تعلیمی اداروں میں عدم برداشت کا کلچر خطرناک ہے،راغب نعیمی

تعلیمی اداروں میں عدم برداشت کا کلچر خطرناک ہے،راغب نعیمی

لاہور(ایجوکیشن رپورٹر)دارالعلوم جامعہ نعیمیہ کے ناظم اعلیٰ وممبراسلامی نظریاتی کونسل علامہ ڈاکٹر محمدراغب حسین نعیمی نے کہاہے کہ تعلیمی اداروں میں بڑھتا ہوا’ ’ عدم برداشت کلچر ‘‘خطرناک ہے ۔پنجاب یونیورسٹی میں طلبہ کاتصادم اور شبقدر میں کالج پرنسپل کاقتل تشویشناک ہے۔واقعہ پنجاب یونیورسٹی بھی عدم برداشت کامظہرہے،حکومت پنجاب یونیورسٹی میں ہونے والے تصادم میں ملوث افراد بے نقاب کرکے قرارواقعی سزاد ے۔چارسدہ کی تحصیل شبقدر میں طالب علم کے ہاتھوں کالج پرنسپل کاقتل تشویش ناک ہے۔

،جبکہ حیدر آباد میں استاد کے تشدد سے طالب علم کی ہلاکت بھی لمحہ فکریہ ہے۔تعلیمی ادار وں میں تصادم اورتشدد کے سیلاب کے آگے بندباندھنے کیلئے اساتذہ اپناکردار اداکریں۔ ۔اداروں میں جذباتی نعرہ بازنہیں علم وتحقیق کے مینارتعمیر ہونے چاہیے۔اغیار کی سازشوں کو جذباتی نعروں سے ہی نہیں علم وتحقیق کی طاقت سے ہی ناکام بنایاجاسکتاہے ان خیالات کااظہاراہوں نے گزشتہ روز جامعہ نعیمیہ میں اساتذہ کے فکری اجلاس سے گفتگو کرتے ہوئے کیا ۔ اجلاس میں مولانامحبوب احمدچشتی،مفتی محمدعمران حنفی،مفتی محمدہاشم رضوی،قاری محمدرفیق نقشبندی،مفتی محمدعارف حسین ،پیر سید زین العابدین شاہ،مفتی غلام مرتضی نقشبندی،مولانا مسعود احمدسیالوی،مولانا محب الرسول ،قاری ذوالفقار علی نعیمی،پیر فاروق احمد،مولانا محمدارشد جاوید ،مفتی فیصل ندیم،مولانا محمدسلیم نعیمی، مولانامحمد یاسین قادری ودیگر اساتذہ کرام نے بھرپورشرکت کی۔

راغب نعیمی

مزید : میٹروپولیٹن 1