پنجاب بھر کی ماتحت عدالتوں میں وکلاء کی ہڑتال، ہزاروں مقدمات کی سماعت ملتوی

پنجاب بھر کی ماتحت عدالتوں میں وکلاء کی ہڑتال، ہزاروں مقدمات کی سماعت ملتوی

  



لاہور(نامہ نگار خصوصی)پنجاب بھر کے وکلا ء کی طرح لاہور کی ماتحت عدالتوں میں وکلاء نے گزشتہ روز بھی ہڑتال کی،پی آئی سی کیس میں وکلاء کی گرفتاریوں کے خلاف پنجاب بار کونسل نے ہڑتال کی کال دے رکھی ہے، وکلاء کی ہڑتال کے باعث ہزاروں مقدمات کی سماعت متاثر ہوئی، دوسری طرف لاہور ہائی کورٹ بار ایسوسی ایشن کے صدر حفیظ الرحمن چودھری اور پی آئی سی مصالحتی کمیٹی کے ارکان لاہورہائی کورٹ بار کے سابق صدورر اصغر علی گل اور پیر مسعود چشتی نے کہا ہے کہ وکلاء اور ڈاکٹر حضرات کے اجلاس کے دوران جو بھی فیصلے ہوئے تھے ہم اس پر کاربند ہیں جبکہ ایک گروہ کی جانب سے اس پر امن ماحول کو خراب کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے جس کی ہم مذمت کرتے ہیں اور امید کرتے ہیں کہ جلد تمام معاملات احسن انداز میں انجام پا جائیں گے اور وکلاء ہمیشہ کی طرح اب بھی سرخرو ہوں گے۔انہوں نے کہا کہ ابتک کل 65 گرفتار وکلاء میں سے 40 کی رہائی ہو چکی ہے جبکہ 25 وکلاء کی ابھی ضمانت ہونا باقی ہے۔ ان کی رہائی کے لئے متعلقہ عدالت میں درخواست ضمانت دائر کر دی گئی ہے۔ وکلاء برادری امید کرتی ہے کہ باقی گرفتار وکلاء کے حوالہ سے بھی قانون و آئین کی پاسداری کرتے ہوئے معززعدالتیں فیصلہ کریں گی۔لاہور ہائی کورٹ بار کے مذکورہ راہنماؤں کی طرف سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ ہم بے گناہ وکلاء پرامن احتجاج کر رہے تھے جو کہ ان کا قانونی اور آئینی حق ہے انکی گرفتاری اور ان پر پولیس تشدد کی بھرپور مذمت کرتے ہیں اور حکومت پنجاب سے مطالبہ کرتے ہیں کہ مقدمات کی میرٹ پر تفتیش میں رکاوٹیں نہ ڈالی جائیں انہوں نے وکلاء کے خلاف دونوں مقدمات میں سے دہشت گردی کی دفعات کو فی الفور ختم کیا جائے اورجن وکلاء پر تشدد کیا گیا تھا ان کا میڈیکل دوبارہ کرایا جائے۔

وکلاء کی ہڑتال

مزید : صفحہ آخر


loading...