افغان حکومت نے امریکی فوج کی حمایت والے اخبا ری اور ٹی وی اشتہارات بند کر دیئے

افغان حکومت نے امریکی فوج کی حمایت والے اخبا ری اور ٹی وی اشتہارات بند کر ...

 کا بل (آن لائن) افغان حکومت جس کے واشنگٹن حکومت کے ساتھ تعلقات خراب جا رہے ہیں، ایسے اشتہارات کے خلاف مہم چلا رکھی ہے، جن میں 2014ءکے بعد بھی امریکی فوجی دستوں کی ملک میں موجودگی کی تائید و حمایت کی جاتی ہے۔ بر طا نو ی خبر رسا ں ادارے کے مطا بق کابل حکومت ایسے ہی ایک اشتہار کو، جو ملک کے سب سے زیادہ دیکھے جانے والے چینلز پر چل رہا تھا، بند بھی کر چکی ہے۔کابل حکومت جن اشتہارات کے خلاف کارروائی کر رہی ہے، ا±ن میں سے چند ایک کے لیے مالی وسائل ایک امریکی تنظیم نے فراہم کیے ہیں۔

کابل حکومت ان اشتہارات کو اس بناءپر ہدفِ تنقید بنا رہی ہے کیونکہ ان میں صدر حامد کرزئی پر امریکا کے ساتھ طے پانے والے ا±س سکیورٹی معاہدے پر دستخطوں سے انکار کا رویہ ترک کر دینے کے لیے زور دیا جاتا ہے، جس کے نتیجے میں امریکی فوجی دستوں کو رواں سال ختم ہو جانے کے بعد بھی افغانستان میں رہنے کی اجازت مل جائے گی۔جو چینل گزشتہ کئی ہفتوں سے ایسے اشتہارات نشر کر رہے ہیں، ا±نہیں اس جواز پر تحقیقات کا نشانہ بنایا جا رہا ہے کہ ا±ن کے مالی وسائل کے ذرائع غیر واضح ہیں۔ اب ان تمام چینلز نے یہ اشتہارات دکھانا بند کر دیے ہیں۔افغانستان میں 2001ءمیں طالبان کی اقتدار سے بے دخلی کے بعد سے تقریباً ایک ہزار نئے اخبارات منظر عام پر آئے ہیںنیوز ایجنسی سے گفتگو کرتے ہوئے اٹارنی جنرل کے ایک ترجمان باصر عزیزی نے کہا کہ ہم نے ان چینلز کے خلاف ایک انکوائری شروع کی ہے، یہ پتہ چلانے کے لیے کہ انہیں اس طرح کے اشتہارات کے لیے پسہ کہاں سے ملتا ہے‘۔ان اشتہارات میں عام افغان شہریوں کے ساتھ ایسے انٹرویز دکھائے جاتے ہیں، جن میں وہ کرزئی پر یہ زور دیتے ہیں کہ وہ اِس دو طرفہ معاہدے پر فوری طور پر دستخط کر دیں۔ایک اشتہار میں ایک ثقافتی تنظیم کا سربراہ صدر سے مخاطب ہو کر کہتا ہے، ’آپ کو لوگوں کا مطالبہ مان لینا چاہیے اور جتنی جلد ہو سکے، اس معاہدے پر دستخط ثبت کر دینے چاہئیں۔ ان اشتہارات کے خلاف مہم واشنگٹن کی جانب کرزئی کے معاندانہ رویے کی تازہ ترین مثال ہیں۔ گزشتہ ہفتے ا±نہوں نے ایک ریستوران پر ہونے والے ایک خونریز حملے کا حوالہ دیتے ہوئے امریکا پر الزام لگایا تھا کہ دہشت گردی کے خلاف ا±س کے اقدامات ناکافی ہیں۔افغانستان میں ذرائع ابلاغ سے متعلق ایک تنظیم NAI نے کہا ہے کہ نشریاتی اداروں پر ڈالا جانے والا دباو¿ افغانستان میں ایک آزاد میڈیا کی تشکیل کی کوششوں میں خلل ڈال رہا ہے۔ روئٹرز سے باتیں کرتے ہوئے اس تنظیم کے ڈائریکٹر جنرل مجیب خلوت گر نے کہا، ’حکومت کی جانب سے اس طرح کے اقدامات اظہارِ رائے کی آزادی کو محدود بنانے کی ایک واضح کوشش ہیں اور میڈیا کے شعبے میں ہونے والی پیشرفت کو خطرے سے دوچار کر رہے ہیں‘۔کابل حکومت کے اعداد و شمار کے مطابق 2001ءمیں طالبان کی حکومت کے خاتمے کے بعد سے ملک میں پچاس سے زیادہ پرائیویٹ ٹیلی وژن چینل، 150 ریڈیو چینلز جبکہ تقریباً ایک ہزار اخبارات منظر عام پر آئے ہیں۔ان نشریاتی اداروں کے مطابق ا±نہیں پتہ تھا کہ ان اشتہاروں کے لیے پیسہ ایساف یا ا±ن سے متعلقہ گروپوں نے فراہم کیا تھا لیکن یہ کہ وہ ’پبلک سروس‘ ایڈورٹائزنگ کو آمدنی کے ایک ذریعے کے طور پر دیکھتے تھے۔افغانستان کے سب سے مقبول ٹی وی چینل ’تولو ٹی وی‘ کے چینل منیجر مسعود سنجر نے بتایا کہ ’اشتہار BSA سے متعلق ہو یا پھر منرل واٹر کی کسی بوتل کا، ا±ن پر ایک ہی طرح کے قواعد و ضوابط کا اطلاق ہوتا ہے‘۔ مسعود سنجر کے مطابق چوبیس گھنٹوں میں مختلف اوقات میں اشتہار دکھانے کے لیے سات سو تا ایک ہزار ڈالر فی منٹ کے حساب سے معاوضہ ملتا ہے۔’تولو ٹی وی‘ کے مطابق یہ اشتہارات ایڈز ولیج نامی ایک کمپنی کی طرف سے فراہم کیے گئے تھے، جس کے عہدیداروں نے یہ تسلیم کیا تھا کہ ان کے لیے فنڈز ایساف یا پھر امریکا کی امدادی ایجنسی یو ایس ایڈ کی جانب سے فراہم کیے گئے تھے۔اس سلسلے میں جب ایساف کے ساتھ رابطہ کیا گیا تو وہاں کے متعلقہ کارکنوں نے یہ بتانے سے انکار کر دیا کہ وہ اشتہارات پر کتنا پیسہ خرچ کرتے ہیں، ’پبلک کے لیے جاری کی جانے والی معلومات کا مقصد عوام کی تعلیم و تربیت کے ساتھ ساتھ یہ بھی ہوتا ہے کہ عوام کو ایساف اور افغان نیشنل سکیورٹی فورسز میں ہمارے پارٹنرز کے مشن اور آپریشنز کے بارے میں معلومات مہیاءکی جائیں‘۔

مزید : عالمی منظر