عمرکوٹ: ٹڈ ی دل کے خاتمے کے لیے ایمرجنسی پلان پر عملدرآمد شروع

عمرکوٹ: ٹڈ ی دل کے خاتمے کے لیے ایمرجنسی پلان پر عملدرآمد شروع
عمرکوٹ: ٹڈ ی دل کے خاتمے کے لیے ایمرجنسی پلان پر عملدرآمد شروع

  



عمرکوٹ ( سید ریحان شبیر) ٹڈ ی دل کے خاتمے کے لیے ایمرجنسی پلان پر عملدرآمد شروع اور ایگریکلچر یونیورسٹی اور دیگر یونیورسٹیوں، شعبہ زراعت کے زیر تعلیم طالب علموں کو والینٹریر طور پر شامل اور ان کو ٹڈی دل کے خاتمے کے حوالے سے تربیت بھی کی جائے گی تاکہ ٹڈی دل کے مختلف علاقوں میں جا کر کسانوں کوقبل وقت زیادہ سے زیادہ ٹڈی دل کے حملوں کے متعلق آگاہی دیں گے اور ایگریکلچر یونیورسٹی کیمپس کو خط ارسال کیا جائے گا، ان خیالات کا اظہا رڈپٹی کمشنر عمرکوٹ ندیم الرحمان میمن نے ڈپٹی کمشنر آفیس کے دربار ہال میں محکمہ ایگریکلچر ایکسٹینشن عمرکوٹ کی جانب سے منعقد کردہ (ٹڈی دل کنٹرول آگاہی) سیمینار سے خطاب کرتے ہوئے کیا۔

اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا ٹڈی دل کے خاتمے کے ایمرجنسی پلان کے تحت ضلع کے چاروں تعلقوں میں فوری طور پر ایمرجنسی سیل اور ٹیلیفون لگائے جارہے ہیں اور ایک واٹس ایپ گروپ بھی بنایا گیااور کوئی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لیے تمام کسان اور زمیندار اس واٹس ایپ گروپ پر مشکلات بتا سکتے ہیں جبکہ چاروں تعلقوں کے لیے کمیٹیاں بھی تشکیل دی گی ہیں جس میں محکمہ زراعت، پلانٹ اینڈ پروٹیکشن اور کسان اس کمیٹی کے ممبر اور اسسٹنٹ کمشنر کمیٹی کے نگران ہونگے۔

انہوں نے کہا 27 سال پہلے 1993-94 میں پہلی مربتہ سندھ میں ٹڈی دل کے حملے ہوئے تھے اور یہ ٹڈی دل یمن اور ایرن سے ہجرت کرکے بلوچستا ن کے راستے صوبے سندھ میں داخل ہوئی تھی جس کے خلاف مکمل آپریشن کر کے ٹڈی دل کا خاتمہ کیا گیا،انہوں نے کہا کہ پچھلے سال کم آگاہی کی وجہ سے جو بھی نقصانات ہوئے اس کا ازالہ اس سال اور تمام انتظامات اس سلسلے میں پہلے ہی مکمل کر لیے ہیں اور وفاقی حکومت اور سندھ حکومت اور خاص طور پر پاکستان آرمی ٹڈی دل سے متعلق کسی بھی ہنگامی صورتحال سے نمٹنے کے لیے اپنا کردار ادا کرئے گی،انہوں نے کہا اس دفعہ جو بھرپور اور ترجیحاتی بنیاد پر تیاری کی ہے اس میں ہمارا خاص توجہ صحرائے تھر کے علائقوں میں رکھی گی ہے، انہوں نے کہا وفاقی او ر سندھ حکومت نے ٹڈی دل کے خاتمے اور سپرے کے لیے 4 جہاز خریدنے کا چائنہ سے معاہدہ اور ٹڈی دل کی افریش کو روکنے کے لیے کیڑا مار ادویات اور سپرے کے آلات ہنگامی بنیاد کر خریدنے کا فیصلہ کیا گیا ہے اور کسی بھی ہنگاہی صورتحال سے نمٹنے کے لیے سندھ حکومت کے پاس ٹیکنیکل آلات موجود ہیں۔

انہوں نے کہا کہ ایک وفاقی حکومت کی رپورٹ کے مطابق پاکستان کی فصلوں پر ٹڈی دل کے حملے کی وجوہات تلاش کرنے میں کامیابی ہوئی ہے اور اب تک رپورٹ کے مطابق پاکستان کا 38فیصد رقبہ ٹڈی دل کی افزائش گاہ بن چکا ہے جس میں بلوچستان کا 60 فیصد، سندھ 25 فیصداور پنجاب کا 15  فیصد شامل ہے،انہوں نے کہا پلانٹ پروٹیکشن ڈیپارٹمنٹ پاکستان، محکمہ زراعت اورپی آر سی نے اپنی رپورٹ میں ضلع عمرکوٹ اور ضلع تھرپارکرو مٹھی میں ٹڈی دل کی عدم موجودگی کی رپورٹ وفاقی حکومت اور سندھ حکومت کو ارسال کی جائے گی۔ اجلا س میں پاکستان آرمی چھور کینٹ عمرکوٹ کیپٹن ارسلان، نائب صوبیدار اجمل،ڈپٹی ڈائریکٹر محکمہ زراعت حسین بخش، وائس چیرمین ضلع کاؤنسل حاجی بقا پلی، ڈپٹی ڈائریکٹر اطلاعات شہزاد احمد شیخ، ڈی او تعلیم، زمیندار وں اور مختلف محکموں کے افسران نے شرکت کی۔

مزید : علاقائی /سندھ /عمرکوٹ