برطانوی حکمراں جماعت کنزرو یٹو پارٹی کے بورسن جانسن وزیر اعظم نامزد

    برطانوی حکمراں جماعت کنزرو یٹو پارٹی کے بورسن جانسن وزیر اعظم نامزد

  IOS Dailypakistan app Android Dailypakistan app


لندن(این این آئی)برطانوی حکمراں جماعت کنزر ویٹو پارٹی نے بورس جانسن کو وزیراعظم نامزد کر دیا۔ میڈیا رپورٹ کنزرویٹیو پارٹی کے انتخابات میں بورس جانسن نے جرمی ہنٹ کو 92153 ووٹ لے کر شکست دی،جرمی ہنٹ ان کے مقابلے میں صرف 46656 ووٹ حاصل کر سکے۔بورس جانسن نے وزراء اور پارٹی اراکین سے خطاب میں کہا کہ انہیں بریگزیٹ کو مکمل، ملک کو متحد کرنا ہے اور جیرمی کاربن کو شکست دینی ہے۔بورس جانسن کی فتح پر امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے بھی خوشی کا اظہار کیا اور اپنی ٹوئٹ میں لکھا کہ وہ عظیم ہو گا۔برطانیہ کی موجودہ وزیراعظم ٹریزامے نے گزشتہ ماہ بریگزٹ ڈیل کی پارلیمنٹ سے منظوری میں ناکامی کے بعد مستعفی ہونے کا اعلان کیا تھا۔ٹریزا مے (آج) بدھ کو پارلیمنٹ سے الوداعی خطاب اور سوالات کے جوابات دیں گی جس کے بعد وہ اپنا استعفیٰ ملکہ برطانیہ کو پیش کریں گی۔اس کے بعد بورس جانسن اپنی تعیناتی کی تصدیق کے لیے بکنگھم پیلس جائیں گے جہاں سے وہ ڈاؤننگ اسٹریٹ میں بلیک ڈور نمبر 10 کے سامنے خطاب کریں گے۔دوسری جان ببرطانیہ کے نامزد وزیراعظم کا پاکستان سے گہرا تعلق ہے جس کے حوالے سے انہوں نے خود پاکستانی میڈیا کو دیئے گئے ایک انٹرویو میں آگاہ کیا تھا،بورس جانسن کی اہلیہ کا آبائی تعلق پاکستان کے شہر سرگودھا سے ہے۔بورس جانسن نے اہلیہ کے آبائی تعلق پر گفتگو 2015 میں کہا تھا کہ ان کی اہلیہ کی فرمائش ہے کہ پاکستان جاؤں۔ یاد رہے کہ بورس جانسن اور مارینہ ویلر کی شادی 1993 میں ہوئی تھی اور ان کے کے 4 بچے بھی ہیں تاہم دونوں کے درمیان 2018 میں علیحدگی ہوچکی ہے، ان کی شادی تقریباً 25 سال رہی۔خیال رہے کہ بورس جانسن نے 2016 میں بطور وزیرخارجہ پاکستان کا دورہ کیا تھا جہاں انہوں نے اْس وقت کے وزیراعظم نواز شریف سمیت دیگر سیاسی قیادت سے ملاقاتیں کیں تھیں۔ بورس جانسن لندن شہر کے میئر بھی رہ چکے ہیں۔
بورس جانسن

مزید :

صفحہ اول -