سابق وزیر ناصر بیگ مسلم لیگ (ن) چھوڑ کر واپس پیپلز پارٹی میں شامل

سابق وزیر ناصر بیگ مسلم لیگ (ن) چھوڑ کر واپس پیپلز پارٹی میں شامل

کوشش تو یہ تھی کہ مسلم لیگ ن کی حکومت کیخلاف تمام سیاسی جماعتیں ایک ایسا اتحاد بنا لیں جو آئندہ انتخابات تک قائم رہے اور یوں ن لیگ کو کم از کم پنجاب میں شکست دینے میں کامیاب ہوجائے مگر کسی سیاسی عمل میں بھی ایسا نہیں ہوتا کہ جیسا سوچا جائے ویسا بھی ہوجائے لاہور میں اپوزیشن کے اتحاد میں بھی پھر کچھ ہوا اور ایک غلطی نے تمام سیاسی کس بل نکال دیئے اور اب پوزیشن یہ ہے کہ کل کے سیاسی حلیف بننے کی کوشش کرنے والے آج اس بات پر سیخ پا ہیں کہ پارلیمنٹ کو گالی دی ویسے دیکھا جائے تو بات بھی درست ہی ہے کہ جس پارلیمنٹ کے آپ رکن ہیں اور آپ اس کو گالیاں بھی نکال رہے ہوں بات سمجھ سے بالاتر ہے پھر سیاسی سوجھ بوجھ کا فقدان ہے اور جذبات زیادہ ہیں اب اس کا انجام کیا ہوگا یہ تو عام انتخابات سے قبل نظر آنے ہی لگا ہے دیکھیئے اب سیاست کا اونٹ مزید کس کروٹ بیٹھتا ہے تاہم دوسری طرف پیپلز پارٹی کے ناراض وفاقی وزیر مرزا ناصر بیگ نے ایک مرتبہ پھر سابقہ پارٹی میں شامل ہونے کا اعلان کرکے لودھراں پیپلز پارٹی کا ٹکٹ حاصل کرلیا انہوں نے پیپلز پارٹی میں شمولیت کا اعلان گیلانی ہاؤس ملتان میں پریس کانفرنس کرکے کیا جس میں سینئر نائب صدر خواجہ رضوان عالم ، جنرل سیکرٹری نتاشہ دولتانہ ، فیڈرل کونسل کے رکن عبدالقادر شاہین ، سید علی حیدر گیلانی اور دیگر رہنما بھی موجود تھے ۔ واضح رہے کہ لودھراں کے حلقہ این اے 154سے اب مرزا ناصر بیگ کے صاحبزادے علی بیگ پیپلزپارٹی کے امیدوار ہونگے جن کا مقابلہ تحریک انصاف اور مسلم لیگ ن سے ہوگا ۔ اس حوالے سے پریس کانفرنس میں مرزا ناصر بیگ نے کہا ہے کہ میں نے (ن) لیگ کو خیر باد کہہ دیا ہے ۔ ہم سکول کے زمانہ سے پیپلز پارٹی میں تھے ۔ پارٹی میں گرم، سرد حالات کا مقابلہ کیا ۔ ذوالفقار علی بھٹو اور محترمہ بینظیر بھٹو کی شہادت قربانیاں دیں ۔ میرا ایمان ہے کہ پیپلز پارٹی نہ تو ختم ہوئی ہے اورنہ ہوسکتی ہے۔ انشاء اللہ پیپلز پارٹی آئندہ الیکشن میں کامیاب ہوگی۔اس موقع پر یوسف رضا گیلانی اور مخدوم احمد محمود نے مرزا ناصر بیگ اور مرزا علی بیگ کی پیپلز پارٹی میں واپسی کا خیر مقدم کیا اور کہا کہ ہمیں خوشی ہے کہ وہ اپنے گھر میں واپس آگئے ہیں۔ ادھر پیپلز پارٹی کے ضلعی صدر کامران عبداللہ مڑل ، جنرل سیکرٹری راؤ ساجد علی ، سٹی صدر ملک نسیم لابر ، جنرل سیکرٹری اے ڈی بلوچ، ڈویژنل جنرل سیکرٹری ڈاکٹر جاوید صدیقی ، ایم سلیم راجہ ، چودھری یٰسین ، ریاض رضا ، رئیس قریشی ، خواجہ عمران ، عثمان بھٹی ، سحرش خان ، صائمہ ، شگفتہ حبیب ، شاہینہ طلعت ، رافیہ رفیق ، شہناز لودھی ، کلثوم ناز، شگفتہ حسین ، حاجراں بی بی ، محمود حیات ٹوچی خان ، نواز پیرازادہ ، ملک سجاد حسین سمیت دیگر رہنما بھی موجود تھے۔ واضح رہے کہ پریس کانفرنس کے بعد این اے 154سے مرزا علی ناصر بیگ کو ٹکٹ جاری کردیا گیا ہے ۔ اس موقع پر سابق وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی نے کہا کہ امریکہ ، بھارت کو پاکستان پر ترجیح نہ دے۔ بھارت ، اسرائیل گٹھ جوڑ خطرناک ہے ، سی پیک، گوادر سب کوکھٹکتاہے امریکہ کے ساتھ باہمی تعلقات بڑھنا اور غلط فہمیاں دور کرنا حکومت پاکستان کی ذمہ داری ہے۔ کیونکہ پاکستان کیلئے ابھی خطرات موجود ہیں ۔ ہم دہشت گردی کے خلاف امریکہ کے ساتھ ملکر لڑرہے ہیں ۔ اپوزیشن جماعتیں یک نکاتی ایجنڈا پر متفق ہیں البتہ ان جماعتوں میں کوئی انتخابی اتحاد نہیں ہے ۔ سابق وزیراعظم سید یوسف رضا گیلانی بدستور علیل ہیں اور لاہور میں ہی مقیم ہیں گورنر پنجاب ملک رفیق رجوانہ اور وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف نے ٹیلی فون پر سید یوسف رضا گیلانی کی عیادت کی اور جلد صحت یابی کی دعا کی۔

