افسران و اہلکار سائلین کی ہر ممکن معاونت کریں: چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ

    افسران و اہلکار سائلین کی ہر ممکن معاونت کریں: چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ

  



لاہور(نامہ نگار خصوصی)چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ سردار محمد شمیم خان نے کہا ہے کہ سائلین نظامِ انصاف کے حقیقی سٹیک ہولڈرزہیں،افسران و ملازمین سائلین کی ہر ممکن معاونت کریں،وہ گزشتہ روز اپنے اعزاز میں منعقدہ الوداعی عشائیہ سے خطاب کر رہے تھے۔چیف جسٹس سردار محمد شمیم خان 31 دسمبر کو اپنے عہدے سے ریٹائر ہو جائیں گے، جس کے بعد جسٹس مامون رشید شیخ یکم جنوری کو چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ کا عہدہ سنبھالیں گے۔جسٹس سردار شمیم خان کے اعزاز میں الوداعی جبکہ نامزد چیف جسٹس مامون رشید شیخ کے اعزاز میں استقبالی عشائیہ کا اہتمام لاہور ہائی کورٹ کے افسروں اور سٹاف کی جانب کیا گیاسے دیا گیا،اپنے اعزاز میں منعقدہ الوداعی عشائیہ سے خطاب کرتے ہوئے چیف جسٹس سردار محمد شمیم خان نے لاہور ہائی کورٹ کے افسران اور ملازمین سے مخاطب ہوتے ہوئے کہا کہ آپ کی تمام ترقیوں، تنخواہوں، مراعات اور عمارتوں کا بنیادی محور عام سائلین ہیں، جو حصولِ انصاف کے لئے ہمارے پاس آتے ہیں۔ اللہ تبارک وتعالیٰ کا فضل و کرم ہے کہ ہمارے ادارے کی تنخواہیں صوبے کے دیگر سرکاری اداروں سے بہت بہتر ہیں، انہوں نے کہا کہ آپ لوگوں کا لائف سٹائل اور معیارِ زندگی بھی دیگر سرکاری ملازمین کی نسبت پر وقار اور قابلِ رشک ہے۔انہوں نے کہا کہ اب یہ تمام ملازمین کی ذمہ داری ہے کہ آپ اپنے فرائض سمجھیں۔آپ نے انصاف کی فراہمی کے اس خواب کو پورا کرنا ہے جو اس صوبے کی عوام دیکھ رہی ہے۔ لوگوں کی امیدوں پر پورا اترنا ہے۔ یہ لاہور ہائیکورٹ ہم سب کا ادارہ ہے۔ ہماری صرف ذمہ داریاں مختلف ہیں۔ لیکن لاہور ہائی کورٹ کے جج سے لیکر خاکروب تک سب اس ادارے کا اہم حصہ ہیں۔ ہم انصاف کے ایوانوں میں بیٹھے ہیں۔ عدالتوں میں بیٹھاہر شخص فراہمی انصاف کے نظام کے ساتھ منسلک ہے اور اس نظامِ عدل کے ساتھ منسلک ہونا اللہ تبارک و تعالیٰ کا خاص انعام ہے۔ انہوں نے کہا کہ وہ بطور سربراہ تمام افسران و ملازمین کو تلقین کرنا چاہتے ہیں کہ ہمیشہ ایمانداری اور دیانتداری سے فرائض سرانجام دیں۔ جیسے ناجائز ذرائع سے ملنے والی خوشیاں آپ کی حقیقی خوشیوں کو برباد کردیتی ہیں، اسی طرح ناجائزذرائع سے حاصل ہونے والی دولت آپ کے حلال رزق میں سے برکت کو ختم کردیتی ہے۔ اس لئے اس ادارے کی عزت، وقار اور سربلندی کے لئے مل کر کام کریں۔ عدالت عالیہ کے ملازمین ہماری ٹیم کا وہ حصہ ہیں جن کے بغیر لوگوں کو انصاف کی فراہمی ممکن نہیں۔ ہم نے اس ادارے اور سسٹم کی بہتری کیلئے بہت کچھ کیا ہے، لیکن سٹاف کے تعاون کے بغیر کچھ بھی ممکن نہیں ہے،اس لئے آپ کی ذمہ داری ہے کہ اپنے ارد گرد ان عناصر کی نشاندہی کریں جو تھوڑے سے دنیاوی فائدہ کے لئے اس عظیم ادارے کے لئے بدنامی کا باعث بنتے ہیں۔