بیٹی پر بری نگاہ رکھنے والے جعلی پیر کو باپ نے قتل کردیا

بیٹی پر بری نگاہ رکھنے والے جعلی پیر کو باپ نے قتل کردیا

ساہیوال (ویب ڈیسک) تھانہ فرید ٹاﺅن پویس کی بروقت کارروائی، جدید سائنسی خطوط پر 12گھنٹے کے اندر جعلی پیر کے اندھے قتل کو ٹریس کرکے مرکزی ملزم گرفتار کرلیا، مقتول پیر ملزم کی بیٹی سے زبردستی زیادتی کی کشش میں تھا، پولیس دیگر ملزمان کی گرفتاری کیلئے چھاپے ماررہی ہے۔ ایس ایچ او فرید ٹاﺅن ذیشان بشیر ڈوگر نے بتایا کہ گزشتہ روز ایک کال آئی کہ ایک نامعلوم شخص کی 87/6-R کے کھیتوں سے بور بند نعش ملی۔ ڈی ایس پی سمیت موقع پر پہنچے اور خون کے نشانات کے ذریعے شادمان ٹاﺅن میں ایک گھر پہنچے جو رمضان نامی شخص کا تھا اور مکان پر تالا لگا ہوا تھا۔ پولیس نے جدید سائنسی طریقہ تفتیش کے ذریعے اصل ملزم نوشیر کو ٹریس کرکے گرفتار کرلیا جس نے ابتدائی تفتیش میں طفیل اور بابر کے ہمراہ قتل کا اعتراف کرلیا۔

ایس ایچ او فرید ٹاﺅن ذیشان کی موجودگی میں ملزم نوشیر نے بتایا ہے کہ مقتول منور شاہ اس کا پیر تھا جو اوکاڑہ کا رہائشی ہے اور وہ میری 15سالہ بیٹی پر بری نظر رکھتا تھا۔ مقتول پیر شام کے وقت میرے گھر آیا اور وہ نشہ میں دھت تھا جبکہ وہ چائے وغیرہ کا سامان لینے دکان پر گیا اور اسی دوران میرا ماموں طفیل اور میرا قریبی رشتہ دار بابر علی میرے ساتھ مل گئے جب وہ گھر آئے تو مقتول پیر میری بیٹی کے ساتھ زبردستی کی کوشش کررہا تھا۔ پولیس نے اس واقعہ میں انتھک کوشش سے جدید سائنٹیفک طریقوں کا استعمال کرتے ہوئے اصل ملزم نوشیر کو دو لابالہ سے گرفتار کرلیا جبکہ اس کے باقی ساتھی طفیل اور بابر 75فائیو ایل کے رہائشی ہیں اور ملزمان نے ابتدائی تفتیش میں بتایا کہ منور شاہ ولد سلطان 24 جی ڈی اوکاڑہ مقتول میرا پیر تھا، تین سال پہلے میں اس کے بیت ہوا اور میرے گھرواقع 58 جی ڈی دولابالا میں مَیں پیر صاحب کے پاس آنا جانا شروع ہوگیا، پیر صاحب نے میری بیٹی سونیا بی بی پر بری نظر رکھنا شروع کردی اور رشتہ کا تقاضا کیا لیکن ہم نے انکار کردیا۔

منور شاہ مقتول کا گھر آنا جانا جاری رہا وقوعہ سے قبل صبح آٹھ سے9 بجے بروز ہفتہ پیر صاحب میرے گھر واقع دولابالاآئے اور 11 سے 12 بجے دن میں مَیں اپنی بیٹی کو لے کر شہر موسیٰ بلاک اپنے بھائی کے گھر آگیا جبکہ پانچ بجے کے قریب پیچھے پیر صاحب بھی آگئے پیر صاحب نشے کا عادی تھا اور اس وقت بھی نشے میں دھت تھا۔ میں نے پیر صاحب کو گھر بٹھا کر بازار چلا گیا اور باقی ملزمان محمد طفیل جو کہ میرا ماموں ہے اور دوسرا ملزم بابر علی جو کہ میر ا قریبی رشتہ دار ہے میرے ساتھ مل گئے۔ ہم باتیں کرتے ہوئے گھر پہنچے، گھر پہنچ کر دیکھا تو پیر نشے میں دھت میری بیٹی سونیا کے ساتھ زبردستی کرنے کی کوشش کررہا تھا۔

میری بیٹی اپنی عزت بچانے کے لئے اپنے گھر کی چھت پر چڑھنے لگی تو منور شاہ بھی پیچھے سیڑھیاں چڑھنے لگا جس پر ہم تینوں نے پیر کو پکڑ کر سیڑھیوں سے نیچے گرادیا اور سرمیں ڈنڈوں کی بارش شروع کردی اور بعد میں پسٹول کا فائر کرکے اس کو ماردیا اور بعد میں مقتول کی لاش کو بوری میں ڈالا اور گدھا ریڑھی پرلاد کر 87 سکس آکر کی فصل آلو میں پھینک دیا پولیس نے جعلی پیر کی نعش کو قبضہ میں لینے کے بعد اس اندھے قتل کو 12گھنٹے میں ٹریس کرلیا، پولیس کی اس بروقت کارروائی پر علاقہ کی سماجی شخصیات نے ایس ایچ او فرید ٹاﺅن ذیشان ڈوگر کو سراہتے ہوئے ڈی پی او ساہیوال سے نقد انعامات اور سرٹیفکیٹ کا مطالبہ کیا ہے جس پر ڈی پی او ساہیوال نے ذیشان ڈوگر اور دیگر پولیس افسران کو شاندار کارکردگی پر نقدی انعامات اور تعریفی سرٹیفکیٹ دینے کا اعلان کیا ہے۔

مزید : جرم و انصاف /علاقائی /پنجاب /ساہیوال

لائیو ٹی وی نشریات دیکھنے کے لیے ویب سائٹ پر ”لائیو ٹی وی “ کے آپشن یا یہاں کلک کریں۔


loading...