جیل کے قیدی کے ساتھ شرمناک حرکتیں کرنے والی جیل کی محافظ لڑکی کو سزا

جیل کے قیدی کے ساتھ شرمناک حرکتیں کرنے والی جیل کی محافظ لڑکی کو سزا
جیل کے قیدی کے ساتھ شرمناک حرکتیں کرنے والی جیل کی محافظ لڑکی کو سزا

  



لندن(مانیٹرنگ ڈیسک برطانیہ میں ایک خاتون پولیس آفیسر جیل میں قید خطرناک ڈکیت کے ساتھ ایسی شرمناک حرکات کرتے رنگے ہاتھوں پکڑ گئی کہ اسے بھی پکڑ کر جیل میں ڈال دیا گیا۔ میل آن لائن کے مطابق اس 27سالہ لڑکی کا نام عائشہ گن ہے جوریکس ہیم کی بروائن جیل میں ڈیوٹی کر رہی تھی۔ اسی جیل میں اس کا 29سالہ بوائے فرینڈ خرم رزاق بھی قید تھا۔ اس نے مسلح ڈکیتی کی تھی، جس میں اسے قید کی سزا سنائی گئی۔

عائشہ جیل میں ہی خرم کے ساتھ قابل اعتراض حالت میں پکڑی گئی جس پر اس کے خلاف تحقیقات شروع ہوئیں تو اس میں ہولناک انکشاف سامنے آیا کہ خرم 5ماہ قبل جیل میں قید ہوا اور تب سے عائشہ اور اس کے درمیان تعلق قائم تھا۔ وہ ان پانچ مہینوں میں ایک دوسرے کو 1200فون کالز کر چکے تھے۔ ایک دوسرے کو اپنی سینکڑوں برہنہ ویڈیوز بھیج چکے تھے اور کئی بار جیل میں جنسی تعلق قائم کر چکے تھے۔ حتیٰ کہ کئی بار انہوں نے اپنے جنسی تعلق کی ویڈیو لائیو سٹریم بھی کی۔

وہ اپنے بریزیئر میں چھپا کر اپنے بوائے فرینڈ کے لیے انڈرویئر اور دیگر چیزیں بھی سمگل کرکے جیل کے اندر لیجایا کرتی تھی۔اس نے جیل کے افسران کے واٹس ایپ گروپ کے سکرین شاپ بھی اپنے بوائے فرینڈ کو بھیجے جن میں قیدیوں کی تلاشی کے طریقے اور دیگر چیزیں بتائی گئی تھیں۔ عدالت میں پیش کی گئی ان کی چیٹنگ میں سے ایک میسج میں خرم نے عائشہ کو لکھا تھا کہ میں اگلے ہفتے تک انتظار نہیں کر سکتا۔ کل جب تم جیل آﺅ گی تو ہم وہیں جنسی تعلق قائم کریں گے۔پولیس نے مس کنڈکٹ کے الزام میں عائشہ کو عدالت میں پیش کیا جہاں سے اب اسے 12ماہ قید کی سزا سنا کر جیل بھجوا دیا گیا ہے۔ واضح رہے کہ بروائن جیل نئی تعمیر کی گئی ہے جس میں قیدیوں کے سیلز کو کمرے کہا جاتا ہے۔ اس میں قیدیوں کو لیپ ٹاپ، موبائل فون، انٹرنیٹ، ٹی وی اور دیگر سہولتیں دی گئی ہیں۔

مزید : ڈیلی بائیٹس