پہلی پاکستان ہارٹی ایکسپو2018ء

پہلی پاکستان ہارٹی ایکسپو2018ء
 پہلی پاکستان ہارٹی ایکسپو2018ء

  

شعبہ ہارٹیکلچر کو مقامی سطح پر ترقی دینے کے لئے تمام ضروری اقدامات اٹھانے کے بعد اب وزیر اعلیٰ پنجاب کی ہدایت پر محکمہ زراعت پنجاب کی طرف سے ہارٹیکلچر کراپس اور ان کی مصنوعات کے بین الاقوامی سطح پر فروغ اور اس کی مارکیٹ کی ترویج کے بنیادی مقاصد کے تحت لاہور میں ایک بین الاقوامی نمائش منعقد کی گئی۔

اس انٹرنیشنل ہارٹیکلچر ایکسپو 2018ء کا انعقاد سرمایہ کاری برائے خوشحالی کے سنہری موقع کے عنوان کے تحت مورخہ13 اور 14 جنوری 2018ء کو ایکسپو سنٹر جوہر ٹاؤن لاہورمیں عمل میں لایا گیا۔پاکستان ہارٹی ایکسپو 2018ء کا افتتاح گورنر پنجاب ملک محمد رفیق رجوانہ نے کیا اور اس موقع پر محمد محمود سیکرٹری زراعت پنجاب بھی ان کے ہمراہ تھے۔

اسٹیبلشمنٹ آف ماڈل فارمز پراجیکٹ کے تحت اس ٹریڈ کانفرنس کو بجا طور پرپاکستانی قوم کی ہارٹیکلچر کمیونٹی کو متحدہ و مشترکہ پلیٹ فارم مہیا کرنے کے لئے اپنی نوعیت کا پہلا بی ٹو بی ایونٹ قرار دیا گیاہے۔

اس نمائش سے کاشتکاروں، ملکی و بین الاقوامی کمپنیوں، پروسیسرز، درآمد اور برآمد کنندگان کے لئے قومی و بین الاقوامی سطح پر رابطہ کاری کے وسیع مواقع کی فراہمی کے علاوہ عالمی مارکیٹوں میں برآمد کے ذریعے پاکستانی ہارٹیکلچر مصنوعات کی ترقی، بہتری اور فروغ و ترویج کے امکانات کے لئے مواقع پیدا ہوگئے ہیں۔

نمائش کے اغراض و مقاصد میں بیرون ملک برآمد کی صورت میں ہارٹیکلچر بزنس کے لئے وطن عزیز کا بطور منافع بخش سرمایہ کاری کی جنت تعارف یقینی بنانے کے علاوہ ترقی پسندانہ سوچ کے حامل اسٹیک ہولڈرز کے مابین ہارٹیکلچر ٹریڈ کے خوشحال مستقبل بارے بامعنی و نتیجہ خیز ڈائیلاگ کا آغازجیسے اقدامات بھی شامل رہے۔

پاکستان ہارٹی ایکسپو 2018ء میں 16غیر ملکی کمپنیوں نے سٹال لگائے اور 40سے زیادہ ملکوں کے ماہرین نے شرکت کی ،جبکہ پاکستان ہارٹی ایکسپو 2018ء میں لگائے سٹالز کی تعداد 100 سے زائد تھی۔ایکسپو کے ٹارگٹ گروپس میں درآمد و برآمد کنندگان، کاشتکار ، ہول سیلرز، ڈسٹری بیوٹرز، ریٹیلرز، اِ ن پُٹ سپلائرز، ایسوسی ایٹس اور فنانشل انسٹی ٹیوشنز جیسے افراد اور ادارے شامل رہے۔

پاکستان ہارٹیکلچر ایکسپو 2018ء کے دوران تازہ پھل و سبزیاں، پھول، پودے، تازہ کٹی ہوئی باسہولت مصنوعات، بدیسی مصنوعات، آرگینک مصنوعات، خشک میوہ جات/ سبزیات/ پھول کے علاوہ محفوظ کردہ (Processed) پھل و سبزیوں جیسی ویلیو ایڈڈ مصنوعات سمیت جڑی بوٹیاں،مصالحہ جات، پیکیجنگ میٹریل، ٹرانسپورٹ/ لاجسٹک، فارم مشینری، پراسسنگ مشینری، بیج/پلانٹنگ میٹریل، کھاد/ جراثیم کش و کیڑے مار ادویات، جدید نظام آبپاشی، سٹوریج / ری سائیکلنگ، کوالٹی کنٹرول کے علاوہ مارکیٹنگ / مارکیٹ ریسرچ، مشاورت، تیکنیکی خدمات جیسے امور اور کھیتی باڑی کے جدید طریقہ ہائے کار بارے وزیٹرز/ حاضرین کو معلومات ملیں۔

ایکسپو میں پیش کی گئی چند قابلِ ذکر اور ملکی سطح پر دستیاب اہم مصنوعات و جدید سہولیات میں پھلوں کا بادشاہ آم بطورہارٹی ویلیو ایڈیشن، جبکہ فخرِ پاکستان کینوبحیثیت ہارٹی فریش اور زراعت میں ڈرون ٹیکنالوجی کا استعمال بحیثیت ہارٹی ٹیک جیسی تعارفی اشیاء بھی شامل کی گئیں۔

