محکمہ ریلوے میں عارضی بھرتیا ں، چیف ایگزیکٹو و جنرل منیجر سے منظوری لازمی 

محکمہ ریلوے میں عارضی بھرتیا ں، چیف ایگزیکٹو و جنرل منیجر سے منظوری لازمی 

  



ملتان(واثق رؤف سے)ریلوے ہیڈکوارٹرنے انگریزدورمیں محفوظ ٹرین آپریشن کے لئے بنائے گئے قواعدوضوابط کویکسربدل کررکھ دیاہے۔جس کی وجہ سے ملک بھرمیں مختلف شعبوں کے انچارجزکوپاکستان ریلوے کوآپریشنل سسٹم کورواں دواں رکھنے میں مشکلات کاسامناکرناپڑرہاہے جبکہ حادثات میں اضافہ کابھی امکان پیداہوگیاہے۔بتایاجاتاہے کہ عارضی بنیادوں پرکلاس فورکی بھرتی کے لئے اب نہ صرف چیف ایگزیکٹووسنیئرجنرل منیجر(بقیہ نمبر10صفحہ12پر)

ریلوے ہیڈکوارٹرسے منظوری لیناہوگی بلکہ اس بھرتی کی قابل قبول وجہ بھی بیان کرناہوگی۔ریلوے ذرائع کے مطابق ریلوے کے شعبہ سول انجینئرنگ میں گینگ مین سٹاف ٹرین آپریشن کورواں دواں رکھنے میں ریڑھ کی ہڈی کی حیثیت  رکھتاہے۔انگریزدورمیں گینگ مین کی بھرتی کی ذمہ دارپرمانینٹ وے انسپکٹر(پی ڈبلیوآئی)کی ہوتی تھی کیونکہ ریلوے ٹریک کی فٹنس کاپی ڈبلیوآئی ہی ذمہ دارہوتاہے۔اسی طرح بوگیوں انجنوں،ٹریفک سمیت دیگرشعبوں کے کلاس فورسٹاف کی بھرتی بھی متعلقہ انسپکٹریاانچارج کی ذمہ داری ہوتی تھی جواپنے سیکشن کے قریبی علاقوں میں موجودافرادکی صحت کودیکھتے ہوئے روزانہ کی اجرت پراپنی افرادی قوت کے مطابق بھرتی کرلیتے تھے بعدازاں مستقل مزاجی اورمحنت کے ساتھ کام کرنے والوں کومستقل کردیاجاتاتھا۔یہ سلسلہ سابق صدرپرویزمشرف کے دورمیں ختم ہوگیاجس کے بعدعارضی لیبرکی بھرتی متعلقہ ڈویژنل آفیسرکی منظوری کے بعدکی جانے لگی عارضی بھرتی ہونے کاخواہشمندفردمتعلقہ ڈویژنل آفیسرکودرخواست گزارتاجوبھرتی کے لئے متعلقہ آفیسرکوبھجوادیتاتھایہاں تک بھی متعلقہ انسپکٹریاانچارج کسی نہ کسی صورت ڈویژنل آفیسرسے رابطہ میں ہونے کی وجہ سے مرضی کی لیبرکے حصول کویقینی بنالیتاتھاتاہم اب ریلوے ہیڈکوارٹرنے مکمل طورپرشعبوں کے انچارج اورڈویژنل افسران کوکلاس فورکی عارضی بھرتی سے علیحدہ کردیاہے ریلوے ہیڈکوارٹرنے تمام ڈویژنوں کومراسلہ جاری کیاہے جس میں کہاگیاہے کہ کوئی بھی ٹی ایل اے ملازم بھرتی کرنے سے قبل متعلقہ ڈویژنل انتظامیہ نہ صرف اس بھرتی کی چیف ایگزیکٹووجنرل منیجرریلوے سے منظوری لے گابلکہ اس بھرتی کرنے کی قابل قبول وجہ بھی بتائی گی۔ریلوے ذرائع کاکہناہے کہ عارضی بھرتی کوبھی ایک مشکل عمل بنادیاگیاہے جتنے دنوں میں کسی عارضی بھرتی کی درخواست ہیڈکوارٹرسے منظورہوکرآئے گی اتنے دنوں میں نہ صرف عارضی بھرتی کاخواہشمندکسی اورملازمت سے منسلک ہوجائے گابلکہ فوی لیبرنہ ملنے پرآپریشنل سسٹم بھی بری طرح متاثرہوگا۔ریلوے ذرائع کاکہناہے کہ نئی پالیسی پرمختلف شعبوں کے انچارجزنے شدیدتحفظات کااظہارکیاہے جبکہ مختلف ریلویزیونین نے بھی اس پراحتجاج کافیصلہ کیاہے۔ان کاکہناہے کہ  پہلے ہی ریلوے کے آپریشنل سسٹم کومشکلات کاسامناہے۔نئی پالیسی سے صورت حال مزیدخراب ہوجائیگی۔ریلوے ہیڈکوارٹرفیصلہ پرنظرثانی کرے۔

ٹرین آپریشن 

مزید : ملتان صفحہ آخر