اپنے تحفظات سے وزیر اعلیٰ کو تحریری طور پر آگا ہ کیا تھا: لیاقت خٹک 

اپنے تحفظات سے وزیر اعلیٰ کو تحریری طور پر آگا ہ کیا تھا: لیاقت خٹک 

  

نوشہرہ(بیورورپورٹ)سابق صوبای وزیرو ایم پی اے پرویز خٹک کے بھای لیاقت خٹک نے کہا ہے کہ ایریگیشن وزیر میں تھا اورمحکمے میں پوسٹنگ ٹرانسفرکے اختیارات سمیت حلقے میں ترقیاتی فنڈز کے استعمال کا اختیار غیر منتخب لوگوں کے پاس تھا مجھے گذشتہ کی ماہ سے نظرانداز کیا جاتا رہا میں چپ رہا اپنے تحفظات سے وزیر اعلی محمود خان کو تحریری طور پر آگاہ کیا تھا اور وزیر اعظم سے ملاقات کی خواہش ظاہر کی کل بھی پارٹی وفادار تھا اور آج بھی ہوں اور وفادار رہوں گا پرویز خٹک میرا بھای ہے انکی عزت کرتا ہوں پارٹی میں رہ کر اپنی اختلاف راے کے ساتھ پی ٹی آی کے ایک کارکن کی حیثیت سے خدمات سرانجام دوں گا ان خیالات کا اظہار انہوں نے سابق ایم پی اے پرویز احمد خان کی رہاشگاہ نوشہرہ کینٹ میں ایک پرہجوم پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوے کیا اس موقع پر پرویز احمد خان۔سابق ناظمین عبدالرحمان طفیل محمد۔ ماہر الدین ملکی امان معتصم بااللہ علی خان  مدثر شاہ ضلعی کونسلرز قاضی واجد الحق بھی موجود تھے لیاقت خٹک نے مزید کہا کہ چیرمین سینٹ سنجرانی اورسپیکر قومی اسمبلی نے راضی نامے کیلیے کوشش کی لیکن وہ اپنی نیک کوشش میں کامیابی حاصل کرنے میں ناکام رہے انہوں نے کہا کہ پرویز خٹک میرا بھای ہے اور میں انکی عزت کرتا  ہوں وہ ایک بے داغ شخصیت کے مالک ہیں لیکن ان کے اردگرد چندمفاد پرست اور سازشی عناصر بیٹھے یوے ہیں جس کی وجہ سے پی ٹی آی اختلافات کی شکار ہوکر ضمنی انتخابات میں شکست کی وجہ بنی میں اپنے بیٹے احد کو ضمنی انتخابات میں پی کے 63پرصوبای اسمبلی کے لیے کھڑا کرنے کی خواہش ظاہر نہیں کی تھی صوبای ترجمان کی اس بات میں کسی قسم کی کوی صداقت نہیں میرا بیٹا تحصیل کونسل نوشہرہ کا الیکشن لڑے گا اور ڈنکے کی چوٹ پر لڑے گا انہوں نے مزید کہا کہ نوشہرہ کے سابق ناظمین۔ضلعی کونسلرز پی ٹی آی حکومت کی پالیسیوں کی وجہ سے ناراض تھے اور اسی ناراضگی کی وجہ سے انہوں نے پی ٹی آی کے خلاف اپنا ووٹ ڈال دیا  جو ضمنی انتخابات میں شکست کی وجہ بنی اگر پی ٹی آی پھر سے متحد ہوی تو کوی مای کا لعل پی ٹی آی کو شکست نہیں دے سکتا۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -