اسلام آباد میں خود کش دھماکہ، پولیس اہلکار سمیت دو افراد شہید، متعدد زخمی، کالعدم ٹی ٹی پی نے ذمہ داری قبول کر لی، پنجاب بھر میں سکیورٹی ہائی الرٹ

اسلام آباد میں خود کش دھماکہ، پولیس اہلکار سمیت دو افراد شہید، متعدد زخمی، ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


        اسلام آباد،لاہور(مانیٹرنگ ڈیسک، نیوز ایجنسیاں کرائم رپورٹر)وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے علاقے سیکٹر آئی ٹین میں دھماکے کے نتیجے میں ایک پولیس اہلکار سمیت دو افراد شہید اور متعدد زخمی ہو گئے،دھماکے کے بعد حملہ آورکے اعضا جائے وقوع پر پھیل گئے،دھماکے کی آواز دور دور تک سنی گئی، دھماکے کی شدت کی وجہ سے اطراف کی عمارتوں کے شیشے ٹوٹ گئے۔اسلام آباد پولیس کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا کہ اسلام آباد میں ہائی الرٹ کی وجہ سے چیکنگ چل رہی تھی اور اس دوران پولیس اہلکاروں نے مشکوک گاڑی کو چیکنگ کے لیے روکا۔انہوں نے ٹوئٹر پر جاری بیان میں کہا کہ گاڑی رکتے ہی خود کش بمبار نے خود کو دھماکے سے اڑا لیا اور ابتدائی اطلاعات کے مطابق ہیڈ کانسٹیبل عدیل حسین شہید ہوگئے۔اسلام آباد پولیس کے ڈی آئی جی آپریشنز سہیل ظفر چٹھہ نے میڈیا سے بات کرتے ہوئے بتایا کہ صبح سوا دس بجے ایک مشکوک ٹیکسی آ رہی تھی جس میں ایک مرد اور ایک عورت سوار تھی، پولیس کے ایگل اسکواڈ نے مشکوک سمجھتے ہوئے انہیں روکا اور ان کی تلاشی لی۔انہوں نے کہاکہ ابھی مشکوک افراد کی جامہ تلاشی جاری تھی کہ ایک لمبے بالوں والا لڑکا واپس گاڑی میں آیا اور اس نے گاڑی کو دھماکے سے اڑا دیا جس سے دہشت گردموقع پر ہی ہلاک ہو گئے جبکہ ایک پولیس اہلکار عدیل حسین شہید ہو گیاجبکہ زخمیوں میں اہل کار محمد حنیف، محمد یوسف اور محمد بلال شامل ہیں۔ دھماکے میں 2 شہریوں کے زخمی ہونے کی اطلاعات بھی ہیں بعد میں ایک زخمی بھی دم توڑ گیا۔انہوں نے بتایا کہ دھماکے کے نتیجے میں چار پولیس اہلکار زخمی بھی ہوئے جنہیں ہسپتال منتقل کردیا گیا۔انہوں نے اسلام آباد پولیس کے اہلکاروں کو ان کی بہادی پر خراج تحسین پیش کرتے ہوئے کہا کہ ان اہلکاروں نے دارالحکومت کو بڑی تباہی سے بچا لیا۔انہوں نے کہاکہ ابتدائی تحقیقات کے مطابق گاڑی میں ایک مرد اور ایک عورت سوار تھی جن کے جسم کے اعضا ہم نے اکٹھا کر لیے ہیں۔ڈی آئی جی آپریشنز نے تفصیلات بتاتے ہوئے کہا کہ ہمارے پولیس اہلکار نے گاڑی کا دروازہ کھول کر رکھا ہوا تھا اور ان مشکوک افراد کو گاڑی کے اندر سے جانے سے روک رہا تھا لیکن لمبے بالوں والے شخص نے گاڑی کے اندر مکمل داخل ہوئے بغیر ہی ایک بٹن دبایا جس سے دھماکا ہو گیا۔ایک اور ٹوئٹ میں اسلام آباد ہولیس نے دھماکے کے سبب شہریوں کو متبادل راستہ اختیار کرنے کا مشورہ دیا ہے۔اس سے قبل دھماکے کے بعد قانون نافذ کرنے والے اداروں نے علاقے کو گھیرے میں لے کر تحقیقات شروع کردی تھیں۔دھماکے کے بعد حملہ آورکے اعضا جائے وقوع پر پھیل گئے،دھماکے کی آواز دور دور تک سنی گئی، دھماکے کی شدت کی وجہ سے اطراف کی عمارتوں کے شیشے ٹوٹ گئے۔دریں اثنا ڈائریکٹر پمز خالد محسود نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے بتایا کہ ہنگامی صورت حال میں زخمیوں کی جان بچانے کی کوشش کر رہے ہیں۔ اب تک 10 زخمی ہمارے پاس لائے گئے ہیں جبکہ 2 افراد کی لاشیں ہسپتال منتقل کی گئی ہیں، جن میں ایک پولیس اہلکار اور ایک عام شہری کی لاش ہے۔ انہوں نے کہا کہ پوسٹ مارٹم کا عمل بعد میں دیکھیں گے۔اسلام آباد دھماکے کی ابتدائی تحقیقات مکمل کر لی گئی ہیں، ابتدائی رپورٹ کے مطابق اسلام ا?باد ا?ئی ٹین فور میں ہونے والا دھماکا خودکش تھا، حملہ آور نے خودکش جیکٹ سے دھماکا کیا، خودکش جیکٹ میں تقریباً12 سے 15 کلو بارودی مواد موجود تھا، گاڑی میں مواد نہیں تھا۔