غداری کیس: ڈمی بم ملنے پر ملزم پرویز مشرف کو ایک دن کی معافی، فردجرم کیلئے یکم جنوری کو پیش ہونے کا حکم

غداری کیس: ڈمی بم ملنے پر ملزم پرویز مشرف کو ایک دن کی معافی، فردجرم کیلئے یکم ...
غداری کیس: ڈمی بم ملنے پر ملزم پرویز مشرف کو ایک دن کی معافی، فردجرم کیلئے یکم جنوری کو پیش ہونے کا حکم

  

اسلام آباد ( مانیٹرنگ ڈیسک) خصوصی عدالت نے سابق فوجی صدر پرویز مشرف کیخلاف غداری کے مقدمے میں غیر حاضری تکنیکی وجوہ پر قبول کرتے ہوئے ایک دن کا استثنیٰ دیدیا ہے اور ملزم پرویز مشرف کو فرد جرم عائد کرنے کیلئے نئے عیسوی سال کے پہلے روز طلب کرلیا۔ عدالت نے پرویز مشرف کے وکلاءکی ججوں کی تقرریوں کے طریقہ کار اور عدالت کی تشکیل سے متعلق اعتراضات کی سماعت سے معذرت کرتے ہوئے تحریری طورپر پیش کرنے کی ہدایت کردی جبکہ وکلاءصفائی نے انٹراکورٹ اپیل کرنے کا فیصلہ بھی کرلیاہے ۔ پرویز مشرف کے خلاف غداری کیس سماعت جسٹس فیصل عرب پر مشتمل تین رکنی بنچ نے نیشنل لائبریری اسلام آباد میں کی ۔ سماعت کے دوران پرویز مشرف پیش نہ ہوئے تاہم وکلا نے کہا کہ سابق صدر سنگین سیکیورٹی خطرات کے باعث عدالت میں پیش نہیں ہوسکتے لہذا انہیں عدالت میں پیشی سے استثنیٰ دی جائے جس پر جسٹس فیصل عرب نے ریمارکس دیتے ہوئے کہا کہ عدالت حالات کی نزاکت کو سمجھتی ہے ،اگر واقعہ ہی پرویز مشرف کو سیکیورٹی خطرات ہیں تو اس پر غور کیا جائےگا۔ انہوں نے سابق صدر کے وکلا کو ہدایت کی کہ وہ تحریری طور پر لکھ کر دیں تاکہ پرویز مشرف کو چھوٹ کی درخواست دی جائے۔پرویز مشرف کے وکلا نے سماعت کے دوران کہا کہ ہمیں ججز کی تقرریوں کے طریقہ کار اور خصوصی عدالت کی تشکیل پر اعتراضات ہیں لہذا سب سے پہلے وہ اس پر دلائل دیں گے جس کے بعد اگلی کارروائی شروع کی جائے۔خصوصی عدالت کے سربراہ جسٹس فیصل عرب نے کہاجو شکایات ہیں وہ تحریری طور پر دائر کریں ،اس کے بعد عدالت اس کا فیصلہ کرے گی۔اس موقع پر حکومتی پراسکیوٹرز کی ٹیم کا کہنا تھا کہ یہ کریمنل ٹرائل ہے اس میں ملزم کا پیش ہونا لازم ہے لہذا سابق صدر کی عدالت میں پیشی کو یقینی بنایا جائے اور ناقابل ضمانت وارنٹ جاری کریں جبکہ ان پر فرد جرم عائد کرنےکے لئے بھی تاریخ طے کی جائے۔ پرویز مشرف کے وکیل نے کہا کہ ہم نے درخواست دائر کی ہے جس میں عدالت کے اختیار سماعت، بنچ کی تشکیل اور ججز کی نامزدگی پر اعتراضات ہیں، ہمیں ابھی تک کمپلینٹ کی کاپی نہیں ملی ۔عدالت کی طرف سے رجسٹرار نے اسی وقت کمپلینٹ کی کاپی پرویز مشرف کے وکلاءکے حوالے کر دی۔سماعت منگل کے دن گیارہ بجے تک ملتوی کردی گئی ۔ عدالت نے ایک روز کی غیر حاضری پر استثنی ٰ دیتے ہوئیے ملزم کو یکم جنوری 2014ءکو طلب کر لیا ہے ۔ اس روز ملزم پر فرد جرم لگائی جائے گی ۔واضح رہے کہ ملزم پرویز مشرف کو جس راستے سے عدالت میں لے جانا تھا وہاں سے پانچ کلو گرام وزنی ڈمی بم اور دوپستول ملے تھے ۔ دوسری طرف سابق صدر ریٹائرڈ جنرل پرویزمشرف نے خصوصی عدالت کے قیام کیخلاف انٹراکورٹ اپیل دائرکرنیکافیصلہ کیا ہے۔پرویزمشرف نے خصوصی عدالت کے قیام کیخلاف انٹراکورٹ اپیل دائرکرنیکافیصلہ رات گئے اپنے قانونی ماہرین سے مشاورت کے بعد کیا۔پرویز مشرف کا کہنا تھا کہ عدالتوں کا احترام کرتاہوں اورعدالتوں ساسامناکرنے کیلئے تیارہوں۔ سابق صدر نے کہا کہ پہلے بھی عدالتوں کا سامناکیا تھا اب بھی کروں گا۔ ریٹائرڈجنرل پرویز مشرف نے کہا کہ قانون میں جواستحقاق دیاہے اس کا استعمال کرونگا، میں ہرطرح کے حالات کاسامناکرنے کیلئے تیارہوں۔انہوں نے کہا کہ 3 نومبرکے اقدامات اکیلے نہیں کیے تھے۔

مزید : قومی /اہم خبریں