اتوار بچت بازاروں میں حقیقی رعایت کا تصور متعارف کروایا جائے: عتیق میر

اتوار بچت بازاروں میں حقیقی رعایت کا تصور متعارف کروایا جائے: عتیق میر

کراچی (اکنامک رپورٹر) اتوار بچت بازاروں میں حقیقی رعایت کا تصور متعارف کروایا جائے، تاجر اپنی مارکیٹوں میں کم استطاعت رکھنے والے خریداروں کیلئے رعایتی سیل کا اعلان کریں، مندی اور کساد بازاری کے اس دور میں پُرکشش ڈسکاﺅنٹ کے زریعے خریداروں کو متوجہ کرکے ویران مارکیٹوں کی رونقیں بحال کی جاسکتی ہیں، مصنوعی مہنگائی، ذخیرہ اندوزی اور ناجائز منافع خوری کا رحجان تجارت کا ناسور بن گیا ہے، ان خیالات کا اظہار آل کراچی تاجر اتحاد کے چیئرمین عتیق میر نے جامع شاپنگ سینٹر میں قائم کیئے گئے اتوار بچت بازار کی افتتاحی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کیا انھوں نے کہا کہ قوتِ خرید میں کمی کے باعث تنخواہ دار اور محنت کش طبقے کی مشکلات میں اضافہ ہوگیا ہے، انھوں نے موقع پر موجود تاجروں سے دردمندانہ اپیل کرتے ہوئے کہا کہ اس اذیتناک مہنگائی کے دور میں اللہ تعالیٰ کی رضا کیلئے کم تر وسائل کے حامل اور غریب طبقے کی مدد اور تعاون کے طور پر ضروریاتِ زندگی کی اشیاءکی خریداری پر ممکنہ حد تک رعایت دی جائے

، انھوں نے تاجروں سے اپیل کی کہ تمام مذاہب کے تہواروں پر رواداری، خلوص اور عقیدت کے اظہار کے طور پر خریداروں کو اسپیشل ڈسکاﺅنٹ دیا جائے، بچت بازار وقت کی ضروت بن گئے ہیں، سستی اشیاءکے بازاروں کو خدمت کا ماڈل بنایا جائے، انھوں نے کہا کہ مستقبل میں شہر کے دیگر تجارتی مراکز میں بھی بچت بازاروں کا قیام عمل میں لایا جائیگا جس کے نتیجے میں کاروباری معاملات میں بہتری، عوام کو ریلیف اور بیروزگاروں کو روزگار کے مواقع حاصل ہونگے، انھوں نے موقع پرست اور مصنوعی مہنگائی مسلط کرنے کے ذمے دار تاجروں کے عمل کی شدید مذمت کرتے ہوئے کہا کہ بدقسمتی سے چور، ڈاکو اور لٹیرے تاجروں کی صفوں میں شامل ہوگئے ہیں، کاروبار میں نیک نیتی اور اخلاص کا جذبہ ہو تو تجارت عبادت بن جاتی ہے،اس موقع پر بچت بازار کے منتظم محمد ناصر نے اس عزم کا اظہار کیا کہ جامع شاپنگ سینٹر میں قائم کیئے گئے اتوار بچت بازار میں غریب عوام کو ناقابلِ یقین اور حیران کُن حد تک رعایتی قیمتوں پر اشیاءمہیا کی جائینگی جن میں سیکنڈ ہینڈ کلاتھ، برتن، جوتے، کھلونے، کراکری، کٹلری، کمبل، زنانہ، مردانہ اور بچوں کے گارمنٹس کے علاوہ الیکٹرونکس اور گھریلو استعمال کی دیگر اشیاءشامل ہیں، انھوں نے کہا کہ بیشتر مقامات پر بچت بازار کے نام پر خریداروں کو کھلا دھوکہ دیا جارہا ہے جس کے باعث سستے اور رعایتی بازاروں سے خریداروں کا اعتبار ختم ہوتا جارہا ہے، اس موقع پر تاجر رہنما زبیر علی خان، سمیع اللہ خان، یوسف خان، مصطفی ہارون،دلشاد بخاری، عبدالقادر اور دیگر بھی موجود تھے۔

مزید : کلچر