مضاربہ سیکنڈلز میں ملوث مفرور ملزمان کو انٹر پول کے ذریعے واپس لایا جائے گا: جسٹس(ر) جاوید اقبال

مضاربہ سیکنڈلز میں ملوث مفرور ملزمان کو انٹر پول کے ذریعے واپس لایا جائے گا: ...
مضاربہ سیکنڈلز میں ملوث مفرور ملزمان کو انٹر پول کے ذریعے واپس لایا جائے گا: جسٹس(ر) جاوید اقبال

  



اسلام آباد(ڈیلی پاکستان  آن لائن )قومی احتساب بیورو کے چئیرمین جسٹس(ر) جاوید اقبال نے کہا ہے کہ ملک سے بدعنوانی کاخاتمہ اور عوام کی لوٹی ہوئی رقم کی واپسی نیب کی اولین ترجیح ہے، نیب نے بدعنوان عناصر سے عوام کی لوٹی ہوئی تقریباََ 328 ارب روپے کی رقم برآمد کرکے قومی خزانے میں جمع کروائی ہے جو ایک ریکارڈ کامیابی ہے،جعلی ہاؤسنگ اور کواپریٹو سوسائٹیوں کے خلاف نیب کی تحقیقات کو قانون کے مطابق منطقی انجام تک پہنچایا جائے گا، نیب نے مفتی احسان مضاربہ مقدمہ معزز احتساب عدالت اسلام آباد میں دائر کیا تھا،معززاحتساب عدالت نے مفتی احسان کومضاربہ کیس میں 10سال کی قیداور9ارب روپے جرمانہ کی سزا سنائی جو کہ نیب کی کارکردگی میں بہتری کا ثبوت ہے،نیب مضاربہ/ مشارکہ سیکنڈلز میں ملوث 45ملزمان کی گرفتاری کے علاوہ بیرون ملک فرار دیگر ملزمان کو انٹر پول کے ذریعےواپس لایا جائے گا۔

ان خیالات کا اظہار قومی احتساب بیورو کے چئیرمین جسٹس جاوید اقبال نے نیب ہیڈ کوارٹرز میں کھلی کچہری کے دوران عوام کی ہاؤسنگ سوسائٹیوں، مضاربہ/مشارکہ سکینڈلز اور دیگر بدعنوانی سے متعلق شکایات کو انتہائی توجہ اور اطمینان کے ساتھ فرداََ فرداََ َ سننے کے بعد کیا۔قومی احتساب بیورو کے چئیرمین  جسٹس(ر) جاوید اقبال نے نیب کے افسران اور اہلکاروں کو ہدایت کی ہے کہ عوام کی بدعنوانی سے متعلق تمام شکایات کو کمپیوٹر ائزڈ کرنے کے علاوہ تمام شکایات کنندگان کو ان کی شکایت کی وصولی کی اطلاع کے علاوہ ان کی شکایات کو قانون کے مطابق منطقی انجام تک پہنچایا جائے اور تمام شکایات کنندہ گان کے ساتھ خوش اخلاقی سے پیش آنے کے علاوہ ان کی عزت نفس کا ہمیشہ خیال رکھا جائے اس سلسلہ میں کوئی کوتاہی برداشت نہیں کی جائے گی۔

مزید : قومی