جمہوریت پر شب خون مارنے والے گورنر پنجاب کو آئین شکنی کی سزا بھگتنی ہوگی: میاں اسلم اقبال 

جمہوریت پر شب خون مارنے والے گورنر پنجاب کو آئین شکنی کی سزا بھگتنی ہوگی: ...

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


لاہو ر(لیڈی رپورٹر)پاکستان تحریک انصاف کے سینئر رہنما اور رکن پنجاب اسمبلی میاں اسلم اقبال نے کہا ہے کہ آدھی رات کو چوروں کی طرح جمہوریت پر شب خون مارنے والے گورنر پنجاب کو اس آئین شکنی کی سزا بھگتنی ہوگی، یہ نوٹیفکیشن تو ردی کی ٹوکری کا حصہ بن ہی جائے گا مگر تاریخ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم) کے سیاہ کرتوت کبھی نہیں بھلائے گی،اگر 58ٹو بی لگانا تھی تو وفاق میں صدر کو بھی مرکز میں لگانے کا اختیار ہے۔ انہوں نے میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ وزیر اعلی بھی ہیں اور وزیر بھی ہوں۔گرین ایریا ماسٹر پلان میں ہے،فرانس کی فرم نے تیار کیا ہے تیس سالوں میں بڑھتی آبادی کو کیسے بہتر رہائش دینا ہے،پبلک ہیرنگ پر بیٹھنا ہے اگر کسی کو کوئی اعتراض یا تحفظات ہیں وہاں میٹنگ میں بتائے، لاہور کے شہری ہیں گرین ایریا اور آبادی کے مطابق صاف پانی سیوریج ٹریفک مسائل کو بھی حل کرنا ہے۔ میاں اسلم اقبال نے کہاکہ آدھی رات کو جمہوریت پر شب خون غیر آئینی و غیر اخلاقی ہے،پتہ ہے مداری حرام کی کمائی پر کیا کررہاہے، ملک کے اندر جمہوریت ہے مگر آپ نے آمریت والے کام کئے، اگر 58ٹو بی لگانا تھی تو وفاق میں صدر کو بھی مرکز میں لگانے کا اختیار ہے۔میاں اسلم اقبال نے کہا کہ اسمبلی کے اجلاس پر اجلاس نہیں بلایا جا سکتا گورنر پنجاب وفاق کے غیر قانونی اقدامات کو لیکر چل رہے ہیں،گورنر ہاؤس کو سیاسی مرکز بنایا ہے،طرح طرح کے لوگ آ رہے،گورنر پنجاب کو اس آئین شکنی کی سزا بھگتنی ہوگی، یہ نوٹیفکیشن تو ردی کی ٹوکری کا حصہ بن ہی جائے گا مگر تاریخ پاکستان ڈیموکریٹک موومنٹ (پی ڈی ایم)کے سیاہ کرتوت کبھی نہیں بھلائے گی۔اگر شب خون ہی مارنا تھا تو اسمبلیاں بند کردیں،سیدھی طرح کہہ دیں کہ لوگوں کے ووٹوں کا خیال نہیں رکھنا۔ کیوں نہیں لوگوں کو بتا رہے کہ فارن فنڈنگ کیسز ختم کروانے کیلئے آئے  ہیں۔ آپ کی اولاد کا علاج،شاپنگ،جینا مرنا باہر ہے،ملک میں خرید و فروخت کا تماشا لگایا ہوا ہے، دم خم ہوتا تو میدان میں آتے۔ آؤ نا الیکشن میں  تو لگ پتہ جائے گا۔انہوں نے کہا کہ آپ کو کیا تکلیف ہے اگر ہم نے اسمبلی ختم کرنی ہے،آپ کو واضح نظر شکست آ رہی ہے، عوام نے پی ڈی ایم کے ساتھ لوگوں کو مسترد کر دیا ہے کیونکہ عمران خان عام آدمی کی نمائندگی کرتاہے۔ایک سوال کے جواب میں اسلم اقبال نے کہا کہ آئین کو تبدیل،نیب میں تبدیلیاں کر کے گیارہ سو ارب روپے چوروں کا معاف کروایا گیا، پہلے بھی تو دو پارٹیوں کے باعث مارشل لا لگتا رہا،پہلے گندے الزامات لگاتے رہے اب منہ چوم رہے ہیں۔ماؤں بہنوں کا گند اچھالنے والے جمہوریت کی خلاف سازشوں میں لگے ہوئے ہیں۔
میاں اسلم اقبال

مزید :

صفحہ آخر -