آمدن سے زائد اثاثے  حمزہ شہباز کی درخواست ضمانت پرسماعت آج دوبارہ ہوگی

آمدن سے زائد اثاثے  حمزہ شہباز کی درخواست ضمانت پرسماعت آج دوبارہ ہوگی

  

لاہور(نامہ نگار)اہور ہائی کورٹ نے آمدنی سے زائد اثاثے کیس میں حمزہ شہباز کی درخواست ضمانت پر نیب کے وکیل کو دلائل مکمل کرنے کی ہدایت کر تے ہوئے سماعت آج24فروری تک ملتوی کردی،دوران سماعت فاضل بنچ نے ریمارکس دیئے کہ حمزہ شہباز کواگر چھوڑ دیا جائے تو کیا پھر بھی ٹرائل ایک سال میں مکمل ہو گا؟مسٹرجسٹس سردار سرفراز ڈوگر اورمسٹرجسٹس اسجد جاوید گھرال پرمشتمل ڈویژن بنچ نے حمزہ شہباز کی منی لانڈرنگ کیس میں  درخواست ضمانت پر سماعت کی،حمزہ شہباز کے وکیل امجد پرویز نے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ حمزہ شہباز کو قید ہوئے 20 ماہ ہو گئے ہیں،اب بھی ٹرائل مکمل ہونے میں ایک سال تک لگ سکتا ہے،حمزہ شہباز کی گرفتاری کے 17ماہ بعد فرد جرم عائد کی گئی، سپریم کورٹ 20 ماہ کی تاخیر کرنے پر نیب کے مقدمات میں ملزموں کو ریلیف دے چکی ہے، جسٹس سردار سرفراز ڈوگر نے دوران سماعت کہا کہ ظلم بھی ہو امن بھی ہو، کیا یہ ممکن ہے تم ہی کہو، فاضل جج کے ان ریمارکس پر کمرہ عدالت میں قہقہہ بلند ہوا، نیب کے وکیل نے عدالت کوبتایا کہ ریفرنس میں 10ملزم ہیں جن میں سے 8پیش ہوئے ہیں، اس لئے ریفرنس کی سماعت میں وقت لگا، غیرملکی رقوم اور مشکوک ٹرازیکشنز کی تحقیقات اور شواہد اکٹھا کرنے کی وجہ سے وقت لگا، نیب کے وکیل نے مزیدبتایا کہ 13 کمپنیوں کی تحقیقات کیں اور 55  والیمز پر مشتمل ریفرنس بنایا ہے، شواہد اکٹھے کرنے میں وقت لگتا ہے،اگر ملزمان تعاون کریں تو 6 ماہ میں ریفرنس کا ٹرائل مکمل کرسکتے ہیں، عدالت نے ریمارکس دیئے کہ انھیں چھوڑ دیا جائے تو کیا پھر بھی ٹرائل ایک سال میں مکمل ہو گا،فاضل جج نے نیب کے پراسیکیوٹرسے استفسارکیا کہ آپ کو کتنا وقت چاہیے،نیب کے پراسیکیوٹر سید فیصل رضا بخاری نے کہا کہ اگر ملزم کے وکلاء نے دلائل مکمل کر لئے ہیں تو میں آدھا گھنٹہ لوں گا، فاضل بنچ نے بالاریمارکس کے ساتھ مزید سماعت آج تک ملتوی کردی۔

سماعت ملتوی

مزید :

علاقائی -