مبنی غیر قانونی پریکٹس کی روک تھام نہیں کی جاسکی۔ دوسری جانب پنجاب لینڈ ریکارڈ اتھارٹی ترجمان کا کہنا تھا کہ ارجنٹ سروسز کی صورت میں ایکسپریس کاؤنٹر کی سہولت سے ہزاروں افراد فائدہ اٹھا رہے،جائز کام تاخیر ی حربوں سے التواء میں ڈالے جانے کا الزام غلط ہے شکایت کی صورت میں فوری نوٹس لیکر کارروائی کی جاتی ہے۔ موجودہ ڈی جی پلرا معظم اقبال سپرا کی نگرانی میں صوبے بھر کی عوام کو ہروقت اور فوری ریلیف دیا جا رہاہے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -