دنیا میں خواتین کی آبادی زیادہ، پارلیمان میں نمائندگی صرف 25فیصد، گبریلا کویس

دنیا میں خواتین کی آبادی زیادہ، پارلیمان میں نمائندگی صرف 25فیصد، گبریلا ...

  

 اسلام آباد(آئی این پی)  بین الپارلیمانی یونین کی صدر گبریلا کویس بیرن پاکستان پہنچ گئیں وہ وزیر اعظم عمران خان سے ملاقات کریں گی۔ بین الپارلیمانی یونین (آئی پی یو)کی صدر اور میکسیکو کی سیاسی رہنما گبریلا کویس بیرن چیئرمین سینیٹ صادق سنجرانی کی دعوت پر پاکستان کے دورے پر پہنچی ہیں۔ سینیٹر مرزا آفریدی اور ایم این اے شیر علی ارباب نے صدر آئی پی یو کا استقبال کیا۔ اس موقع پر سیکیورٹی کے سخت انتظامات کیے گئے تھے۔ سینیٹر مرزا آفریدی نے کہا کہ پاکستان بین الپارلیمانی یونین کو اہم سمجھتا ہے اور امید ہے ادارہ جاتی تعاون کے لیے نئی راہیں ہموار ہوں گی۔ سینیٹ نے اس فورم پر مستقل طور پر فعال اور مضبوط کردار ادا کیا۔ اپنے 5 روزہ دورے کے دوران گبریلا کویس بیرن وزیر اعظم عمران خان، صدر مملکت ڈاکٹر عارف علوی، آرمی چیف جنرل قمر جاوید باجوہ اور دیگر اعلی حکام سے ملاقاتیں کریں گی جبکہ وہ چکوال، لاہور، پسنی اور گوادر کا بھی دورہ کریں گے۔ چیئرمین سینیٹ انٹر پارلیمانی یونین کی صدر کے اعزاز میں عشائیہ دیں گے۔بین الپارلیمانی یونین کی صدر گبریلا کویس نے کہا ہے کہ آئی پی یو کی بنیاداسوقت صرف نو ممالک نے کیا،ہمیں آئی پی یو کے تحت خواتین کی خود مختاری دینی ہے،دنیا کو مہاجرین اور موسمیاتی تبدیلیوں سے لڑنے کا اعادہ کرنا ہوگا،وباء سے متعلق دنیا بھر میں پالیسی کا فقدان ہے،عالمی وباء کو کنٹرول کرنا چاہیے۔ اتوار کو بین الپارلیمانی یونین کی صدر گبریلا کویس نے پپس میں تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہاکہ پاکستان میں پروجوش استقبال پر مشکور ہوں،آئی پی یو کے قیام کے 131سال ہوگئے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ آئی پی یو کا مقصد پارلیمانی سفارتکاری کو فروغ دینا ہے،آئی پی یو کی بنیاداسوقت صرف نو ممالک نے کیا،ہمیں آئی پی یو کے تحت خواتین کی خود مختاری دینی ہے،دنیا میں خواتین کی آبادی زیادہ مگر پارلیمان میں نمائندگی صرف 25فیصد ہے۔ انہوں نے کہاکہ اسوقت صرف پانچ فیصد سربراہان مملکت خواتین ہیں،دنیا کو مہاجرین اور موسمیاتی تبدیلیوں سے لڑنے کا اعادہ کرنا ہوگا،پارلیمنٹ ہی حکومتوں کی نگرانی کرتی ہے،اگر کوئی حکومت عوام سے مخلص ہو تو انکی فلاح وبہود کا بجٹ رکھتی ہے۔ انہوں نے کہاکہ عالمی وباء کو کنٹرول کرنا چاہیے،وباء سے متعلق دنیا بھر میں پالیسی کا فقدان ہے،کرونا وبا کے وقت بیشتر ممالک نے ائیرپورٹس سمیت سب کچھ بن کردیا،پارلیمانی قیادت جانتی ہے کہ کیسے عوامی فلاح وبہبود کے لئے کام کرناہے،پاکستان آکر فخر محسوس کرتی ہوں،اندازہ ہوا کہ پاکستانی پارلمنٹرین کو عوام کا کتنا احساس ہے۔

گبریلا

مزید :

صفحہ اول -