انہوں نے کہا کہ آج سے ایک سال قبل جب بطور چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ انہوں نے حلف لیا تو سائلین، وکلاء اور لاہور ہائی کورٹ افسران و ملازمین کے تمام جائزمسائل انکے سامنے رکھے گئے اور اس ایک سال کے دورانیہ میں ان تمام مسائل کو حل کرنے کیلئے تمام دستیاب وسائل بروئے کار لائے گئے۔ چیف جسٹس نے مزید کہا کہ لاہور ہائی کورٹ افسران اور سٹاف کی اپ گریڈیشن کے معاملے کو نہایت خوش اسلوبی کے ساتھ حل کیا گیا۔ اب کوئی بھی کیڈر ایسا نہیں جن کی اپ گریڈیشن نہ ہوئی ہو۔ان کا کہنا تھا کہ لاہور ہائی کورٹ کے افسران اور سٹاف کا سپیشل جوڈیشل الاؤنس2008 کی بنیادی تنخواہ کے تین گنا کے برابر منجمدتھا۔ ہم نے اس خصوصی جوڈیشل الاؤنس کو غیر منجمد کرکے موجودہ بنیادی تنخواہ کے ڈیڑھ گنا کے برابر لائے جس سے آپ سب کی تنخواہوں میں خاطر خواہ اضافہ ہوا۔ سالہاسال سے ترقیوں کے منتظر سٹاف کی پروموشن کی گئی اور آئندہ جلد ترقیوں کے لئے بھی لائحہ عمل ترتیب دیا گیا۔ سٹاف کے کام کا بوجھ کم کرنے کیلئے میرٹ پر مزید بھرتیاں کی گئیں۔ لاہور ہائی کورٹ میں کثیر المنازل انتظامی بلاک کا سنگِ بنیاد رکھا گیا، جو انشاء اللہ بہت جلد تعمیر ہو جائے گا اورلاہور ہائی کورٹ کی سیکیورٹی کو مزید بہتر بنانے کے لئے متعدد اقدامات کئے گئے۔قبل ازیں تقریب سے اظہار خیال کرتے ہوئے نامزد چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ جسٹس مامون رشید شیخ کا کہنا تھا کہ وہ چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ سردار محمد شمیم خان کی جانب سے کی گئی عدالتی اصلاحات اور دیگر اقدامات کا تسلسل جاری رکھیں گے. لاہور ہائیکورٹ کے سٹاف کے لئے بھرپور اقدامات کئے جائیں گے لیکن کام نہ کرنے والوں کی بازپرس بھی کی جائے گی. انہوں نے کہا کہ سائلین ہمارے بنیادی سٹیک ہولڈرز ہیں اور انکی فلاح کے لئے تمام وسائل بروئے کار لائے جائیں گے، عدالتی نظام کو بہتر کرنے کے لئے کیس فلو سسٹم میں مزید بہتری لائی جائے گی. انہوں نے اس امید کا اظہار بھی کیا کہ لاہور ہائیکورٹ کا تمام انتظامی اور عدالتی سٹاف اس ادارے کی سربلندی کیلئے اپنا بھرپور کردار جاری رکھیں گے اور جلد اور معیاری انصاف کی فراہمی کا جو خواب اس صوبے کی عوام نے دیکھا ہے وہ انشاء اللہ بہت جلد شرمندہ تعبیر ہوگا. انہوں نے اس موقع پر تمام مسیحی سٹاف کر کرسمَس کی مبارک باد بھی پیش کی. رجسٹرار لاہور ہائیکورٹ عبدالستار نے بھی چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ سردار محمد شمیم خان کی جانب سے کئے اٹھائے جانے والے اقدامات کے حوالے سے اپنے خیالات کا اظہار کیا اور انکی خدمات کو بھرپور خراجِ تحسین پیش کیا. تقریب کے اختتام پر نامزد چیف جسٹس مامون رشید شیخ نے لاہور ہائی کورٹ انتطامیہ کی جانب سے چیف جسٹس لاہور ہائی کورٹ سردار محمد شمیم خان کو سوونیئر بھی پیش کیا۔  جسٹس سردار محمد شمیم خان نے رواں سال یکم جنوری کو لاہور ہائی کورٹ کے 48 ویں چیف جسٹس کے طور پر حلف اٹھایا تھا۔ 

چیف جسٹس لاہور ہائیکورٹ

مزید : صفحہ آخر


loading...