ملکی سلامتی اور استحکام کے لیے سیاسی جماعتوں میں اتفاق رائے ضروری ہے : فاروق ستار

ملکی سلامتی اور استحکام کے لیے سیاسی جماعتوں میں اتفاق رائے ضروری ہے : فاروق ...
ملکی سلامتی اور استحکام کے لیے سیاسی جماعتوں میں اتفاق رائے ضروری ہے : فاروق ستار

  

لاہور (مانیٹرنگ ڈیسک ) متحدہ قومی موومنٹ کے رہنماءڈاکٹر فاروق ستار نے کہا ہے کہ ملکی سلامتی اور استحکام کے لیے تما م سیاسی جماعتوں کے درمیان اتفاق رائے پیدا کرنے کی ضرورت ہے۔ انہوں نے کہا کہ حکومت میں موجوداتحادی جماعتوں کے ساتھ ساتھ اپوزیشن اور اسمبلی کے باہر بیٹھی جماعتوں سے مل کر ملک کو مسائل سے نکالنے کی ضرورت ہے جبکہ موجود نظام میں یا مستقبل میں کوئی بھی ایک جماعت اکیلے ان مسائل کو حل نہیں کر سکتی ۔منصورہ میں امیر جماعت اسلامی سید منور حسن کے ہمراہ پریس کانفرنس کرتے ہوئے ڈاکٹر فاروق ستار کا کہنا تھا کہ مہنگائی ، دستوری ترامیم ، بلوچستان کے مسائل اور کراچی میں بد امنی کے خاتمے اور انتخابات کے بروقت انعقاد میں سیاسی جماعتوں کو اپنا کردار ادا کرنا چاہیے۔ انہوں نے بتایا کہ کراچی میں بھائی کو بھائی سے لڑائے جانے کی کوشش کی جارہی ہے اور کراچی ملکی معیشت کا مرکز ہے جہاں امن ملک کی معیشت کے لیے نہایت اہم ہے۔ان کا کہنا تھا کہ مختلف معاملات پر سیاسی رہنماﺅں میں اتفاق ہونا چاہیے جبکہ اسی حوالے سے ایم کیو ایم نے مختلف سیاسی جماعتوں سے ملاقاتوں کا سلسلہ شروع کر دیا ہے اور رات کو مسلم لیگ ق کے رہنماﺅں سے ملاقات کریں گے جہاں ایم کیو ایم کے وفد کو افطار ی پر مدعو کیا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ایم کیو ایم کا وفد کل عوامی نیشنل پارٹی کے رہنماﺅں سے بھی ملاقات کرے گا۔مشترکہ پریس کانفرنس کے دوران امیر جماعت اسلامی سید منور حسن نے خدشہ ظاہرکرتے ہوئے کہا کہ انہیں تو یہ بھی علم نہیں کہ حکومت عام انتخابات وقت پر کرائے گی بھی کہ نہیں اور اس کا اظہار عمران خان اور شہباز شریف بھی کر چکے ہیں جبکہ انتخابات کے نتائج جو بھی ہوں وہ بعد کی باتیں ہیں ۔انہوں نے کہا کہ الیکشن کمیشن کو الیکشن کے دوران غیرجانبداری برقرار رکھنا چاہیے او ر اسی طرح سے عوامی مینڈیٹ کا احترام ہوسکے گا۔ انہوں نے بتایا کہ ایم کیوایم سے ملاقات کے دوران کراچی کی بد امنی پر خصوصاً بات چیت ہوئی جبکہ سیاسی جماعتوں میں ملاقاتیں جاری رہنی چاہیے ۔ ان کاکہنا تھا کہ ’ گو امریکہ گو ‘ نعرہ بازی کی تحریک نہیں ہے اور بلوچستان میں حالات مزید خراب ہو رہے ہیں ۔

مزید :

لاہور -