چینی تاجر پاکستان کے زرعی شعبہ میں مشترکہ منصوبہ سازی کریں: لاہور چیمبر 

چینی تاجر پاکستان کے زرعی شعبہ میں مشترکہ منصوبہ سازی کریں: لاہور چیمبر 

  



لاہور(کامرس ڈیسک) لاہور چیمبر کے نائب صدر میاں زاہد جاوید احمد نے چین کے تاجروں پر زور دیا ہے کہ وہ دونوں ممالک کے درمیان تجارت میں توازن لانے کے لیے کردار ادا کریں، پاکستان سے چین کو برآمدات میں اضافہ سے پاکستانی معیشت کو بہت بڑا فائدہ ملے گا۔ انہوں نے ان خیالات کا اظہار چین کے صوبہ شینڈونگ سے تعلق رکھنے والے سرمایہ کاروں، صنعتکاروں اور تاجروں کے بڑے وفد سے گفتگو کرتے ہوئے کیا۔ لاہور چیمبر کے ایگزیکٹو کمیٹی ممبران محمد خالد، حاجی آصف سحر، واصف یوسف، فیاض حیدر اور جنرل (ر) مصطفی کوثر بھی اس موقع پر موجود تھے۔ میاں زاہد جاوید احمد نے کہا کہ دونوں ممالک کے درمیان تجارت کا توازن واضح طور پر چین کے حق میں ہے جسے برابری پر لانے کی ضرورت ہے۔ پاکستانی مصنوعات معیار کے حوالے سے بہترین اور چینی مارکیٹ کی ضروریات پوری کرنے کی صلاحیت رکھتی ہیں، پاکستانی قالین، لیدر مصنوعات، آلات جراحی، کھیلوں کا سامان، پھل، سبزیاں، چاول اور فارماسیوٹیکل سمیت پاکستانی مصنوعات معیار کے حوالے سے بہترین ہیں لہذا چینی درآمد کنندگان کو یہ اشیاء پاکستان سے ترجیحی بنیادوں پر منگوانی چاہئیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان اور چین کے تاجر تعمیرات، ہوٹل، سیاحت، ایس ایم ایز، کمپیوٹر، ٹیکسٹائل، گارمنٹس، کارپوریٹ فارمنگ، سی فوڈ، فوڈ پراسیسنگ، بینکنگ اینڈ فنانس، لائٹ انجینئرنگ وغیرہ کے شعبوں میں مشترکہ منصوبہ سازی کا آغاز کرسکتے ہیں۔ انہوں نے کہا کہ پاکستان بنیادی طور پر ایک زرعی ملک ہے جبکہ چین اس شعبے میں وسیع مہارت رکھتا ہے، اگر اس شعبے میں مشترکہ منصوبہ سازی کی جائے تو اس سے دونوں ممالک کو بہت زیادہ فائدہ ہوگا۔ 

انہوں نے کہا کہ زرعی پیداوار بڑھنے سے نہ صرف مقامی ضرورت پوری ہوگی بلکہ اضافی پیداوار چین کو بھی برآمد کی جاسکے گی۔ 

مزید : کامرس