مریم نواز کانا م ای سی ایل سے نکالنے کی درخواست پر حکومت سے رپورٹ طلب

مریم نواز کانا م ای سی ایل سے نکالنے کی درخواست پر حکومت سے رپورٹ طلب

  



لاہور(نامہ نگار خصوصی)لاہور ہائی کورٹ کے جسٹس علی باقر نجفی اور جسٹس انوارالحق پنوں پر مشتمل ڈویژ ن بنچ نے مسلم لیگ (ن) کی رہنماء مریم نواز کی طرف سے اپنا نام ای سی ایل سے نکلوانے کیلئے دائر درخواست پر حکومت سے رپورٹ طلب کرتے ہوئے مزید سماعت 26 دسمبر پر ملتوی کردی،وفاقی حکومت کے وکیل نے عدالت کو بتایا مریم نواز کا نام ای سی ایل سے نکالنے سے متعلق کابینہ کی ذیلی کمیٹی کی میٹنگ ہوئی تھی،ذیلی کمیٹی نے اپنی سفارشات وفاقی کابینہ کو بھیج دی ہیں، حتمی فیصلہ کابینہ نے کرنا ہے جو آج 24دسمبرکومتوقع ہے، مریم نواز کے وکیل نے استدعا کی کہ ایک بیٹی اپنے بیمار باپ سے ملنا چاہتی ہے، جب تک کابینہ فیصلہ نہیں کرتی، ایک بار کیلئے ملک سے باہر جانے کی اجا ز ت دیدیں، جس پر فاضل بنچ نے کہا جب تک ہمارے پاس کابینہ کاکوئی فیصلہ نہیں آتا ہم کیسے حکم جاری کر سکتے ہیں، مریم نواز کے وکیل نے کہا  عدالت نے حکومت کو مریم نواز کا نام ای سی ایل سے نکالنے کے معاملہ کا فیصلہ کرنے کیلئے سات دن کی مہلت دی تھی،14دن ہو گئے ہیں، کابینہ نے اس بابت کوئی فیصلہ نہیں کیا۔، جسٹس انوار الحق پنوں نے سرکاری وکیل سے کہا عدالت نے سات دن کا وقت دیا تھا، دو ہفتے ہو گئے ہیں،جسٹس علی باقر نجفی نے کہا جب حکومت کا کوئی فیصلہ آئیگا تب دیکھیں گے، عدالت نے اس بابت رپورٹ طلب کرتے ہو ئے مزید سماعت 26دسمبر پر ملتوی کردی، مریم نواز کی درخواست میں موقف اختیار کیا گیا ہے کہ ایون فیلڈ ریفرنس میں سزا کے باوجود بیمار والدہ کو چھوڑ کر بیرون ملک سے والد کیساتھ واپس آئی، موقف سنے بغیر نام ای سی ایل میں شامل کیا گیا، ای سی ایل میں نام شامل کرنے کا میمورنڈرم غیر قانونی و آئین کی خلاف ورزی ہے، لاہور نیب مقدمات کے دوران والدہ کو کھویا، والد بستر مرگ پر ہے، والدہ کی وفات کے بعد اپنے والدنواز شریف کی دیکھ بھال میں ہی کرتی رہی ہوں، نواز شریف بیماری میں مجھ پر ہی انحصار کرتے ہیں، والد کو اب کھونا نہیں چاہتی، نام ای سی ایل میں شامل کرنے کا میمورنڈم اعلی عدلیہ کے فیصلوں کی بھی خلاف ورز ی ہے، درخواستگزار کا مزید موقف ہے کہ عدالتوں میں ڈیڑھ سال تک مسلسل پیش ہوتی رہی ہوں، اپنے والد نواز شریف کی بیماری کی وجہ سے شدید ذہنی دباؤ کا شکار ہوں، والد کی دیکھ بھال کیلئے بیرون ملک جانا چاہتی ہوں، نام ای سی ایل میں شامل کرنے کا 20 اگست 2018 ء کا حکومتی نوٹیفیکیشن حکم غیر آئینی اور غیر قانونی قرار دیکر کالعدم کیا جائے، درخواست میں عبوری داد رسی کے طور پر استدعا کی گئی ہے کہ درخواست کے حتمی فیصلے تک 6 ہفتوں کیلئے ایک بار بیرون ملک جانے کی اجازت دی جائے۔

مریم نواز رٹ

مزید : صفحہ اول


loading...