ہائی بلڈ پریشر کے مریضوں میں تیزی سے اضافہ ہورہاہے‘پروفیسر ڈاکٹر اشفاق

ہائی بلڈ پریشر کے مریضوں میں تیزی سے اضافہ ہورہاہے‘پروفیسر ڈاکٹر اشفاق

  

لاہور (ج الف) سروسز ہسپتال کے شعبہ میڈیکل کے سربراہ پروفیسر ڈاکٹر محمد اشفاق نے کہا ہے کہ فاسٹ فوڈ موٹاپا مشروبات اور کافی کا بے جا استعمال ہائی بلڈ پریشر کا باعث بنتا ہے۔ ہائی بلڈ پریشر ایسا خاموش قاتل ہے جس کی کوئی علامت ہوتی ہے نہ آواز۔ پاکستان میں ہر سال ہائی بلڈپریشر کے مریضوں میں لاکھوں کی تعداد میں اضافہ ہورہا ہے۔ یہ ایسا مرض ہے جو ہارٹ اٹیک ‘ فالج ‘ گردوں کو ناکارہ کرنے کے علاوہ اندھے پن کا باعث بنتا ہے۔ ان خیالات کا اظہار انہوں نے روزنامہ پاکستان سے انٹرویو میں کیا۔ پروفیسر اشفاق نے کہا کہ بلڈ پریشر موروثی بیماری ہے جس کا علاج تقریباً ممکن نہیں جبکہ دوسری قسم میں قابل علاج ہے۔ انہوں نے کہا کہ نارمل انسان میں بلڈ پریشر کی شرح 120/80 ہونا لازمی ہے۔ اگر اس سے اوپر چلا گیا تو وہ بلڈ پریشر ہائی کہلائے گا جبکہ اگر 120/80 سے نیچے چلا گیا۔ لوبلڈ پریشر کا نام دے دیا جاتا ہے۔ بلڈ پریشنر ایسی بیماری ہے پرہیز اور موثر علاج کی وجہ سے مریض کو افاقہ رہتا ہے۔ ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے ڈاکٹر صاحب نے کہا کہ رمضان المبارک میں لوگ عمومی طور پر کھانے پینے میں تمیز نہیں کرتے جس کی وجہ سے بلڈ پریشر کا مسئلہ شدید ہوجاتا ہے۔ افطاری میں کھانے پینے کا خصوصی اہتمام کیا جاتا ہے جس میں پکوڑے ‘ سموسے ‘ کچوریاں‘ دہی بھلے‘ مشروبات شامل ہیں۔ ایک سوال کا جواب دیتے ہوئے کہا کہ یہ سارے لوازمات بلڈ پریشر کو بڑھانے میں بہت اہم کر دار ادا کرتے ہیں اور لوگ بہت خوشی سے یہ استعمال کرتے ہیں۔ کولیسٹرول کی زیادتی کی وجہ سے بلڈ پریشر کی مرض جڑ پکڑتی ہے۔ ڈاکٹر صاحب نے اظہار خیال کرتے ہوئے کہا کہ رمضان المبارک میں بلڈ پریشر کے مریضوں کو خصوصی خیال رکھنا چاہیے۔ ڈاکٹر اشفاق کا کہنا تھا کہ گردے کی پتھری کی وجہ سے بلڈ پریشر کی بیماری لاحق ہونے کا خدشہ رہتا ہے۔ اس کے علاوہ سٹرائٹ (گولی) کا مسلسل استعمال بلڈ پریشر کا باعث بنتا ہے۔

مزید :

میٹروپولیٹن 1 -