شبقدر، سینئر ڈاکٹر ظہیراللہ مہمند کی برطرفی کیخلاف احتجاجی مظاہرہ 

شبقدر، سینئر ڈاکٹر ظہیراللہ مہمند کی برطرفی کیخلاف احتجاجی مظاہرہ 

  

شبقدر (نمائندہ خصوصی)تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال شبقدر کے سینئیر ڈاکٹر ظہیر اللہ مہمند کی برطرفی کے خلاف شبقدر بازار میں احتجاجی مظاہرہ۔ مظاہرین نے  صوبائی حکومت اور محکمہ صحت کے اعلی  سے برطرف ڈاکٹر کی بحالی کا مطالبہ کیا  تحصیل شبقدر بازار ختم نبوت چوک  میں سماجی تنظیموں کے زیراہتمام احتجاجی مظاہرہ ہوا   مظاہرے میں جماعت اسلامی جمعیت علما اسلام قومی وطن پارٹی عوامی نیشنل پارٹی اور علاقہ مشران نے شرکت کی۔  سماجی تنظیموں اور سیاسی جماعتوں کے عہدیداروں ملک ملتان خان ۔ ملک نوید مہمند۔ رحمت علی مہمند عارف احسان۔ فخر عالم خان۔ ملک فیصل مہمند۔ ملک روح الامین جماعت اسلامی کے تجلی نور نے خطاب کرتے ہوئے کہا کہ تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال شبقدر کے سب سے سینیر اور قابل ڈاکٹر ظہیر اللہ مہمند کو صوبائی حکومت نے گزشتہ ہفتہ برطرف کرکے نا انصافی کی ہیں مقررین نے کہا کہ ڈھائی سال قبل قبائلی ضلع مہمند کی تحصیل یکہ غنڈ میں رات کے وقت سات سالہ بچی سانپ نے ڈسہ تھا جس کو علاج کے لیے 12بجے کے بعد شبقدر ہسپتال لایآ گیا شبقدر ہسپتال میں ویکسین دستیاب نہ ہونے کے باعث زخمی بچی کو پشاور منتقل کیا گیا جہاں وہ جان بحق ہو گئی مقررین نے کہا کہ ڈھائی سال بعد صوبائی حکومت نے تحصیل ہیڈ کوارٹر ہسپتال شبقدر کے اس وقت کے ایم ایس ڈاکٹر ظہیر اللہ مہمند کو برطرف کرکے نا انصافی کا فیصلہ کیا مظاہرین نے ڈاکٹر ظہیر اللہ مہمند کو  زبردست الفاظ میں خراج تحسین پیش کرتیہوئے کہا کہ ڈاکٹر ظہیر اللہ مہمند گزشتہ تیس سالوں سے طب کے شعبے سے وابستہ صوبہ خیبر پختون خوا  کے مختلف سرکاری ہسپتالوں میں ایمانداری اور اچھے اخلاق کیساتھ انسانیت کی خدمت کر رہے ہیں مظاہرین نے صوبائی حکومت اور محکمہ صحت کے اعلی حکام سے پر زور مطالبہ کرتے ہوئے کہا کہ ٹی ایچ کیو ہسپتال شبقدر کے برطرف ڈاکٹر ظہیر اللہ مہمند کو باعزت طور پر اپنی ڈیوٹی پر بحال کیا جائیبصورت دیگر احتجاجی مظاہرے اور دھرنے شروع کرینگے

مزید :

پشاورصفحہ آخر -