ضلع خیبر میں تباہ شدہ سکولوں کی تعمیر کے لئے عملی اقدامات اٹھا ئے ہیں، شفیق آفر یدی 

ضلع خیبر میں تباہ شدہ سکولوں کی تعمیر کے لئے عملی اقدامات اٹھا ئے ہیں، شفیق ...

  

خیبر (بیورورپورٹ)ضلع خیبر میں تباہ شدہ سکولوں کی تعمیر کے لیے عملی اقدامات کیں اٹھائے، پچاس تعلیمی اداروں کی تعمیر پر کام جاری ہیں۔ڈیڈک چیئرمین و ایم پی اے حاجی شفیق آفریدی  تفصیلات کے مطابق رکن صوبائی اسمبلی اور ڈیڈک خیبر کے چئیرمین حاجی محمد شفیق آفریدی نے صحافیوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا ہے کہ وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا محمود خان کے خصوصی دلچسپی سے 57 تباہ شدہ تعلیمی اداروں کی تعمیر کے لیے فنڈز مہیا کی گئی جس پر ترقیاتی کام جاری ہے۔ایم پی اے و ڈیڈک خیبر کے چئیرمن حاجی شفیق آفریدی نے کہا کہ انضمام کی وجہ سے قبائلی علاقوں سے ایم پی ایز صوبائی اسمبلی میں موجود ہے اور پاکستان تحریک انصاف کی حکومت قبائیلی اضلاع کی پسماندگی دور کرنے میں مخلص ہے اور ہمارے حکومت مسائل فوری طور پر حل کررہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ فاٹا انضمام کی وجہ سے کچھ مشکلات بھی ہے اگر بتدریج انضمام کیا جاتا تو بھی بہتر ہوتا۔انہوں نے کہا کہ جن افراد و قوتوں نے فاٹا انضمام پر فرنٹ لائن کا کردار ادا کیا تھا ان کو فاٹا انضمام کا مطلب بھی یاد نہیں فاٹا انضمام میں مختلف شعبوں میں مشکلات کا سامنا کرنا پڑا جیسے معدنیات اور خاصہ دار فورس کی پولیس میں انضمام ایک مشکل مرحلہ ہے۔صوبائی حکومت نے معدنیات ایکٹ میں تبدیلی کرکے معدنیات پر اصل حق مقامی قبائل کو دے دیا جو بڑی کامیابی ہے۔انہوں نے کہا کہ خیبر پختونخوا پہلے سے ایک غریب صوبہ تھا تاہم وزیر اعلیٰ خیبر پختونخوا پر دوسرے صوبے ضم اضلاع کی بوجھ بھی ڈال دیا تاہم وزیر اعلیٰ نے ضم اضلاع کو ترقیاتی منصوبوں میں بھی اپنا حق دیا ہے۔انہوں نے کہا ہے کہ تحصیل باڑہ میں دہشت گردی کے دورمیں تباہ ہونے والے 50 تعلیمی اداروں کی تعمیرنو کا کام شروع کردیاگیاہے۔ میرٹ کی بنیادپر نئی تعلیمی اداروں کی قیام کی بھی منظور ہوچکی یے۔ایم پی اے  محمدشفیق آفریدی نے کہا کہ 2008 سے لیکر 2016 تک دہشت گردوں کے ہاتھوں تباہ ہونے والے 50 سکولوں کی تعمیرنو کا کام شروع کردیاگیاہے۔ قبل ازیں مذکورہ تعلیمی اداروں کو چائینہ ایڈ سے تعمیرکرنے کی منظوری ہوچکی تھی تاہم کورونا وبائی مرض کے باعث چین حکومت کی طرف سے فنڈ موصول نہیں ہوا۔ الحاج محمدشفیق نے کہا کہ انہوں سکولوں کی تعمیرنو کا دیرینہ اور حل طلب مسلہ وزیراعلی کے سامنے رکھ دیا۔جس پروزیراعلی نے فوری طورپر دس کروڑ روپے فنڈ فراہم کرنے کے احکامات جاری کیا۔انہوں نے کہا کہ حلقہ میں میرٹ کی بنیاد پر 6 نئے سکولز کے قیام کی منظوری ہوچکی ہے۔علاوہ ازیں 3 پرائمری سکولوں کو مڈل، 2 مڈل سکولوں کو ہائی اور 2 ہائی کو ہائیر سیکنڈری سکولز میں اپ گریڈ کیاجائیگا۔ ایم پی اے نے مزید کہا کہ ان کے حلقہ میں ایک ڈگری کالج کے قیام کی بھی منظوری ہوچکی ہے۔ انہوں نے کہا کہ کیڈٹ کالج کے قیام کے لئے کورکمانڈرپشاور نے یقین دہانی کرائی ہے۔ الحاج محمد شفیق کے مطابق تعلیمی اداروں کا قیام شرح خواندگی میں اضافہ اورپسماندگی کے خاتمے کا باعث ہوگا۔ ترقی کے اس لہر کے نتیجے میں دہشت گردی کی عفریت سے ہمیشہ کے لئے نجات ملے گا۔ نسل نو تعلیم کے زیورسے آراستہ ہوکر ملک وقوم کی خدمت کریں گے۔انہوں نے کہا کہ اپنے حلقے میں سڑکوں کا جال بچھا دیا ہے ضلع خیبر کے تینوں تحصیلوں کو منسلک کردیا جبکہ ضلع خیبر کو درہ آدم خیل،ضلع اورگزئی اور کرم کے ساتھ ملانے کے لیے سڑکوں پر کام جاری ہے۔انہوں نے کہا کہ ماحولیاتی آلودگی پر کنٹرول کرنے کے لیے باڑہ میں دس لاکھ پودے لگائے جائے گے جبکہ باڑہ میں کوئی غیر قانونی سٹیل ملز نہیں جو فلٹرز ترقی پسند ملکوں کے کارخانوں میں لگائے گئے ہیں وہ باڑہ کے کارخانوں میں انسٹال کیں گئے ہیں۔

مزید :

پشاورصفحہ آخر -