شام میں بمباری سے بچوں سمیت 300سے زائد افراد مارے گئے

شام میں بمباری سے بچوں سمیت 300سے زائد افراد مارے گئے
شام میں بمباری سے بچوں سمیت 300سے زائد افراد مارے گئے

  

دمشق،ماسکو (مانیٹرنگ ڈیسک) شام کے شہر حلب میں سرکاری فوج کے جنگی طیاروں کی آٹھ روزہ بمباری میں 87 بچوں سمیت 300سے زائد افراد مارے جاچکے ہیں جبکہ روس نے شام کے کیمیائی ہتھیاروں کو تلف کرنے کیلئے سامان بھجوادیاہے ۔غیرملکی میڈیا کے مطابق ہلاک اور زخمی ہونے والے افراد سے شام کے ہسپتال بھر گئے۔ شام کی ایک انسانی حقوق کی تنظیم کے مطابق مرنے والوں میں 30 خواتین بھی شامل ہیں۔ ضلع مرجا میں ایک اور حملے میں تین بچوں سمیت مزید پانچ افراد ہلاک ہوگئے۔ ادھر روس نے شام کے کیمیائی ہتھیاروں کو تلف کرنے کے لیے 75 گاڑیاں اوردیگر سامان شام بھیج دیا ہے۔ سابق امریکی صدر جمی کارٹر نے شامی بحران کوحل کرنے کے لیے 3 نکاتی فارمولہ پیش کردیا جس کے مطابق شام میں امن لانے کے لیے ملک میں شفاف انتخابات ہونے چاہیں اور اس کے بعد انتخابی نتائج کو کھلے دل سے تسلیم بھی کرنا چاہیں اور تیسرا یہ کہ شام میں عالمی امن فوج کو تعینات کیا جائے۔ ایرانی مجلس کی خارجہ کمیٹی کے وائس چیئرمین منصورحقیقت پور نے کہا ہے کہ ایران کے بغیر کوئی بھی قوت شامی بحران کو حل نہیں کرسکتی۔ صدر بشارالاسد نے کہا کہ ملک کو شدت پسندوں کی بربریت کا سامنا ہے۔اُنہوں نے مغربی ممالک کے رہنماﺅں کو خودغرض قراردیتے ہوئے ان کے دوہرے معیار پرشدید تنقید کا نشانہ بنایا۔

مزید : انسانی حقوق