دوسری جانب تحریک طالبان پاکستان نے اسلام آباد دھماکے کی ذمہ داری قبول کر لی ہے۔ آئی جی پنجاب عامر ذوالفقار خان نے اسلام ا?باد میں دہشت گردی کے حالیہ واقعہ کے پیش نظر صوبے بھر میں سکیورٹی ہائی الرٹ کرنے کا حکم دے دیا۔آئی جی پنجاب عامر ذوالفقار خان نے صوبائی دارالحکومت لاہورسمیت تمام اضلاع میں حساس و عوامی مقامات کے سکیورٹی انتظامات مزید سخت کرنے کی ہدایت کردی۔آئی جی پنجاب نے تمام اضلاع کے فیلڈ افسران کو سکیورٹی انتظامات پر خصوصی تو جہ دینے جبکہ تمام آر پی اوز اور ڈی پی اوز کو اہم تنصیبات، عبادت گاہوں، ہسپتالوں اور پارکوں سمیت دیگرحساس مقامات کی سکیورٹی بڑھانے کی بھی ہدایت کردی۔اس حوالے سے آئی جی پنجاب عا مر ذ و ا لفقا ر خان نے کہا کہ تمام اضلاع میں سرچ، سویپ اور کومبنگ آپریشنز میں مزید تیزی لائی جائے، جبکہ بین الصوبائی اور بین الاضلائی چیک پوسٹوں پر چیکنگ کا عمل مزید مؤثر بنایا جائے۔آئی جی پنجاب نے اسپیشل بر ا نچ اور سی ٹی ڈی کو بھی انٹیلی جنس بیسڈ آپریشن تیز کرنے کی ہدایت کردی۔وفاقی وزیر داخلہ رانا ثنا اللہ نے کہا ہے کہ بارود سے بھری گاڑی راولپنڈی سے اسلام آباد میں داخل ہوئی جس کا ٹارگٹ ہائی ویلیو تھا۔اسلام آباد دھماکے کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے رانا ثنا اللہ کا کہنا تھا کہ بارود سے بھری گاڑی راولپنڈی سے اسلام آباد میں داخل ہوئی، اسلام آباد پولیس نے فرض شناسی کا شاندار مظاہرہ کیا، تلاشی کے عمل کے دوران خود کش بمبار نے خود کو اڑا لیا۔وزیراعظم شہباز شریف نے اسلام آباد کے سیکٹر آئی 10 فور میں خود کش دھماکے کی شدید مذمت کرتے ہوئے رپورٹ طلب کر لی ہے۔وزیراعظم میاں شہباز شریف نے کہا کہ اسلام آباد پولیس کے شہید ہیڈ کانسٹیبل عدیل حسین کو خراج عقیدت پیش کرتے ہیں، پولیس اہلکاروں نے اپنے لہو کا نذرانہ دے کر دہشت گردوں کو روکا ہے، پوری قوم مل کر دہشت گردی کے خاتمے تک جنگ جاری رکھے گی۔وزیراعظم شہباز شریف نے اسلام آباد میں ہونے والے خودکش دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ پولیس اہلکاروں نے اپنے لہو کا نذرانہ دیکر دہشتگردوں کو روکا۔وزیراعظم شہباز شریف نے اسلام آباد کے علاقے آئی ٹین فور میں ہونے والے خودکش دھماکے کی مذمت کرتے ہوئے وزیر داخلہ اور آئی جی اسلام آباد سے رپورٹ طلب کرلی اور شہید پولیس اہلکار کو شہدا پیکج دینے کی ہدایت بھی کی۔وزیراعظم نے اسلام آباد پولیس کے شہید اہلکار عدیل حسین کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ پولیس اہلکاروں نے اپنے لہو کا نذرانہ دیکر دہشتگردوں کو روکا، قوم اپنے بہادروں کو سلام پیش کرتی ہے۔شہباز شریف کا کہنا تھا پوری قوم مل کر دہشتگردی کے خاتمے تک جنگ جاری رکھے گی، قانون نافذ کرنے والے اداروں کی کارروائی سے بیگناہوں کا خون بہانیکا منصوبہ ناکام ہو گیا، عوام دہشتگردی کے خاتمے کے لیے اپنی فورسز کے ساتھ بھرپور تعاون کریں۔اسلام آباد کے سیکٹر آئی ٹین دھماکے میں استعمال ہونے والی گاڑی کی تفصیلات سیکیورٹی اداروں نے حاصل کرلی۔ سکیورٹی ذرائع کے مطابق دھماکے میں استعمال ہونے والی گاڑی کی نمبر پلیٹ ایل ای آئی 7793 ہے،مہران گاڑی کا ماڈل 89 تھا۔ ذرائع کے مطابق گاڑی آخری مرتبہ 2017 میں چکوال کے سجاد نامی شہری کے نام پر ہوئی۔ترجمان اسلام آباد کیپیٹل پولیس نے کہا ہے کہ اسلام آباد میں سکیورٹی ریڈ الرٹ کر دی گئی ہے،اسلحہ لے کر چلنے کی کسی صورت اجازت نہیں ہے۔ترجمان کے مطابق الیکشن کے حوالے سے کارنر میٹنگز پولیس کی اجازت کے بغیر نہیں ہوگا۔ترجمان کے مطابق الیکشن کی سرگرمیاں اور کارنر میٹنگز کی اجازت چار دیواری کے اندر ہوگی،سیاسی کارکنوں سے گزارش ہے کہ میٹنگز کے دوران سکیورٹی کا مناسب بندوبست کریں،انتخابی امیدواران حفاظتی اقدامات اٹھائیں۔
خود کش دھماکہ

مزید :

صفحہ اول -