دوہری شہریت والے ریلوے کے چیف میڈیکل آفیسر مشتا ق قریشی کے تبادلہ پر غور

دوہری شہریت والے ریلوے کے چیف میڈیکل آفیسر مشتا ق قریشی کے تبادلہ پر غور

  

لاہور(سٹاف رپورٹر)ریلوے حکام نے متنازعہ سروس کیئریرکے حامل اور ممکنہ دوہری شہریت رکھنے والے چیف میڈیکل آفیسر ریلوے مشتاق قریشی کو تبدیل کرنے پر غور شروع کردیا ہے۔ذرائع نے بتایا کہ ریلوے کے شعبہ تعلیم اور شعبہ میڈیکل میںقابل افراد کی انتہائی کمی محسوس کی جارہی ہے اور یہ ہی وجہ ہے کہ شعبہ تعلیم میں سکول کے ڈائریکٹر کو تبدیل کیا گیا اور پنجاب حکومت سے ڈیپوٹیشن پر لاکرتجربہ کار پروفیسرفرحان عبادت کو یہاں ڈائریکٹرسکولز و کالجز پاکستان ریلوے لگایا گیا ۔ جبکہ شعبہ میڈ یکل کے چیف کی بھی تعیناتی کے لئے ڈیپوٹیشن پر میڈیکل آفیسر لانے پر غور کیا جارہا ہے اس دوران وقتی طور پر مشتاق قریشی کو چیف میڈیکل آفیسر لگایا گیا مگر ان کے خلاف مختلف رپورٹس کو مدنظر رکھتے ہوئے انہیں ہٹانے پر غور کیا جارہا ہے۔ذرائع نے بتایا کہ اس کی بڑی وجہ یہ ہے کہ مشتاق قریشی دوسال کی رخصت پر بیرون ملک گئے تھے لیکن وہ رخصت ختم ہونے کے باوجود پاکستان نہیں آئے بلکہ جس پر وزارت ریلوے نے ان سے جواب طلب کیا مگر انہوں نے واضح جواب نہ دیا جس پر اب تک انکوائری چلتی رہی ۔ اس دوران ہی الیکٹرک واٹر ڈسپینسر ریلو ے ہیڈکواٹر سے باہر منتقل کرنے کا کیس منظر عام پر آگیا اس صورتحال پر ریلوے انتظامیہ نے چیف میڈیکل آفیسر مشتاق قریشی کو تبدیل کرنے لئے غور شروع کردیا ہے اور ان کی جگہ اس وقت تک ڈپٹی چیف میڈیکل آفیسر اسلم سندھیلو کو تعینات کیا جائے گا جب تک ڈیپوٹیشن پر کسی میڈیکل آفیسر کو یہاں نہیں لایا جاتا۔ اس حوالے سے چیف میڈیکل آفیسر مشتاق قریشی نے کا کہنا ہے کہ میں سینئر ہوں یہاں تعیناتی میرا حق ہے،مجھے تبدیل نہیں کیا جارہا۔

 مشتا ق قریشی

مزید :

صفحہ آخر -