فلسطینی رصد گاہوں پر اسرائیل کی گولہ باری، ہسپتال پر شیلنگ، کئی مریض بے ہوش 

  فلسطینی رصد گاہوں پر اسرائیل کی گولہ باری، ہسپتال پر شیلنگ، کئی مریض بے ...

  

 غزہ، بیروت  (این این آئی)فلسطین کے علاقے غزہ کی پٹی پر اسرائیلی فوج کے فضائی اور زمینی حملے وقفے وقفے سے جاری ہیں۔ گزشتہ روز صہیونی فوج نے توپ خانے سے جنوبی غزہ میں فلسطینی مزاحمت کاروں کی رصد گاہوں پر گولہ باری کی ہے۔مرکزاطلاعات فلسطین کے مطابق صہیونی فوج نے ہفتے کے روز غزہ کے جنوبی شہر خان یونس میں رفح کے قریب دو مزاحمتی رصدگاہوں پر گولہ باری کی تاہم اس گولہ باری میں کسی قسم کا جانی نقصان نہیں ہوا۔ صہیونی فوج کے ٹینکوں نے مشرقی خزاعہ اور مشرقی رفح میں کرم ابو معمر کے مقام پر گولہ باری کی۔اس رصد گاہ پر اسرائیلی فوج کی گولہ باری کے نتیجے میں فلسطینی مزاحمتی تنصیبات کو نقصان پہنچا تاہم کسی قسم کا جانی نقصان نہیں ہوا۔علاوہ ازیں اسرائیلی فوج نے گزشتہ روز مقبوضہ بیت المقدس میں فلسطینی انتظامیہ کے زیرانتظام چلنے والے ہسپتال پر چھاپہ مارا اور ہسپتال میں گھس کر مریضوں، عملے اور دیگر افراد کو زدو کوب کیا۔ قابض فوج نے المقاصد ہسپتال کے شعبہ حادثات میں گھس کر توڑپھوڑ کی اور عملے کو تشدد کا نشانہ بنایا۔عینی شاہدین نے بتایا کہ قابض فوج نے اسپتال میں گھسنے کے بعد شعبہ حادثات اور ایمرجنسی وارڈ میں آنسوگیس کی شیلنگ کی جس کے نتیجے میں عملے کے افراد اور مریض دم گھٹنے سے بے ہوش ہوگئے جس کی وجہ سے مریضوں کو دوسرے مقامات پر منتقل کرنا پڑا۔قابض فوج نے مریضوں کی شناخت پریڈ کی اور کئی مریضوں سے تفتیش کی۔ہسپتال انتظامیہ نے اسرائیلی فوج کے دھاوے کی شدید مذمت کرتے ہوئے اسے کھلی جارحیت قرار دیا۔دریں اثناء اسرائیل کے ذرائع ابلاغ نے انکشاف کیا ہے کہ صہیونی فوج غزہ کی پٹی سے داغے جانے والے آتش گیر غباروں اور اس کے نتیجے میں پیدا ہونے والی مشکلات سے نمٹنے میں بری طرح ناکام رہی ہے۔اسرائیل کے عبرانی اخبار نے  فوج کو کڑی تنقید کا نشانہ بنایا اورلکھا ہے کہ غزہ کی پٹی سے فلسطینی آئے روز آتش گیر مواد پر مشتمل غبارے صہیونی کالونیوں پر پھینکتے ہیں جس کے نتیجے میں بڑے پیمانے پرآگ بھڑکنے سے فصلیں تباہ ہو رہی ہیں۔دوسری جانب لبنان کی عوامی اور انقلابی تحریک حزب اللہ نے امریکہ کو خطے میں جنگ کی آگ بھڑکانے پر متنبہ کیا ہے کہ تم نے خودکو دیگرملکوں کے اندرونی معاملات میں مداخلت کا حق دے دیا ہے۔  سید حسن نصراللہ نے اپنے خطاب میں امریکہ اور بعض مغربی اور عرب ممالک کی جانب سے خطے کے داخلی امور میں مداخلت کی جانب اشارہ کرتے ہوئے کہا کہ آپ نے خود کو ملکوں کے اندرونی معاملات میں مداخلت کا حق دے دیا ہے اور ملکوں کے خلاف بے انصافی سے کام لے رہے ہو جبکہ نہ ہمیں اور نہ ہی دوسروں کو علاقے کے عوام کی خدمت کی اجازت ہے۔ انہوں نے کہا کہ علاقے میں اسرائیل ہی بدی کی اصل جڑ اور مرکز ہے اور اگر کوئی اسرائیل کے مد مقابل آئے تو اسے فلسطین کی تاریخ اور اس کی سرزمین سے آشنا ہونا چاہیے۔

اسرائیلی گولہ باری 

مزید :

علاقائی -