زراعت و ہارٹیکلچر کے شعبہ جات میں فروغِ پیداوار و برآمدات کے لئے دیرپا و پائیدار حکمت عملی کی تیاری اورمذکورہ ایکسپو کی سرگرمیوں کے دوران ملکی و عالمی حالات کے مطابق تمام لوازمات اور ضروریات امور کو پیشِ نظر رکھا گیا۔

درست طور پریہ سمجھا جا رہا ہے کہ ایک ایسی صورت حال میں جب بین الاقوامی مارکیٹ شعبۂ ہارٹیکلچر میں اُتار چڑھاؤکا شکار ہے تو پاکستان ہارٹی ایکسپو 2018ء اس میدان میں زرخیز اور زرعی جنت کی شہرت رکھنے والے پاکستان جیسے ملک کے لئے بین الاقوامی مارکیٹ میں شراکتِ کارسمیت کاروباری مواقع کی دستیابی کے علاوہ بھی بہت کچھ حاصل کرنے کا موقع ثابت ہوئی، مزیدبرآں ہم اس سنہری موقع سے فائدہ اٹھاتے ہوئے ہارٹیکلچر جیسے منافع بخش شعبے کی پیداوارمیں تیزرفتار ترقی کے ساتھ ساتھ اس شعبے میں نت نئی مفید طلب اختراعات کی بنیاد رکھنے میں کامیاب ہوسکتے ہیں۔

سرمایہ کاری برائے خوشحالی کے وژن کے تحت منعقد ہ پاکستان ہارٹی ایکسپو بی ٹو بی مشن کے نتیجے میں شعبہ ہارٹیکلچرمیں ملکی تجارت کے فروغ اور استحکام کا سنہری موقع ثابت ہوئی اور یہ ایونٹ کاشتکاروں، پراسییسرز اور برآمد کنندگان الغرض تمام اسٹیک ہولڈرز کے لئے ملکی و بین الاقوامی سطح پر مضبوط و دیرپا منافع بخش روابطِ کار کی استواری کی صورت میں ترقی و خوشحالی کے نئے راستے ہموار کرنے کا ذریعہ بنا ہے ۔

محکمہ زراعت نے ہارٹیکلچر سے متعلق بہت سے امورکے دیرپا حل کے لئے ون سٹاپ سلوشن کے طور پرماڈل بھی ڈیزائن کیا ،جبکہ پاکستان ہارٹی ایکسپوکی ایک انفرادیت یہ بھی ہے کہ یہ ایونٹ تازہ اور محفوظ کردہ (Processed) پھلوں اور سبزیوں کی عالمی سطح پر تجارت اور تعارف کی صورت میں ملک کے سب سے بڑے صوبہ پنجاب کی معیشت میں جوہری تبدیلی کا ذریعہ ثابت ہوگا۔

اپنی نوعیت کا یہ منفرد ایونٹ ایک بااعتماد و پُرسکون ماحول میں ہارٹیکلچر مصنوعات و خدمات کی تشہیر اور ترویج سمیت اسٹیک ہولڈرز کے درمیان بین الاقوامی مسابقت کا منفرد موقع فراہم کر نے کے ساتھ ساتھ وسیع پیمانے پر ارینج کی گئی۔ میڈیا کوریج اور شاندار نمائش کاری کے ذریعے ان مصنوعات و خدمات کی بین الاقوامی سطح پرفروغ کی یقینی ضمانت ہے۔

علاوہ ازیں قومی و بین الاقوامی شہرت کی حامل ترقی پسند کاروباری برادری کے ساتھ بی ٹو بی اوربی ٹو سی روابط کاری کے ذریعے منافع بخش برآمدی تجارت کے فروغ سمیت بین الاقوامی اسٹیک ہولڈرز اور کمپنیز کو پاکستان کے شعبۂ ہارٹیکلچر میں منافع بخش سرمایہ کاری کے امکانات بارے براہِ راست جانکاری کے مواقع بھی میسر آئے گے، جبکہ بزنس کمیونیٹی کو بین الاقوامی نوعیت کے اس گرینڈ ایونٹ کی صورت میں نمائش کے لئے آئے ہوئے کثیر تعداد میں ملکی و عالمی اسٹیک ہولڈرز کے سامنے پاکستان کی وسیع پیمانے پرمؤثر نمائندگی کے منفرد موقع سے فائدہ اٹھانے کی سہولت بھی میسر آئی۔

اس پریمیر ایونٹ میں حاضری و نمائش کے ذریعے مارکیٹ میں مضبوطی و استحکام اورمؤثر کارپوریٹ امیج کی تعمیر کا موقع ملا،جبکہ پبلسٹی اوربزنس پروموشن کے لامحدود مواقع کی دستیابی اورغیر ملکی بزنس کمیونٹی کی وسیع پیمانے پر شرکت کی وجہ سے بین الاقوامی سطح پرنئے و کارآمد کاروباری تعلقات کی استواری کے امکانات کو اس ایونٹ کے اضافی فائدوں میں شمار کیا جا سکتا ہے ۔

مزید : رائے /کالم