گینڈامارنے پر 77سال قیدکی سزا

گینڈامارنے پر 77سال قیدکی سزا
گینڈامارنے پر 77سال قیدکی سزا

  

کیپ ٹاﺅن (نیوز ڈیسک) دنیا میں محدود تعداد میں باقی رہ جانے والے جنگلی جانور رائنو کو اس کے سینگ کی وجہ سے غیر قانونی شکار کا نشانہ بنایا جارہا ہے لیکن جنوبی افریقہ کی ایک عدالت نے یہ واضح کردیا ہے کہ رائنو کا غیر قانونی شکار کرنے والوں کا انجام عبرتناک ہوگا۔ کروگر نیشنل پارک سے گرفتار کئے گئے مانڈلا چوکے کو عدالت نے 77 سال قید سنائی ہے جو غیر قانونی شکار کے جرم میں دی جانے والی سخت ترین سزا کہی جاسکتی ہے۔ جنوبی افریقہ کے نیشنل پارکوں کے نمائندہ رینولڈ تھاکولی کا کہنا ہے کہ یہ سزا دوسرے غیر قانونی شکاریوں کو بھی خبردار کرے گی۔ اسی ماہ کے آغاز میں موزنبیق کے دو شکاریوں کو ایک رائنو کے ہلاک کرنے کے جرم میں 16 سال قید کی سزا سنائی گئی تھی۔ موزنبیق اور جنوبی افریقہ کی سرحد مشترک ہے اور اکثر شکاری سرحد پار کرکے رائنو کا شکار کرنے چلے آتے ہیں، جبکہ 2012ءمیں تھائی لینڈ کے ایک شہری کو رائنو کے سینگ بیچنے کے جرم میں 40 سال قید کی سزا سنائی گئی تھی۔ کروگرپارک میں صرف رواں سال میں 370 رائنو ہلاک کئے جاچکے ہیں اور اس نایاب جانور کی نسل کو سخت خطرہ لاحق ہوچکا ہے۔ رائنو کے سینگ کو خصوصاً چین اور ویت نام میں امارت کی نشانی اور شان و شوکت کی علامت سمجھا جاتا ہے اور اسے ادویات اور خصوصاً جنسی طاقت کے مرکبات میں بھی استعمال کیا جاتا ہے۔

مزید :

بین الاقوامی -