عدالت نے دعا منگی اغوا کیس میں ملزمان پر فرد جرم عائد کردی

 عدالت نے دعا منگی اغوا کیس میں ملزمان پر فرد جرم عائد کردی

  

کراچی(اسٹاف رپورٹر)انسداد دہشت گردی عدالت نے دعا منگی اغوا کیس میں زوہیب قریشی، محمد طارق عرف شکیل اور دیگر ملزمان پر فرد جرم عائد کردی، ملزمان نے صحت جرم سے انکار کردیا۔ہفتہ کوکراچی کی انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت کے روبرو دعا منگی اغوا کیس کی سماعت ہوئی، پولیس کے مطابق ملزمان نے دعا منگی کو ڈیفنس سے اغوا کیا تھا، دعا کے والد نے 25 لاکھ روپے تاوان کی رقم ادا کرکے بیٹی کو بازیاب کرایا تھا۔عدالت نے زوہیب قریشی، محمد طارق عرف شکیل سمیت 5 ملزموں پر فرد جرم عائد کردی، دیگر ملزمان میں مظفر علی، وسیم راجہ اور فیاض سولنگی شامل ہیں، ملزمان کے صحت جرم سے انکار پر عدالت نے آئندہ سماعت پر گوہوں کو طلب کر لیا۔عدالت نے مقدمے میں مفرور ملزم آغا منصور کو اشتہاری قرار دیتے ہوئے کیس کی سماعت 25 جنوری تک ملتوی کردی،جبکہ عدالت نے تفتیشی افسر اور گواہوں کو نوٹس جاری کردیئے۔واضح رہے کہ دعامنگی کو 30 نومبر 2019 کی رات خیابان بخاری سے اغوا کیا گیا تھا، اغوا کاروں نے دعامنگی کے دوست حارث سومرو کوگولی مار کر زخمی بھی کیا تھا، واقعے کا اغوا اوراقدام قتل کا مقدمہ درخشاں تھانے میں درج کیاگیا تھا۔،عدالت نے آئندہ سماعت پرگواہوں کوطلب کرلیا

مزید :

پشاورصفحہ آخر -