ڈیرہ سمیت مختلف علاقوں میں آٹے کا بحران‘ انتظامیہ غائب 

  ڈیرہ سمیت مختلف علاقوں میں آٹے کا بحران‘ انتظامیہ غائب 

  

قصبہ کالا (نمائندہ پاکستان)شہر بھر میں آٹے کا شدید بحران ہے‘ شہری سہولت بازاروں میں لمبی لمبی لائینوں میں لگنے پر مجبور ہوگئے۔ تفصیلات کے مطابق ضلع ڈیرہ غازی خان کے نواحی علاقوں شادن لُنڈ،قصبہ کالا، شاہ صدردین و دیگر میں ٓآٹا نایاب ہو گیا شہریوں کی دہائی شہر (بقیہ نمبر38صفحہ 6پر)

میں آٹے کی دستیابی اور قیمت کا مسئلہ حل نہ ہوا، سرکاری گوداموں سے گندم کی فراہمی بھی کارگر ثابت نہ ہوئی، مارکیٹ میں آٹے کی دوبارہ قلت پیدا ہوگئی، تھیلے کی بجائے کھلا آٹا مہنگے داموں بکنے لگا۔آٹے کی دستیابی اور قیمت کا معاملہ جوں کا توں، حکومتی اقدامات سے بھی مسئلہ حل نہ ہوسکا۔ سال 2021ء کے آغاز سے ہی آٹے کی فراہمی اور قیمت کا مسئلہ کھڑا ہے، حکومت نے فلور ملز کو سستی گندم دینے کی پالیسی بنائی۔آٹے کے 20 کلو تھیلے کی قیمت 860 روپے مقرر کی گئی تاہم آٹا بحران پر تاحال قابو نہ پایا جا سکا۔ 3 روز سے شہر میں فلور ملوں سے آٹے کے 20 اور 10کلو تھیلے کی سپلائی تقریباً بند ہوچکی، مارکیٹ کی اکثر دکانوں سے آٹے کے تھیلے غائب ہو گئے۔چکی پر بھی آٹے کی قیمت 65 روپے کلو تک جا پہنچی ہے۔ عوام کہتے ہیں تھیلا دستیاب نہ ہونے پر مہنگا آٹا خریدنے پر مجبور ہیں حکومتی اعلانات اور بیانات کاغذوں تک رہ گئے ہیں  دکانداروں نے کہا کہ فلورملزکو سپلائی آرڈر دیئے ہیں، آٹے کے تھیلے کی فراہمی کئی روز سے نہیں کی جا رہی شہریوں صدام حسین جموانی،عبدالسلام لُنڈ،محمد رفیق،فیاض حسین،نیاز احمد جموانی،شعیب احمد، عبدالاحد،امداد اللہ ودیگر نے میڈیا سے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ حکومت کی ناقص پالیسیوں کی وجہ سے آٹے کا بحران ہے غریب مزدور دیہاڑی پر مزدوری کرے یا آٹے کے حصول کیلئے لمبی لمبی لائنو ں میں لگے انہوں نے کہا ضلعی انتظامیہ اور وزیر اعلی پنجاب سردار عثمان خان بزدار سے مطالبہ کرتے ہیں کہ مہنگائی سے پسی ہوئی عوام کو کم از کم آٹے کی فراہمی یقینی بنائے۔

انتظامیہ غائب

مزید :

ملتان صفحہ آخر -