سوائن فلو سے متاثرہ مریضوں کی ہلاکت کا سلسلہ نہیں تھم سکا، مزید 4افراد جاں بحق ہوگئے ہیں۔ جنوبی پنجاب میں جاں بحق مریضوں کی تعداد 42ہوچکی ہے ۔ سوائن فلو سے بہاولپور میں خاتون بلقیس بی بی کو داخل کرایا گیا جو چیک اپ کے فورا بعد ہی گھر واپس چلی گئی تھی وہ ایک رو زبعد جاں بحق ہوگئی ۔ سندھ پنجاب کے نواحی علاقوں اوباڑہ کے رہائشی 25سالہ بہرام اور گھوٹگی کی رہائشی 35سالہ رضیہ بی بی کو سوائن فلو وائر س کی علامات ظاہر ہونے پر ورثا نے طبی امداد کیلئے شیخ زید ہسپتال منتقل کیا جہاں ان دونوں مریضوں کو آئسو لیشن وارڈ منتقل کرنے کے بعد خون کے نمونہ جات لیبارٹری ٹیسٹ کیلئے روانہ کردئیے گئے ۔ سوائن فلو سے بچاؤ اور آگاہی مہم کے ضلعی انتظامیہ کی نگرانی میں لگایا جانے والا کیمپ3روز بعد ہی فنڈز کی کمی کے باعث بند کردیا گیا۔ 24مریض آئسولیشن وارڈ جبکہ 3آئی سی یو میں داخل ہیں ۔ محکمہ سوشل سکیورٹی پنجاب نے جنوبی پنجاب کے سوشل سکیورٹی ہسپتالوں میں سوائن فلو سے نمٹنے کیلئے الرٹ جاری کردیا۔

این اے 154لودھراں 1ضمنی الیکشن کے لیے 13امیدواروں کی حتمی لسٹ آویزاں کردی گئی ہے ۔ پی ٹی آئی ، تحریک لبیک پاکستان اور پاکستان راہ حق پارٹی کے امیدواروں نے پارٹی ٹکٹس جمع کرادیئے ابرار احمد جتوئی ڈسٹرکٹ الیکشن کمشنر/ریٹرننگ افسر این اے 154 لودھراں 1کے مطابق 12فروری کو ہونے والے ضمنی الیکشن کے لیے کل 13امیدواروں نے کاغذات نامزدگی جمع کروائے تھے ۔ امیدواروں کی حتمی لسٹ آویزاں کردی گئی ہے جس کے مطابق الیکشن میں حصہ لینے والے حتمی امیدواروں میں پی ٹی آئی کے علی ترین اور مسلم لیگ ن کے امیدوار رکن صوبائی اسمبلی عامر اقبال قریشی کے والد سابق تحصیل ناظم دنیا پور سید اقبال شاہ ، عمیر بلوچ ، سعد خورشید کانجو ، شفیق ارائیں ، ساجد انعام ، نفیس احمد ، عبدالمجید ، محمد صدیق ، اوصاف علی ، اظہر سندیلہ ، فدا حسین اور مرزا علی بیگ شامل ہیں ۔ اب تک تین امیدواروں نے اپنی پارٹی کے ٹکٹ جمع کروائے ہیں جن میں پی ٹی آئی کے علی خان ترین ، تحریک لبیک کے ملک اظہر سندیلہ اور پاکستان راہ حق پارٹی اتحادی جمعیت علماء اسلام ( س) کے عبدالمجید شامل ہیں۔

سینئر سیاستدان جاوید ہاشمی نے ٹیسٹ کرکٹرمحمد خلیل کی شادی کے موقع پر میڈیا سے اظہار خیا ل کرتے ہوئے کہا کہ پارلیمنٹ کی جنگ میں شیخ رشید آلہ کار ہے ۔ عمران خان کو سمجھاتا رہا کہ کسی کیلئے استعمال نہ ہوں ۔ پارلیمنٹ کو گالی دینا قوم کو گالی دینے کے مترادف ہے ۔ انہوں نے کہا کہ ملک نازک دور سے گزر رہا ہے ۔

ہائیکورٹ ملتان بنچ نے مفتی عبدالقوی کی حج فیس قبل از وقت وصول کرنے کے خلاف درخواست پر سماعت کے بعدپچھلے 5سالوں کی فیس وصول کرنے کے حوالے سے ڈیٹا طلب کرتے ہوئے 23جنوری کو وزارت مذہبی امور سے جواب طلب کرلیا ہے ۔

مزید : ایڈیشن 1